اردو
Tuesday 18th of May 2021
215
0
نفر 0
0% این مطلب را پسندیده اند

شیعه منابع پر ایک سرسری نظر

ھم اس مقالہ میں وہ تمام چیزیں جو تاریخ تشیع سے مربوط ھیں ان پر تمام جوانب سے تحقیق وجستجو نھیں کریں گے بلکہ اھم ترین منابع و مآخذ کی طرف صرف اشارہ کریں گے، تاریخی کتابیں یاوہ کتابیں جو معصومین(علیہ السلام) کی زندگی کے بارے میں لکھی گئی ھیں نیز کتب احادیث،رجال وغیرہ بھی جو شیعہ تاریخ سے مربوط ھیں، ان کا مختصر طور سے خلاصہ بھی پیش کریں گے، اس وجھت سے شیعہ تاریخ کے منابع کو دو حصوں میں تقسیم کیا ھے:

)۱( خصوصی منابع

)۲(عمومی منابع

ھم عمومی منابع کو بعد میں بیان کریں گے۔

خصوصی منابع

)۱(مقاتل الطالبین

شیعہ تاریخ کے حوالے سے ایک بھترین منبع کتاب مقاتل الطالبین ھے، اس کتاب کے موٴلف ابو الفرج علی ابن حسین اصفھانی ھیں جو ۲۸۴ھ میں اصفھان میں پیدا ھوئے اور بغداد میں پروان چڑھے، آپ نے بغداد کے بزرگ علماء سے علم حاصل کیا، آپ کا سلسلہ نسب بنی امیہ تک پھنچتا ھے لیکن آپ کا مذھب علوی ھے۔

اس کتاب کا موضوع جیسا کہ خود اس کتاب کے نام سے و اضح اور روشن ھے ان طالبیین کے بارے میں ھے جو ظالموںاور ستمگاروں کے ھاتھوں قتل ھوئیھیں جیسا کہ موٴلف فرماتے ھیں:

انشاءاللہ ھم اس کتاب میں خدائےمتعال کی مددسے ابوطالب(علیہ السلام) کی وہ اولاد جو زما نہ رسول(صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) سے لے کر اس وقت تک(جس دن یہ کتا ب لکھنی شروع کی ھے یعنی جمادی الاول ۳۱۳ھ میں لکھی گئی ھے)قتل اور شھید ھوئے ھیں ا س میں مختصراً ذکر کیا ھے کہ کون زھرسے شھید ھوا، کون وقت کے بادشاھوں کے ظلم سے مخفی و روپوش ھو گیا اور پھر وھیں انتقال کیا اور کن لوگوں نے زندان میں انتقال فرمایاوغیرہ اور ان تمام چیزوں کے ذکرکرنے میں ترتیب کی رعایت کی ھے نہ کہ ان کے فضل کی۔[1]

یہ کتاب دو حصوں پر مشتمل ھے، پھلا حصہ زمانہ رسول اللہ(صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) سے بنی عباس کی تشکیل حکومت تک اوردوسرا حصہ عباسیوں کے زمانہ سے مربوط ھے۔

اگرچہ اس کتاب میں ابو طالب(علیہ السلام) کے شھداء کی تحقیق اور چھان بین کی گئی ھے لیکن اس اعتبار سے کہ اماموں، رھبروں اور علوی شھیدوں کے ماننے والوں کے حالات بھی معرض تحریر میں آگئے ھیں اورکتاب کے کسی حصہ سے بھی آپ تاریخ شیعہ کا استخراج کر سکتے ھیں یہ کتاب تشیع کی سیاسی تاریخ سے مربوط ھے اس لئے اس میں تاریخ شیعہ پرتمام جوانب سے کم بحث کی گئی ھے۔

(۲)الدرجات الرفیعہ فی طبقات الشیعہ

اس کتاب کے موٴلف سید علی خان شیرازی ھیں جو ۵/جمادی الاول ۱۰۵۲ھ مدینہ میں پیدا ھوئے اور وھیں آپ نے علم حاصل کیا، ۱۰۶۸ ھ میں حیدرآباد ھندوستان ھجرت کرگئے،۴۸ سال وھیں قیام کیا اور وھیں سے امام رضا(علیہ السلام) کے زیارت کے لئے ایران کا سفر کیا،۱۱۱۷ ھ میں شاہ سلطان حسین صفوی کے زمانہ میں اصفھان تشریف لے گئے دو سال اسی شھر میں قیام کیا اور دو سال کے بعد شیراز تشریف لے گئے اوراس شھر کی علمی و دینی زعامت کو اپنے ذمہ لیا [2]

کتاب الدرجات الرفیعہ فی طبقات الشیعہ اس بلند مرتبہ شیعہ دانشور کی تالیفات میں سے ایک ھے اگر چہ اس کتاب کا موضوع شیعوں کے حالات کی وضاحت اور ان کی تاریخ ھے نہ کہ تاریخ تشیع، لیکن اس سے تشیع کی عام تاریخ کے بارے میں دو دلیلوں سے استفادہ کیاجاسکتا ھے ایک تو یہ کہ مختلف زمانوں میں شیعوں کے حالات کی چھان بین، دوسرے یہ کہ خود موٴلف کتاب نے مقدمہ میں اختصار کے ساتھ شیعہ تاریخ کو بیان کرنے کے ساتھ ساتھ خصو صاً بنی امیہ کے سخت دور کا ذکرکیا ھے، آپ نے کتاب کے مقدمہ میں بیان کیا ھے، خدا تم پر رحمت نازل کرے تم یہ جان لو کہ امیرالمومنین اور تمام ائمہ(علیہ السلام) کے شیعہ ھر زمانے میں حاکموں کے ڈر سے خفیہ زندگی بسر کرتے تھے اور بادشاہ وقت کی نگاہ سے دور رھتے تھے۔[3]

