اردو
Friday 19th of July 2019
  1458
  0
  0

خدا وند عالم کا ارشاد گرامی

خدا وند عالم کا ارشاد گرامی:

 

          اے ایمان لانے والو! روزہ تم پر یوں ہی واجب کیا گیا ہے جیسے تم سے پہلے کے لوگوں پر واجب کیا گیا تھا (تاکہ ) شاید تم پرہیز گار ہو جاؤ۔

                                      ( سورہ ٴ بقرہ /۱۸۳ )

 

 

 

 

 

حدیثیں

  خ      اسلام کی بنیاد:

          حضرت امام محمد باقر علیہ السلام نے فرمایا:

          اسلام کی بنیاد پانچ چیزوں پر قائم و استوار ہے ، نماز زکات ، حج ، روزہ اور ولایت ۔  ( فروع کافی ،ج/۴ص/۶۲ ح/۱ )

   خ     روزہ کا فلسفہ:

          حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام نے فرمایا:

          خدا وند عالم نے روزہ اس لئے واجب کیا کہ اس کے ذریعہ امیر اور غریب مساوی و برابر ہو جائیں۔

                               ( من لا یحضر ہ الفقیہ ، ج/ ۲ص/۴۳ح/۱ )

   خ     اخلاق کی آزمائش:

          حضرت امیر المومنین علی ابن ابی طالب علیہ السلام نے فرمایا:

          خدا وند عالم نے روزہ واجب کیا تاکہ اس کے ذریعہ مخلوق کے اخلاص کو ازمائے۔  ( نہج البلاغہ کلمات قصار /۳۵۲ )

   خ     روزہ قیامت کا یاد دلاتا ہے:

          حضرت امام رضا علیہ السلام نے فرمایا:

          لوگوں کو روزہ رکھنے کا حکم اس لئے دیا گیا ہے کہ وہ اس کے ذریعہ بھوک اور پیاس کے رنج و الم کو محسوس کریں اور آخرت کے فقر و بیچارگی کا احساس پیدا کریں۔

                   ( وسائل الشیعہ ،ج/۴ص/۴ ح/۵ و علل الشرائع ص/۱۰۰ )

   خ     بدن کی زکات:

          حضرت رسول اکرم  نے فرمایا:

          ہر چیز کی ایک زکات ہے ، بدنوں اور جسموں کی زکات روزہ ہے ۔  ( اصول کافی ج/۴ص/۶۲ ح/ ۲ )

   خ     آتش جہنم کی سپر:

          حضرت رسول اکرم  نے فرمایا:

          روزہ جہنم کی آگ کی سپر ہے ، یعنی روزہ رکھنے والا انسان آتش جہنم سے محفوظ رہے گا۔  ( اصول کافی ج/۴ ص/ ۱۶۲ )

   خ     روزہ کی اہمیت:

          حضرت رسول اکرم  نے فرمایا:

          گرمی (کے موسم ) میں روزہ رکھنا جہاد ہے ۔

                                       ( بحار الانوار ،ج/۹۶ص/۲۵۷)

   خ     نفس کا روزہ:

          حضرت امیر المومنین علی ابن ابی طالب علیہ السلام نے فرمایا:

          دنیا کی لذتوں سے نفس کا روزہ سب سے زیادہ مفید روزہ ہے ۔  ( غرر الحکم ،ج / ۱ ص/ ۴۱۶ ح/۶۴ )

   خ     حقیقی روزہ:

          حضرت علی ابن ابی طالب علیہ السلام نے فرمایا:

          حقیقی روزہ ،حرام چیزوں سے یوں پرہیز کرنا ہے جیسے انسان کھانے پینے سے پرہیز کرتا ہے۔ 

                                    ( بحار الانوار ،ج/۹۳ ص/ ۲۴۹ )

   خ     سب سے بہتر روزہ:

          حضرت امیر المومنین علی ابن ابی طالب علیہ السلام نے فرمایا:

          قلب (دل) کا روزہ زبان کے روزے سے بہتر ہے اور زبان کا روزہ شکم (پیٹ ) کے روزے سے بہتر ہے۔( غرر الحکم ،ج/ ۱ ص/۴۱۷ ح/۸۰ )

   خ     آنکھ اور کان کا روزہ:

          امام جعفر صادق علیہ السلام نے فرمایا:

          جب تم روزہ رکھتے ہو تو سزاوار ہے کہ تمھاری آنکھیں ، کان بال اور کھال بھی روزہ دار رہیں ، یعنی یہ چیزیں بھی گناہوں سے پرہیز کریں ۔

                                     ( اصول کافی ،ج/۴ ص/ ۸۷ ح/ ۱ )

