اردو
Friday 14th of August 2020
  12
  0
  0

اگر کوئی شخص ماہ مبارک رمضان میں روزہ توڑنے کی نیت کر لے لیکن کچھ کھائے پیئے نہیں تو اس کے روزے کا کیا حکم ہے؟

جو شخص ماہ مبارک رمضان میں روزہ توڑنے کی نیت کر لے لیکن کچھ کھانے پینے سے پہلے اپنے ارادے منصرف ہو جائے تو اس کے روزے کا کیا حکم ہے؟
اگر کوئی شخص ماہ مبارک رمضان میں روزہ توڑنے کی نیت کر لے لیکن کچھ کھائے پیئے نہیں تو اس کے روزے کا کیا حکم ہے؟

جو شخص ماہ مبارک رمضان میں روزہ توڑنے کی نیت کر لے لیکن کچھ کھانے پینے سے پہلے اپنے ارادے منصرف ہو جائے تو اس کے روزے کا کیا حکم ہے؟

جواب:
الف: ایسے شخص کا روزہ باطل ہے: (آیات عظام وحید خراسانی، صافی گلپائگانی، بھجت، تبریزی، مکارم شیرازی، نوری ہمدانی)۔
ب: روزہ باطل نہیں ہے:( امام خمینی، فاضل لنکرانی)
ج: فاقہ کرے اور احتیاط واجب کی بنا پر اس کی قضا کرے:( رہبر انقلاب، آقائے سیستانی)
وضاحت: اگر نیت کرے کہ روزہ نہیں رکھے گا اگر چہ کچھ کھایا پیا نہ ہو تو تمام مراجع کے مطابق اس کا روزہ باطل ہے۔
آیت اللہ سیستانی: اگر دوبارہ روزہ کی نیت کر لے تو احتیاط واجب یہ ہے کہ روزہ مکمل کرے اور بعد میں اس کی قضا کرے۔

(توضیح المسائل مراجع، مسئلہ ۱۵۷۰، استفتائات رہبر، س۷۵۸)


source : abna
  12
  0
  0
امتیاز شما به این مطلب ؟

latest article

    قرآن مجید اور روایتوں میں، وجوب، حرمت یا استحباب و ...
    شیعہ کب وجود میں آئے؟
    گانا گانا اور سننا حرام کیوں ہے؟
    ہدیہ کے بارے میں چار باتیں
    کیا یا علی مدد کہنا جائز ہے
    باوجودیکہ دین اسلام تنہا برحق دین ہے، تو قرآن مجید میں ...
    روزے کی تعریف اور اس کی قسمیں
    واجب الوجود، کس دلیل سے تمام کمالات کا مالک ھونا ...
    حقیقت و واقعیت کے درمیان فرق کیا ہے؟ کیا یہ دوثابت ...
    کیا یہ روایت صحیح ہے کہ امام حسن(ع) کی ولادت اور امام ...

 
user comment