اس کے بعد معاویہ کے استبدادی زمانے سے لے کرعباسیوں کے دور تک کو بیان کیا ھے،یہ کتاب جیسا کہ موٴلف نے مقدمہ میں ذکر کیا ھے بارہ طبقات پر مشتمل ھے یعنی شیعوں کو بارہ طبقوں میں تقسیم کر نے کے بعد ان کی تحقیق اورچھان بین کی ھے جو اس طرح سے ھے۔

(۱)صحابہ

(۲)تابعین

(۳)وہ محدثین جنھوں نے ائمہ طاھرین علیھم السلام سے حدیثیں نقل کی ھیں

(۴)علماء دین

(۵)حکماء اورمتکلمین

(۶) عرب علماء

(۷)صوفی سردار

(۸)بادشاہ اور سلاطین

(۹)روٴسا

(۱۰)وزراء

(۱۱)شعراء

(۱۲)خواتین

اس قیمتی کتاب سے اس وقت جو ھماری دسترس میں ھے وہ مذکورہ مطالب پر مشتمل ھے پھلا طبقہ یعنی صحابہ کا حصہ بطور کامل۔ چوتھا طبقہ یعنی علماء کے باب کا کچھ حصہ، گیارھواں طبقہ یعنی شعراء کے باب سے بھت تھوڑا۔

یہ کتاب صحابہ کے درمیان تشیع کے موضوع پر ایک اھم اور بھترین کتاب ھے نیز اس سلسلے میں جامعیت رکھتی ھے، اس کتاب کے موٴلف نے شیعہ رجال اورعلماء کے نظریات کوشیعہ صحابہ کے بارے میں جمع کیا ھے لیکن اس کے باوجود ان کے بارے میں اظھار نظر نیزتحقیق و تجزیہ بھت کم کیا ھے۔

( ۳)اعیان الشیعہ

اس بے نظیرا ور قیمتی کتاب کے موٴلف شیعوں کے عظیم محقق اور عالم دین مرحوم سید محسن امین ھیں، کتاب اعیا ن الشیعہ خود ھی جیساکہ اس کے نام سے معلوم ھے ایک ایسی کتاب ھے جو بزرگان شیعہ کے حا لات اور ان کے زندگی نام کو بیان کرتی ھے، اس کتاب میں تین مقدمے ھیں جن میں سے پھلے مقدمہ میں مصنف کی روش کوبیان کیا گیا ھے اس مقدمہ کے شروع میں آیا ھے: "فی ذکر طریقتنافی ھذا الکتاب وھی امور۔۔۔" یعنی اس کتاب میں ھماری روش کے ذکر کے متعلق جس میں یہ چند امور ھیں ۔۔۔پھرچودہ حصوں میں اپنی روش کی تفصیل بیان کی ھے لیکن دوسرا مقدمہ شیعوں کی عمومی تاریخ کے بارے میں ھے جو بارہ ابحاث پر مشتمل ھے اور تیسرا مقدمہ کتاب کے منابع و مصادر کے بارے میں ھے:

پھلی بحث :-

شیعیت کا مفھوم اور اس کے معنی ۔

تمام شیعہ اصطلاحات ۔

شیعہ فرقوں کے بارے میں اھل سنت مصنفین کے نظریات اور تنقید ۔

دوسری بحث :-

شیعیت کی ابتدا ا ور اس کا فروغ پانا۔

شیعہ صحاب،شیعوں کی کثرت۔

تیسری بحث:-

بعض مظالم کی طرف اشارہ ھے جو اھل بیت(علیہ السلام) اور ان کے شیعوں پر ھوئے ھیں۔

چوتھی بحث:-

شیعیان اھل بیت(علیہ السلام) سے غیر منصفانہ برتاوٴ۔

پانچویں بحث:-

اھل بیت(علیہ السلام) پر مسلسل حملے۔

چھٹی بحث:-

شیعوں پر بھت زیادہ بھتان و افترا پردازی اور شیعہ اثنا عشری عقائد کا خلاصہ۔

ساتویں بحث:-

اسلامی ممالک میں تشیع کے پھیلنے کے اسباب ۔

آٹھویں بحث:-

اھل بیت(علیہ السلام) کی فضیلت اور اسلام کے لئے ان کی خدمات -

نویں بحث:-

شیعہٴ امامیہ کے عقائد ۔

دسویں بحث:-

شیعہ ادبا،علما، شعراء اورموٴلفین اور ان کی کتابوں کے بارے میں ۔

گیارھویں بحث:-

وزرا، امرا، قضات اورنقیبان شیعہ کے بارے میں ۔

بارھویں بحث:-

شیعہ نشین شھروں کاذکر۔ [4]

کتاب اعیان الشیعہ کی ارزش و اھمیت ھمارے بیان سے باھر ھے اس لئے کہ یہ کتاب تاریخی معلومات اورمعارف کا ایک ایسا دریا ھے جس کی گھرائی تک ھم نھیں پھنچ سکتے اور نہ ھی پوری طرح سے اس پر مسلط ھوسکتے ھیں کہ جس سے اس کا اندازہ لگائیں اور اس کے بررسی کریں بلکہ ا پنی توانائی کے مطابق اس سے استفادہ کریں، قلم کی فصاحت و بلاغت، مطالب کی گھرائی، مباحث کا نفوذ، عناوین کی تقسیم بندی اور منطقی ترتیب جیسے پھلو اس کتاب کے خاص امتیازات ھیں۔

اس کتاب کے بارے میں تنقیدی اعتبار سے ایک جزئی اشارہ کیا جاسکتا ھے جیسے شیعہ کے دوسرے ناموں کی بحث بھت مختصر کی گئی ھے اور صرف امامیہ، متاٴولہ، قزلباش، رافضیہ،جعفر یہ ا ورخاصہ جیسے ھی کے ناموں کو شمار کیا گیا ھے [5]جبکہ جو نام شیعوں پر صادق آتے ھیں وہ اس سے کھیں زیادہ ھیں فقط پھلی صدی میں علوی،ترابی،حسینی وغیرہ نام شیعوں کے بارے میں بیان ھو ئے ھیں۔