   خ     اعضاء و جوارح کا روزہ:

          حضرت فاطمہ زہرا سلام اللہ علیہا نے فرمایا:

          جس روزہ دار نے اپنی زبان ،کان ، آنکھ اور اعضاء و جوارح کو گناہوں سے محفوظ نہیں رکھا اس کا روزہ آخر کس کام کا؟۔     ( بحار الانوار ،ج / ۹۳ ص/ ۲۹۵ )

   خ     ناقص روزہ:

          حضرت امام محمد باقر علیہ السلام نے فرمایا:

          ان افراد کا ( گویا) روزہ ہی نہیں : ۱:۔ جو شخص اپنے امام و رہبر کی نافرمانی کرے۔۲:۔ اپنے آقا سے بھاگا ہو ا بندہ ،جب تک واپس نہ آجائے ۔۳:۔ اپنے شوہر کی اطاعت نہ کرنے والی عورت جب تک توبہ نہ کرے ۔۴:۔ نافرمان بیٹا جب تک توبہ نہ کرلے۔

   خ     بے حقیقت روزہ:

          حضرت امیر المومنین علی ابن ابی طالب علیہ السلام نے فرمایا:

          کتنے ایسے روزہ دار ہیں جنھیں اپنے روزے سے بھوک اور پیاس کے علاوہ کچھ حاصل نہیں ہوتا اور کتنے ایسے شب زندہ دار ہیں جنھیں ان کی نماز سے بے خوبی اور سختی کے سوا اور کچھ نہیں ملتا ۔  ( نہج البلاغہ کلمات قصار /۱۴۵ )

   خ     روزہ اور صبر:

          حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام نے فرمایا :

          آپ نے خدا وند عالم کے قول ”واستعینوا بابصبر و الصلوٰة “ صبر اور نماز سے مدد لو کے سلسلے میں فرمایا : صبر روزہ ہے۔    ( وسائل الشیعہ،ج/۷ص/۲۹۸ح/۳ )

   خ     روزہ اورصدقہ:

          حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام نے فرمایا:

          ایک درہم صدقہ دینا ایک روز مستحبی روزہ رکھنے سے افضل و بہتر ہے ۔  ( وسائل الشیعہ،ج/۷ص/۳۱۸ح/۶ )

   خ     روزہ کی جزا:

          حضرت رسول اکرم  نے فرمایا:

          خدا وند عالم نے فرمایاہے کہ روزہ میرے لئے ہے اور میں اس کی جزا دینے والا ہوں ۔ 

                   ( وسائل الشیعہ،ج/۷ص/۲۹۲ و ۲۹۴ح/۱۵،۱۶،۲۷،۳۰ )

   خ     جنت کی نعمتوں سے سیراب ہونے والے:

          حضرت رسول اکرم  نے فرمایا:

          وہ شخص جس کا روزہ اسے اس کی پسندیدہ غذا سے روک دے ، خدا وند عالم کے اوپر حق ہے کہ اسے جنت کے کھانوں اور اس کی شرابوں سے سیراب کرے ۔

                                     ( بحار الانوار ،ج /۹۳ص/۳۳۱ )

   خ     کیا کہنا روزہ داروں کا:

          حضرت رسول اکرم  نے فرمایا:

          کیا کہنا اس روزہ دار کا جو خدا کے لئے بھوکا یا پیاسا ہوتا ہے ۔ یہ وہ لوگ ہیں جو قیامت کے دن سیراب ہوں گے ۔  ( وسائل الشیعہ،ج/۷ص/۲۹۹ح/۲)

   خ     روزہ داروں کو خوشخبری:

          حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام نے فرمایا:

          جو شخص اللہ کے لئے شدید گرمی کے دن میں روزہ رکھے اور پیاسا ہو ۔ خدا وند عالم ہزار فرشتوں کو مقرر کرتا ہے کہ وہ اس کے چہرے پر ہاتھ پھیریں اور اسے بشارت دیں، یہاں تک کہ وہ افطار کرے۔

                  (کافی ،ج/۴ص/۶۴ح/۸۔ بحار الانوار ،ج/۹۳ص/۲۴۷)

   خ     روزہ داروں کی خوشی:

          حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام نے فرمایا:

          روزہ دار کے لئے دو فرحتیں اور خوشیاں ہیں ۔ ایک افطار کے وقت اور دوسری پروردگار سے ملاقات کے وقت  (یعنی موت اور قیامت کے دن )

                         ( وسائل الشیعہ،ج/۷ص/۲۹۰۔۲۹۴ح/۶ ، ۲۶)

   خ     جنت کا ایک مخصوص دروازہ:

          حضرت رسول اکرم  نے فرمایا:

          بلا شبہ جنت کا ایک دروازہ ہے جس کا نام ریّان ہے اور اس سے فقط روزہ دار جنت میں داخل ہوںگے۔

              ( وسائل الشیعہ،ج/۷ص/۲۹۵ح/۳۱ ۔معانی الاخبار،ص/۱۱۶)

   خ     روزہ دار کی دعا:

          حضرت امام موسیٰ کاظم علیہ السلام نے فرمایا:

          روزہ دار کی دعا افطار کے وقت مستجاب ہوتی ہے ۔

                               ( بحار الانوار، ج/۹۳ص/۲۵۵ح/۳۳ )

   خ     مومنوں کی بہار کا موسم:

          حضرت رسول اکرم  نے فرمایا:

          سردی کا موسم مومن کی بہار کا زمانہ ہے جس کی رات طویل ہوتی ہے لہٰذا وہ اس میں شب زندہ داری اور عباتیں کرتا ہے اور اس کا دن چھوٹا ہوتا ہے لہٰذا وہ اس میں روزہ رکھتا ہے ۔  ( وسائل الشیعہ،ج/۷ص/۳۰۲ح/۳)

   خ     ہر ماہ کے روزے:

          حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام نے فرمایا:

          جو شخص کوئی ایک نیک عمل انجام دے اسے اس کے دس گنا جزا ملتی ہے اور ان ہی اعمال میں سے ہر ماہ کے تین روزے ہیں۔  ( وسائل الشیعہ،ج/۷ص/۳۱۳ح/۳۳)

   خ     ماہ رجب کا روزہ:

          حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام نے فرمایا:

          جنت میں رجب نام کی ایک نہر ہے جو دودھ سے زیادہ سفید اور شہد سے زیادہ شرین ہے پس جو شخص رجب کے مہینہ میں ایک روزہ رکھے خدا وند عالم اسے اس نہر سے سیراب کرتا ہے ۔

        ( من لا یحضرہ الفقیہ ،ج/۲ص/۵۶ح/۲ ۔ وسائل ،ج/۷ ص/۳۵۰ ح/۳) 

   خ     ماہ شعبان کا روزہ:

          حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام نے فرمایا:

          جو شخص ماہ شعبان کے آخری تین دنوں میں روزہ رکھے اور اسے ماہ رمضان سے ملا دے خدا وند عالم اس کے نامہٴ اعمال میں پے در پے دو ماہ کے روزوں کا ثواب لکھتا ہے ۔  ( وسائل الشیعہ ،ج/۷ ص/۳۷۵،ح/۲۲)

   خ     افطار کرانا:

          حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام نے فرمایا:

          جو شخص کسی روزہ دار کو افطار کرائے اسے بھی اس روزہ دار کے برابر اجر ملتا ہے۔  (اصول کافی ،ج/۴ص/۶۸ح/۱)

   خ     مستحبی روزہ سے بہتر:

          امام موسیٰ کاظم علیہ السلام نے فرمایا:

          تمھارااپنے روزہ دار بھائی کو افطار کرانا تمھارے (مستحبی )روزے سے بہتر ہے۔(کافی ،ج/۴ص/۶۸ ح/۲)

   خ     روزہ کھانے کا نتیجہ:

          حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام نے فرمایا:

          جو شخص ( بلا کسی عذر کے ) رمضان کا ایک روزہ کھا جائے ( نہ رکھے) اس کے جسم سے ایمان کی روح نکل جاتی ہے ۔

     ( وسائل الشیعہ ،ج/۷ص/۱۸۱ح/۴۔۵ ، من لا یحضر ہ الفقیہ ج/۲ص/۷۳ ح/ ۹ )

   خ     رمضان اللہ کا مہینہ:

           امیر المومنین حضرت علی ابن ابی طالب علیہ السلام نے فرمایا:

          رمضان المبارک اللہ کا مہینہ ، شعبان رسول خدا کا مہینہ اور رجب میرا مہینہ ہے ۔

                             ( وسائل الشیعہ ج/۷ص/۳۶۶ح/۲۳۸ )

   خ     رحمت کا مہینہ:

          حضرت رسول اکرم  نے فرمایا:

          رمضان وہ مہینہ ہے جس کی ابتداء رحمت ، جس کا درمیان مغفرت اور جس کا آخری حصہ جہنم کی آگ سے آزادی و نجات ( کا پروانہ )ہے۔  ( بحار الانوار ،ج/۹۳ ص / ۳۴۲)

   خ     ماہ رمضان کی فضیلت:

          حضرت رسول اکرم  نے فرمایا:

          بلا شبہ آسمان کے دروازے ماہ رمضان کی پہلی شب میں کھول دیئے جاتے ہیں اور اس ماہ کی آخری شب تک بند نہیں کئے جاتے۔    ( بحار الانوار ،ج/۹۳ ص/۳۴۴ )

   خ     ماہ رمضان کی اہمیت:

          حضرت رسول اکرم  نے فرمایا:

          اگر بندہ یہ جان لیتا کہ ماہ مبارک رمضان کی کیا خصوصیت ہے تو وہ یہی چاہتا کہ پورا سال رمضان رہے ۔  

                             ( بحار الانوار ،ج/۹۳ص/۳۴۶)

   خ     رمضان میں قرآن کی تلاوت:

          حضرت امام علی رضا علیہ السلام نے فرمایا:

          جس شخص نے ماہ رمضان میں قرآن کریم کی ایک آیت کی تلاوت کی ( اس کا ثواب اتنا ہے )گویا اس نے دوسرے مہینوں میں پورا قرآن ختم کیا ۔

   خ     شب قدر:

          حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام نے فرمایا:

          ( اعمال کے حساب و کتاب کے لئے ) سال کا آغاز شب قدر سے ہوتا ہے اس میں اس سال سے لے کر آئندہ سال تک کے مقدرات لکھے جاتے ہیں ۔

                              ( وسائل الشیعہ ،ج/۷ ص/۲۵۸ح/۸)

   خ     شب قدر کی فضیلت:

          حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام سے سوال کیا گیا :

          شب قدر ہزار مہینوں سے بہتر کیسے ہے ؟ حضرت نے فرمایا : اس شب میں کیا جانے والا کوئی ایک نیک عمل ایسے ہزار مہینوں میں کئے جانے والے عمل سے بہتر ہے جن میں شب قدر نہ ہو۔( وسائل الشیعہ ،ج/۷ص/۲۵۶ح/۲)

   خ     لوگوں کے امور اور شب قدر

          حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام نے فرمایا:

          لوگوں کے امور کا جائزہ انیسویں شب کو ان کی منظوری اکیسویں شب کو اور ان کا نفاذ تیئیسویں شب کو عمل میں آتا ہے۔   (وسائل الشیعہ ج/۷ص/۲۵۹ )

   خ     شب قدر میں بیدار رہنا:

          فضل ابن یسار کہتے ہیں کہ :

          امام محمد باقر علیہ السلام رمضان المبارک کی اکیسویں اور تیئیسویں شب کو دعا و مناجات و غیرہ میں مشغول رہتے تھے یہاں تک کہ رات ختم ہوجاتی تھی پس جب صبح نمودار ہوتی تھی تو صبح کی نماز اداکرتے تھے ۔

                             ( وسائل الشیعہ ،ج/ ۷ ص/ ۲۶۰ ح/۴)

   خ     زکواة فطرہ:

          حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام نے فرمایا:

          بلا شبہ روزہ کی تکمیل زکات یعنی فطرہ کی ادائیگی سے ہوتی ہے جیسے نماز کی تکمیل پیغمبر اکرم  پر صلوٰة بھیجنے سے ہوتی ہے ۔

                             ( وسائل اشیعہ ،ج/۶ص/۲۲۱ح/۵)

 

  1458
  0
  0
امتیاز شما به این مطلب ؟

latest article

      نماز میں تجوید کی رعایت کرنا کس قدر واجب هے؟
      کیا ائمه کی قبروں پر اس حالت میں نماز پڑھنا صحیح ھے که ...
      اسلامی قوانین اور کتاب خدامعصوم کی تفسیر سے
      افسانہ آیات شیطانی یا افسانہ ”غرانیق“ کیا ھے؟
      تعدّد ازواج
      امامت قرآن و حدیث کی روشنی میں
      حدیث ثقلین اہلِ سنت کی نظر میں
      چالیس حدیثیں
      چالیس حدیث والدین کےبارے میں
      راویان حدیث

latest article

      نماز میں تجوید کی رعایت کرنا کس قدر واجب هے؟
      کیا ائمه کی قبروں پر اس حالت میں نماز پڑھنا صحیح ھے که ...
      اسلامی قوانین اور کتاب خدامعصوم کی تفسیر سے
      افسانہ آیات شیطانی یا افسانہ ”غرانیق“ کیا ھے؟
      تعدّد ازواج
      امامت قرآن و حدیث کی روشنی میں
      حدیث ثقلین اہلِ سنت کی نظر میں
      چالیس حدیثیں
      چالیس حدیث والدین کےبارے میں
      راویان حدیث

 
user comment