دوسرا اعتراض جو اس کتاب پر ھو سکتا ھے وہ معنای شیعیت اوراس کے حدود کے بارے میں ھے، بعض ایسے اشخاص کو موٴلف نے شیعہ شمار کیا ھے جن کو خود شیعہ علمائے رجال شیعہ نھیں جانتے، اس لئے کہ اگر چہ یہ لوگ سیاسی اعتبار سے شیعہ تھے لیکن اعتقادی اعتبار سے شیعہ نھیں تھے یعنی سی اسی کشمکش میں اھل بیت(علیہ السلام) کے طرفدار تھے لیکن عقائد کے لحاظ سے اھل بیت(علیہ السلام) کے سرچشمہ سے استفادہ نھیں کرتے تھے۔

تیسرا اعتراض یہ کہ ایک فصل کو اس بحث سے مخصوص کرنا چاھیے تھا اور کتاب کے شروع میں کھنا چا ھیے تھا کہ شیعوں سے مراد کون لوگ ھیں۔

(۴) تاریخ الشیعہ

کتاب تاریخ شیعہ کے موٴلف علامہٴ بزرگ مرحوم شیخ محمد حسین مظفر ھیں یہ کتاب تاریخ تشیع کا ایک اھم ماخذ و منبع ھے یہ کتاب متعدد بار چھپ چکی ھے اور استاد ڈاکٹر سید محمد باقر حجتی صاحب کے توسط سے فارسی میں بھی اس کا ترجمہ ھوچکا ھے۔

مرحوم مظفر نے تاریخ شیعہ کو دور پیغمبر(صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) سے لے کر اپنے زمانے تک مورد بحث قراردیا ھے جو بیاسی عناوین پر مشتمل ھے بطور کلی اس کتاب کے عناوین کو تین حصوں میں تقسیم کیا جاسکتا ھے:

(۱)تشیع کی وسعت کے زمانے

(۲)شیعہ نشین علاقے

(۳)شیعہ حکومتیں

مرحوم مظفر جو ایک عظیم مصنف، عالم، ماھر صاحب قلم اور انشاء پردازی میں بھرپور تجربہ رکھتے تھے جن کے قلم میں روانی اور طرز تحریر کی خوبی کے علاوہ قادر الکلامی اور استحکام بھی پایا جاتا ھے۔ کتاب تاریخ شیعہ کی ایک خوبی اور امتیاز یہ بھی ھے کہ روئے زمین پرھر زمانہ میں شیعوں کے پائے جانے کے بارے میں تحقیق کی گئی ھے۔

یہ کتاب تاریخ تشیع پر تحقیق کرنے والوں کے لئے ھر زمانہ میں ایک اھم ترین ماخذ و منبع ھوسکتی ھے، تاریخ شیعہ دوسری تمام کتابوں پر امتیاز رکھتی ھے لیکن اختصار کی وجہ سے حق مطالب کو ادا نھیں کیا گیا ھے، ھاں بعض موارد جیسے، شیعہ،کے مفھوم اور اس کے نام کو اھلبیت(علیہ السلام) کے دوستوں سے مختص ھونے کا زمانہ، آغاز تشیع ا ور شیعیت کا فروغ پانا کہ جس کا تعلق اسا س شیعیت سے ھے، ان سب کے بارے میں تفصیل بیان کی گئی ھے۔ مرحوم مظفر مقدمہٴ کتاب میں تحریر کرتے ھیں:

"میں کسی چیز کاطالب نھیں ھوں مگر یہ کہ لوگ اس بات کو جان لیں کہ تشیع کا سلسلہ رسالت مآب حضرت محمد مصطفی صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے زمانہ سے شروع ھو ا ھے ایرانی اور ابن سبا اس کی تاٴسیس میں کوئی دخالت نھیں رکھتے ھیں۔"

دوسرا اعتراض جو اس کتاب کے بارے میں ھے وہ یہ ھے کہ یہ کتاب تحقیقی نھیں ھے موٴلف محترم نے اختصار کی وجہ سے دوسروں کے نظریوں، آراکو نقل نھیں کیا ھے اور تنقید بھی نھیں کی ھے۔

مناسب تھاکہ اس کتاب کا ایک حصہ جو اسلامی حکومت کے بارے میں تھا اسے مکمل کیا جاتا اس لئے کہ زمانے کے گزرنے کے ساتھ ساتھ اوران تحولات وتغیرات کے پیش نظر گئی جوشیعہ حکومتوں کو در پیش تھے مورد بحث قرار دئے گئے ھیں اور ان میں سے بعض ختم ھوگئی ھیں لیکن مترجم محترم نے بعض نئی حکومتوں کا ذکر نھیں کیا ھے اور مزیدمطالعہ کی زحمت گوارہ نھیں کی ھے، نتیجہ میں اسی شکل میں ترجمہ کردیاھے بلکہ بعض شیعہ حکومتوں کی بحث سے کھنگی اورقدامت کی بو آتی ھے۔

 

(۵)شیعہ در تاریخ

کتاب شیعہ در تاریخ، جو محمد حسین زین عاملی کی تالیف ھے اور محمد رضا عطائی نے اس کتاب کافارسی ترجمہ کیا ھے، یہ کتاب آستانہ قدس رضوی کے توسط سے چھپی ھے شیعہ تاریخ کے بارے میں لکھی جانی والی کتابوں کے لئے یہ ایک اھم منبع و ماخذ ھے،یہ کتاب پانچ فصلوں اور ایک خاتمہ پر مرتب ھوئی ھے:

پھلی فصل:-

شیعہ عقائد کا مختصرخاکہ اس کے معنی اور مفھوم نیز سابقہ شیعیت کے بیان میں ھے۔

دوسری فصل:-

شیعوں سے وجود میں آنے والے گروہ اور فرقوں کے بیان میں ھے۔

تیسری فصل:-

پیغمبر(صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے بعد سے امام حسین(علیہ السلام) کی شھادت تک کی تاریخ اور اس پر تجزیہ وتبصرہ کے علاوہ اس دوران جو حادثات واقعات واقع ھوئے ھیں ان کا بیان ھے۔

چوتھی فصل:-

اموی اور عباسی خلفاء کے زمانے میں شیعوں کا اپنے موقف پرقائم رھنا سے مربوط ھے۔

پانچویں فصل: -

غلواور غالیوں سے شیعوں کا اظھار بیزاری کرنا۔

"شیعہ در تاریخ " شیعوں کے اندرونی فرقوں کے بارے میں یک اچھا منبع و ماخذ ھے بالخصوص شیعوں کے فرقوں کے وجود میں آنے کے علل و اسباب کو بیان کیاگیا ھے اور اچھا تجزیہ و تبصرہ کیا ھے۔

یہ کتاب تاریخ تشیع کے عنوان سے بھت زیادہ جامع نھیں ھے کیونکہ کھیں کھیں ایسی بحثیں جوبیان ھوئی ھیں جو تاریخ تشیع کے دائرے سے خارج ھیں، جیسے وہ بحثیں تاریخ خلافت اور خوارج کے بارے میں پیش کی گئی ھیں وہ تاریخ تشیع سے بالکل خارج ھیں۔

( ۶) جھاد ا لشیعہ

تاریخ شیعہ کے منابع میں سے ایک کتاب جھاد شیعہ ھے اگر چہ اس کی اصلی بحثیں شیعہ اور شیعہ فوجیوں کے جھاد و انقلاب کے بارے میں ھیں، اس کتاب کی موٴلفہ محترمہ ڈاکٹر سمیرہ مختار لیثی(استا دعین شمس یونیورسٹی، مصر)ھیں کتاب جھاد شیعہ دارالجیل مطبع بیروت وزیری سائزمیں بصورت مجلد ۱۳۹۶ھ میں شائع ھوئی جو ۴۲۴ صفحات پر مشتمل ھے، یہ کتاب مقدمہ کے بعد پانچ ابواب اور ایک خاتمہ پر مشتمل ھے، اس کتاب کا موضوع جھاد شیعہ ھے کہ اس کتاب میں تقریباً دوسری صدی ھجری کے آخر تک کے حالات کو مورد بحث و بررسی قراردیا گیا ھے، بہ عبارت دیگر: اس کتاب کی موٴلفہ ایک طرف عباسیوں کے خلاف شیعوں کی فوجی تحریک اور جھاد،نیز علویوں کے قیام اور ان کی شکست کے اسباب کو بیان کرتی ھیں، شیعہ فرقوں، ان کی تحریکیں،ان کے اجتماعی اور سیاسی موقف کو جو اس زمانہ میں موجود تھے بیان کرتی ھیں دوسری طرف خلفا کی سیاست جو ائمہ اطھارعلیھم السلام اور شیعوں کے بارے میں تھی اس پر بھی انھوں نے روشنی ڈالی ھے۔ عام شیعہ تاریخ کے مباحث پھلے باب کے ایک حصہ میں بیان کئے ھیں جیسے: شیعہ درلغت، مفاھیم شیعہ شیعوں کے وجود میں آنے کی تاریخ، امام حسین(علیہ السلام) کے جھاد کا اثر، عراق میں شیعوں کا جھاد، شیعہٴ کیسانیہ کا وجود، شیعہٴ امامیہ کے فرقے نیز تحقق شیعیت اور تاریخ شیعہ کے بارے میں مختلف نظریوں کو بیان کیا ھے۔ تنھا ایک اعتراض جو اس کتاب پر وارد ھوتا ھے وہ یہ ھے کہ انھوںنے ائمہ اطھار علیھم السلام کے سیاسی نظریات کو اپنے لحاظ سے بیان کیاھے چونکہ وہ شیعہ نھیں تھیں اسی وجہ سے وہ ائمہ کے سیاسی تفکرکے اصول کو نھیں سمجھ سکیں اور اسی وجہ سے امام حسین علیہ السلام کے بعدوہ امامت کے مبانی اور اصول کور وحانی وعلمی امامت بتاتی ھیں وہ ان(بقیہ نو ائمہ)کی روش کو امیرالمومنین(علیہ السلام)، امام حسن(علیہ السلام) اور امام حسین(علیہ السلام) کی روش سے جدا جانتی ھیں۔[6]

(۷)ایران میں تاریخ تشیّع اپنے آغازسے ساتویں صدی ھجری تک

اس کتاب کے لکھنے والے جناب رسول جعفریان، حوزہ علمیہ قم کے ایک بزرگ محقق ھیں، یہ کتاب اپنی صنف میں محققا نہ و بے نظیر ھے موٴلف مذکورکی بھت سی تاٴلیفات میں ایک بھترین تالیف ھے نیز تاریخ تشیع پر تحقیق کے لئے بھترین منابع میں سے ایک ھے، یہ کتاب تاریخ کی معلومات کے حوالہ سے نھایت قیمتی ھے کہ تاریخ تشیع میں کوئی بھی محقق اس کتاب سے بے نیاز نھیں ھو سکتا، اس کتاب کی خوبیوں میں سے ایک خوبی اس کے متن کی بے نیازی ھے اگر کوئی نقص اس میں پایا بھی جاتا ھے تو اس کی شکل و صورت کے اعتبار سے ھے مثلاًجوحا شیے ھیں وہ فنی اعتبار سے اعلیٰ اور معیاری نھیں ھیں، دوسرے یہ کہ بعض مطالب جیسے منابع پر تنقید و تبصرہ خود مطالب کے درمیان ذکر کیا گیا ھے جو پڑھنے والوں کے لئے دشواری کا سبب ھوا ھے بھتر یہ تھا کہ ان مطالب کو علیحدہ اسی عنوان سے لکھا جاتا یا کم از کم حاشیہ میں جدا گانہ لکھا جاتا تا کہ اصل کتاب کا امتیاز اپنی جگہ باقی رھتا۔

عمومی منابع :-

تاریخ تشیع کے بارے میں بعض خصوصی کتابوں کی مختصر تحقیق کے بعد تاریخ کے عمومی منابع سے متعلق ھم تحقیق کریں گے، موضوع کی حیثیت سے عمومی منابع اس طرح ھیں۔

(۱) تاریخ عمومی

(۲) ائمہ(علیہ السلام) کی زندگانی

(۳) کتب فتن وحروب

(۴)کتب رجال وطبقات

(۵)کتب جغرافیہ

(۶) کتب اخبار

(۷)کتب نسب

(۸)کتب حدیث

(۹)کتب ملل ونحل

( ۱)تاریخ عمومی

اس کتاب میں تاریخ تشیع کی تحقیق زیادہ تر ان کتابوں سے کی گئی ھے جو پھلی صدی ھجری یا تاریخ خلفاء یا اس جیسے دور میں لکھی گئی ھیں، جیسے تاریخ یعقوبی، مروج الذھب، تاریخ طبری، الکامل فی التاریخ، الامامة والسیاسة، العبر، تاریخ خلفاء، شرح نھج البلاغہ ابن ابی الحدید، حتیٰ وہ تحقیقی اور تاریخی کتابیں جو معاصرین نے لکھی ھیں، تاریخ کی عمومی کتابوں میں سے سب سے زیادہ جس سے فائدہ اٹھا یا گیا ھے وہ تاریخ یعقوبی اور مروج الذھب ھے، ان دو کتابوں میں تقریباًبے طرف ھوکر تاریخی حوادث اور واقعات کو لکھا گیا ھے اور اس میں حقیقت پوشی سے کام نھیں لیا گیا ھے، یعقوبی نے اصحاب پیغمبرکی ابو بکر کی خلافت سے مخالفت کو تفصیل سے بیان کیا ھے[7]نیزپیغمبر(صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی رحلت کے بعد جو گروہ بندیاں ھوئیں انھیں بھی بیان کیا ھے،وہ ان واقعات اور حوادث کو ذکر کرتے ھیں جوتاریخ شیعہ سے مربوط ھیں جیسے حکومت امیرالمومنین[8]،صلح امام حسن(علیہ السلام)[9]، شھادت حجر بن عدی[10]، شھادت عمرو بن حمق[11]اور شھادت امام حسین(علیہ السلام)[12]کو اپنی قدرت و توانائی کے مطابق بیان کیا ھے اور اس نے حقّ مطلب کو تقریبا ادا کیا ھے۔

مسعودی ایسے موٴرخ ھیں جنھوں نے کتاب مروج الذھب اور التنبیہ والاشراف میں حقیقت کو چھپانے میں تعمد سے کام نھیں لیاھے، نیز کتاب مروج الذھب اور التنبیہ والاشراف میں سقیفہ کا خلاصہ بیان کیا ھے، اصحاب کے درمیان ا ختلاف اور بنی ھاشم کا ابوبکر کی بیعت نہ کرنے کو ذکر کیا ھے[13]مسعودی نے اس کتاب میں دوسری جگہ قضیہ فدک کو تحریر کیا ھے،[14]جو بھی واقعات امیرالمومنین(علیہ السلام) اور شھادت امام حسین(علیہ السلام) کے دوران وجود میں آئے ھیں ان کو تفصیل سے بیان کیا ھے[15]اس کے علاوہ مروج الذھب میں جگہ جگہ شیعوں کے نام ان کے قبیلوں اور دشمنان اھل بیت کے ناموں کو ذکر کیا ھے، اسی طرح ائمہ اطھار علیھم السلام کی وفات کے تمام سال کو ان کی مختصرحیات طیبہ کے ساتھ بیان کیا ھے خصوصی طور سے دوسری صدی ھجری میں علویوں کے قیام کی بطورمفصل وضاحت کی ھے۔[16]

(۲)ائمہ علیھم السلام کی زندگانی

ائمہ علیھم السلام کی زندگی سے مربوط جو کتابیں ھیں ان میں شیخ مفید ۺ کی کتاب الارشاد، ابن جوزی کی تذکرةالخواص کی بھت زیادہ اھمیت رکھتی ھیں ۔

کتاب الارشاد مھم ترین شیعوں کا پھلا مآخذ ھے جس میں بارہ اماموں کی زندگی موجود ھے اس اعتبار سے کہ امیرالمومنین(علیہ السلام) کی زندگی کا بعض حصہ رسول اسلا م(صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم) کے زمانہ میں تھا،پیغمبر(صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم)کی سیرت کو بھی اس کتاب میں بیان کیا گیا ھے خصو صا آنحضرت کی جنگیں،جنگ تبوک کے علاوہ حضرت علی(علیہ السلام) تمام جنگوں میں موجود تھے، اس کتاب کے بارے میں صرف اتنا ھی کھناکافی ھے کہ تاریخ تشیع اور امام معصوم کی زندگی کی تاریخ کے بارے میں کوئی بھی محقق اس کتاب سے بے نیاز نھیں ھے۔

(۳) کتب فتن و حروب

یہ کتاب ان جنگوںکے بیا ن سے مخصوص ھے جو مسلمانوں کی تاریخ نگاری میں کافی اھمیت کی حامل ھیں، ان میں سے قدیم ترین کتاب وقعةالصفین ھے جونصربن مزاحم منقری(متوفی ۲۱۲ھ)کی تالیف ھے۔ جس میں صفین کے واقعہ میں اور جنگ کو بیان کیا گیا ھے، اس کتاب میں حضرت علی(علیہ السلام) اور معاویہ کے درمیان مکاتبات اور حضرت کے خطبات اور مختلف تقریروں کے سلسلہ میں اھم اطلاعات موجود ھیں ، اس کتاب کے مطالب کے درمیان مفید معلومات اصحا ب پیغمبر(صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے حضرت علی(علیہ السلام) سے متعلق خیا لات اور عرب کے مختلف قبائل کے درمیان تشیع کے نفوذ کی عکاسی پائی جاتی ھے۔

کتاب الغارات موٴلف ابراھیم ثقفی کوفی۲۸۳ھ یہ کتاب بھی ایک اھم منابع میں سے ھے جو اسی سلسلے میں لکھی گئی ھے اس کتاب میں امیرالمو منین(علیہ السلام) کی خلافت کے زمانے کے حالات بیان کئے گئے ھیں، اس کتاب میں معاویہ کے کا رندوں اور غارت گروں کے بارے میں کہ جوحضرت علی(علیہ السلام) کی حکومت میں تھے تحقیق کی گئی ھے، اس کتاب سے امیرالمومنین(علیہ السلام) کے دور کے شیعوں کے حالات کو سمجھا جا سکتا ھے۔

الجمل یا نصرةالجمل شیخ مفید کی یہ کتاب ارزش مند منابع میں سے ایک ھے کہ جس میں جنگ جمل کے حالات کی تحقیق کی گئی ھے چونکہ یہ کتاب حضرت علی(علیہ السلام) کی پھلی جنگ جو آپ کی خلافت کے زمانے میں واقع ھوئی ھے اس کے متعلق ھے لہٰذا اس بات کی نشان دھی کرتی ھے کہ حضرت علی علیہ السلام کا مرتبہ عراق کے لوگوں کے درمیان آپ کے وھاں جانے سے پھلے کیا تھا۔

(۴)کتب رجال و طبقات

علم رجال ان علوم میں سے ھے کہ جن کاربط علم حدیث سے ھے اور اس علم کا استعمال احادیث کی سند سے مربوط ھے، اس علم کے ذریعہ راویان حدیث اور اصحاب پیغمبر(صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے حالات زندگی کا پتہ چلتا ھے،رجال شیعہ میں اصحا ب پیغمبر(صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے علاوہ ائمہ معصومین(علیہ السلام) کے اصحاب کو بھی مورد بحث قرار دیا گیا ھے، علم رجال شناسی دوسری صدی ھجری سے شروع ھو ا اور آج تک جاری ھے اور زمانہ گزرنے کے ساتھ ساتھ ا س میں تکامل وترقی ھوتی جارھی ھے، اھل سنت کی بعض معروف ومعتبر کتابیں اس سلسلہ میں مندرجہ ذیل ھیں :

(۱)الاستیعاب فی معرفة الاصحاب، ابن عبدالبرقرطبی ۴۶۳ھ

(۲) اسد الغابہ فی معرفةالصحابہ، ابن اثیر جزری ۶۳۰ھ

(۳) تاریخ بغداد، خطیب بغدادی ۴۶۳ ھ

(۴) ا لاصابہ فی معرفة الصحابہ، ابن حجر عسقلانی

اسی طرح شیعوں کی بھی اھم ترین کتابیں درج ذیل ھیں :

(۱)اختیار معرفة الرجال کشی،شیخ طوسی ۴۶۰ھ

(۲)رجال نجاشی(فھرست اسماء مصنفی الشیعة)

(۳)کتاب رجال یا فھرست شیخ طوسی

(۴)رجال برقی،احمد بن محمد بن خالد برقی۲۸۰ھ

(۵)مشیخہ، شیخ صدوق ۳۸۱ھ

(۶)معالم العلماء ،ابن شھر آشوب مازندرانی۵۸۸ ھ

(۷)رجال ابن داؤد،تقی الدین حسن بن علی بن داؤد حلی۷۰۷ھ

البتہ شیعوں کے درمیان علم رجال نے زیادہ تکامل وارتقاپیدا کیا ھے اور مختلف حصوں میں تقسیم ھوا ھے۔

 

بعض کتب رجال جیسے اسد الغابہ، فھرست شیخ، رجال نجاشی اور معالم العلماء کو حروف کی ترتیب کے لحاظ سے لکھا گیا ھے اور کچھ کتابیں جیسے رجال شیخ اور رجال برقی رسول(صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) اکرم اور ائمہ(علیہ السلام) کے اصحاب کے طبقات حساب سے لکھی گئی ھیں ، علم رجال پر اور بھی کتابیں ھیں جن میں لو گوں کو مختلف طبقات کی بنیاد پر پرکھا گیا ھے ان میں سے اھم کتاب طبقات ابن سعد ھے۔

(۵)کتب جغرافیہ

کچھ جغرافیائی کتابیں سفر نا موں سے متعلق ھیں، جن میں اکثر کتابیںتیسری صدی ھجری کے بعد لکھی گئی ھیں چونکہ اس کتاب میں تاریخ تشیّع کی تحقیق شروع کی تین ھجری صدیوں میں ھوئی ھے، اس بنا پر ان سے بھت زیادہ استفا دہ نھیں کیا گیا ھے،ھاں بعض جغرافیائی کتابیں جن میں سند کی شناخت کرائی گئی ھے اس تحقیق کے منابع میں سے ھیں ، ان کتابوں میں معجم البلدان جامع ھونے کے اعتبار سے زیادہ مورد استفادہ قرار پائی ھے، اگر چہ موٴلف کتاب"یاقوت حموی" نے شیعوںکے متعلق تعصب سے کام لیا ھے اور کوفہ کے بڑے خاندان کا ذکر کرتے وقت کسی بھی شیعہ عالم اور بڑے شیعہ خاندانوں کا ذکر نھیں کیا ھے۔

(۶)کتب اخبار

کتب اخبارسے مراداحادیث کی وہ کتابیں نھیں ھیں جن میں حلال و حرام سے گفتگو کی گئی ھے بلکہ ان سے مراد وہ قدیم ترین تاریخی کتابیںھیں جو تاریخ کی تدوین کے عنوان سے اسلامی دور میں لکھی گئی ھیں کہ ان کتابوں میں تاریخی اخباراور حوادث کو راویوں کے سلسلہ کے ساتھ بیان کیا گیا ھے، یعنی تاریخی اخبار کے ضبط ونقل میں اھل حدیث کا طرز اپنایا گیاھے۔ اس طرح کی تاریخ نگاری کی چند خصوصیات ھیں ، پھلی خصوصیت یہ کہ ایک واقعہ سے متعلق تمام اخبار کو دوسرے واقعہ سے الگ ذکر کیاجاتا ھے وہ تنھا طور پر مکمل ھے اورکسی دوسری خبر اور حادثہ سے ربط نھیں ھے،دوسری خصوصیت یہ کہ اس میں ادبی پھلوؤں کا لحاظ کیا گیاھے یعنی موٴلف کبھی کبھی شعر، داستان مناظرے سے استفادہ کرتا ھے یہ خصوصیت خاص طور پر سے ان اخبار یین کے آثار میں زیادہ دیکھنے میں آتی ھے جو "ایام العرب" کی روایات سے متاثر تھے، اسی وجہ سے بعض محققین نے "خبر " کی تاریخ نگاری کو زمانہٴ جاھلیت کے واقعات کے اسلوب و انداز سے ماخوذ جانا ھے۔تیسری خصوصیت یہ کہ ان میں روایات کی سند کا ذکر ھوتا ھے۔

در حقیقت تاریخ نگاری کا یہ پھلا طرز خصوصاً اسلام کی پھلی دو دصدیوں میں کہ جس میں اکثرتاریخ کے خام موادو مطالب کا پیش کرنا ھوتا تھا اسلامی دور کے مکتوب آثار کا ایک اھم حصہ رھاھے۔اسی طرح سے اخبار کی کتابوں کے درمیان کتاب الاخبارالموفقیات جو زبیر بن بکارکی تالیف کردہ ھے زیادہ اھمیت رکھتی ھے، اس کتاب کا لکھنے والا خاندان زبیر سے ھے کہ جس کی اھل بیت(علیہ السلام) سے پرانی دشمنی تھی اس کے علاوہ اس کے، متوکل عباسی( جو امیرالمومنین(علیہ السلام) اور ان کی اولاد کا سخت ترین دشمن تھا) سے اچھے تعلقات تھے اور اس کے بچوں کا استاد بھی تھا۔[17]نیز اس کی جانب سے مکہ میں قا ضی کے عھدے پر فائز تھا [18]ان سب کے باوجوداس کتاب میں ابوبکر کی خلافت پر اصحاب پیغمبر(صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے اعتراضات کے بارے میں ھم معلومات ھیں خصوصاً اس میں ان کے وہ اشعاربھی نقل کئے گئے ھیں جو حضرت علی(علیہ السلام) کی جانشینی اور وصایت پر دلالت کرتے ھیں۔

(۷)کتب نسب

نسب کی کتابوں میں انساب الاشراف بلاذری سب سے زیادہ قابل استفادہ قرار پائی ھے جو نسب کے سلسلہ میں سب سے بھترین ماخذ جانی جاتی ھے، دوسری طرف اس کتاب کو سوانح حیات کی کتابوںمیں بھی شمار کیا جا سکتا ھے۔ اگر چہ علم نسب کے لحاظ سے کتاب جمھرة الانساب العرب جامع ترین کتاب ھے کہ جس میں مختصر وضاحت بھی بعض لوگوں کے بارے میں میں کی گئی ھے۔

کتاب منتقلہ الطالبیین میں ذریت پیغمبر(صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) اور سادات کی مھاجرت سے متعلق تحقیق کی گئی ھے، ان مطالب سے استفادہ کرتے ھوئے ابتدائی صدیوں میں اسلامی سرزمینوں پر تشیع سے متعلق تحقیق کی جا سکتی ھے۔

(۸)کتب ا حادیث

تاریخ تشیع کے دوسرے منابع میں سے حدیث کی کتابیں ھیں عرف اھل سنت میں حدیث سے مراد قول، فعل اور تقریر رسول(صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) ھے، لیکن شیعوں نے رسول(صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے ساتھ ائمہ معصومین(علیہ السلام) کو بھی شامل کیا ھے اور شیعہ رسول کے ساتھ ائمہ معصومین(علیہ السلام) کے قول، فعل اورتقریر کوبھی حجت مانتے ھیں ، اھل سنت کی کتابوں میں صحیح بخاری(۱۹۴۔۲۵۶)مسند احمد بن حنبل(۱۶۴۔۲۴۱) مستدرک علی الصحیحین حاکم نیشاپوری(ف۴۵۰)صحابہ کے درمیان تشیع اور امیرالمومنین(علیہ السلام) کی حقانیت( جو تشیع کی بنیادھے) کی تحقیق کے لئے بھترین کتابیں ھیں۔

شیعہ حضرات کی حدیث کی کتابیں جیسے کتب اربعہ: الکافی کلینی(۳۲۹ھ)، من لا یحضرہ الفقیہ صدوق(ف۳۸۱ھ) تہذیب الاحکام و استبصارشیخ طوسی(وفات ۳۶۰ھ)اوردوسری کتابیں جیسے امالی،غررالفوائدو درر القلائدسید مرتضیٰ(۳۵۵۔۴۳۶) الاحتجاج طبرسی(چھٹی صدی)شیعہ احادیث کا عظیم دائرة المعارف(انسائیکلوپیڈیا) بحارالانوار مجلسی(۱۱۱۱ھ) وغیرہ کہ جو اھل سنت کی کتابوںپر امتیازی حیثیت رکھتی ھیں، اس کے علاوہ شیعوں کے فروغ، ان کے رھائشی علاقے، ان کے اجتماعی روابط اور ائمہٴ معصومین(علیہ السلام) کے ساتھ انکے اربتاط کے طریقہ کار کا اندازہ ان کی حدیثوں سے لگایا جا سکتا ھے۔

(۹)کتب ملل ونحل

اس سلسلہ میں اھم ترین ماخذشھرستانی(۴۷۹۔۵۴۸) کی کتاب ملل ونحل ھے، یہ کتاب جامعیت اورماخذ کے قدیم ھونے کے اعتبار سے بھترین منابع میں شمار ھوتی ھے بلکہ یہ کتاب محققین اور دانشمندوں کے لئے مرجع ھے اگرچہ موٴلف نے مطالب کو بیان کی میں تعصب سے کام لیا ھے،اس نے کتاب کے مقدمہ میں ۷۳فرقہ والی حدیث کا ذکر کیا ھے اور اھل سنت کو فرقہ ناجیہ قرار دیا ھے حتی الامکان شیعہ فرقوں کی تعداد بڑھانے کی کوشش کی گئی ھے تاکہ ثابت کرے کہ شیعہ فرقوں کی کثرت شیعوں کے بطلان پر دلیل ھے، شھرستانی نے مختاریہ، باقریہ، جعفریہ، مفضلہ، نعمانیہ، ھشامیہ، یونسیہ جیسے فرقوں کو بھی شیعہ فرقوں میں شمار کیا ھے جب کہ ان فرقوں کا خارج میں کوئی وجود ھی نھیں ھے، جیسا کہ مقریزی نے اپنی کتاب خطط میں کھاھے کہ شیعہ فرقوں کی تعدادتین سو ھے لیکن ان کو بیان کرتے وقت بیس سے زیادہ فرقہ نھیں بیان کرسکا۔

ملل ونحل کی جملہ قدیم ترین ا ور اھم ترین، اشعری قمی کی المقالات والفرق اور نو بختی کی فرق الشیعہ ھے۔ اشعری قمی اور نو بختی کا شمارشیعہ علماء اوردانشوروں میں ھوتاھے جن کا زمانہ تیسری صدی ھجری کا نصف دوم ھے۔

کتاب" المقالات و الفرق "معلومات کے لحاظ سے کافی وسیع ھے اور جامعیت رکھتی ھے لیکن اس کے مطالب پراگندہ ھیں اورمناسب ترتیب کی حامل نھیں ھے۔ بعض محققین کی نظر میں نوبختی کی کتاب فرق الشیعہ حقیقت میں کتاب المقالات والفرق ھی ھے۔

__________

[1] ابولفرج اصفھانی، مقدمہ کتاب مقاتل الطالبین، منشورات الشریف الرضی، قم، طبع دوم ۱۴۱۶ھ، ص۲۴

[2] ابوالفرج اصفھانی،مقاتل الطالبین،منشورات الشریف الرضی،قم،طبع دوم،۱۴۱۶ھجری، ص۲۴۔

[3] الشیرازی،سید علی خا ن، الدرجات الرفیعہ فی طبقا ت الشیعہ،موٴسسة الوفا، بیروت ص۳،۴۔

[4] سیدمحسن امین،اعیان الشیعہ،دار التعارف للمطبوعات،بیروت،ج۱،ص ۱۸، ۲۰۹۔

[5] اعیان الشیعہ،سید محسن امین،دار التعارف للمطبوعات، بیروت، ج۱،ص۲۰،۲۱۔

[6] مختار لیثی، سمیرہ،جھاد شیعہ، دارالجیل،بیروت،۱۳۹۶ھ ص۳۶۔

[7] ابن واضح،احمد بن ابی یعقوب،تاریخ یعقوبی،منشورات شریف الرضی،قم ۱۴۱۴ھ ج:۲ ص۱۲۳تا۱۲۶۔

[8] ابن واضح،احمد بن ابی یعقوب،تاریخ یعقوبی،منشورات شریف الرضی،قم ۱۴۱۴ھ، ج۳ ص ۱۷۸،۱۷۹۔

[9] گزشتہ حوالہ،ص۲۱۴،۲۱۵۔

[10] گزشتہ حوالہ، ص۲۳۰،۲۳۱۔

[11] گزشتہ حوالہ،ص۲۳۱،۲۳۲۔

[12] گزشتہ حوالہ، ص۲۴۳،۲۴۶۔

[13] مسعودی علی بن حسین،مروج الذھب،منشورات موٴسسةالاعلمی للمطبوعات بیروت ۱۴۱۱ھ، ج۲، ص۳۱۶، التنبیہ والاشراف دار الصاویٰ للطبع والنشر والتالیف،قاھرہ،(بغیر تاریخ کے)ص ۴۲

[14] مروج الذھب،ج۳،ص۲۶۲ ۔

[15] گزشتہ حوالہ،ج۲،ص۲۴۶تا۲۶۶ ۔

[16] مروج الذھب،ج۲،ص۳۲۴ ۔ ۳۲۶ ۔ ۳۵۸۔

[17] خطیب بغدادی،الحافظ ابی بکر احمد بن علی،تاریخ بغداد،مطبعة السعادہ،مصر،۱۳۴۹ھ ج۸،ص۴۶۷

[18] ابن ندیم،الفھرست،بیروت،(بی تا)ص۱۶۰

 

 


source : http://www.shiastudies.net
215
0
0% (نفر 0)
 
نظر شما در مورد این مطلب ؟
 
امتیاز شما به این مطلب ؟
اشتراک گذاری در شبکه های اجتماعی:

latest article

خدا کی شناخت اور معرفت کا ایک راستہ فطرت ہے
خدا، یونانی فلسفیوں کی نگاه میں
شیعہ بھی حضرات اہلسنت کا مسلک کیوں نہیں اختیار کر لیتے؟
حضرت علی علیہ السّلام کی حیات طیّبہ
شیعہ اہل بیت علیہم السلام کی نظر میں
علم کا مقام
کیا نذر کرنے سے تقدیر بدل سکتی ہے؟
اللہ تعالي کے ديدار کے بارے ميں بعض مسلمانوں کا عقيدہ
عدل الہی قرآن کی روشنی میں
قرآن اور عقل

latest article

خدا کی شناخت اور معرفت کا ایک راستہ فطرت ہے
خدا، یونانی فلسفیوں کی نگاه میں
شیعہ بھی حضرات اہلسنت کا مسلک کیوں نہیں اختیار کر لیتے؟
حضرت علی علیہ السّلام کی حیات طیّبہ
شیعہ اہل بیت علیہم السلام کی نظر میں
علم کا مقام
کیا نذر کرنے سے تقدیر بدل سکتی ہے؟
اللہ تعالي کے ديدار کے بارے ميں بعض مسلمانوں کا عقيدہ
عدل الہی قرآن کی روشنی میں
قرآن اور عقل

 
user comment