اردو
Sunday 27th of November 2022
0
نفر 0

المؤمن مرآۃ المؤمن

المؤمن مرآۃ المؤمن

مولائے کائنات حضرت علی علیہ السلام فرماتے ہیں : المؤمن مرآۃ المؤمن ۔ مؤمن ، مؤمن کے لئے آئینہ ہے۔

• آئینہ: کسی کی عیب کو اس وقت بیان کرتا جب وہ خود گرد و غبارسے پاک و صاف ہو.

• آئینہ: جو کچھ بیان کرے گا وہ سچ اور حقیقت پر مبنی ہوگا اس کو کسی سے کوئی غرض نہیں .

• آئینہ: عیب کو بہت ہی سنجیدگی اورخاموشی سے بیان کرتا ہے.

• آئینہ: فقط عیب ہی کو روشن نہیں کرتا بلکہ خوبصورتی اور اچھائی کو بھی بیان کرتا ہے۔

• آئینہ: کبھی بھی عیب کو بڑھا چڑھا کر بیان نہیں کرتا ،بلکہ جس مقدار میں عیب ہوتا ہے اسی حد تک بیان کرتا ہے.

• آئینہ: عیب بیان کرنے میں مقام و منزلت کا ہرگز خیال نہیں کرتا بلکہ اس کی نظر میں سب برابر ہیں.

• آئینہ: اچھائی یا برائی بیان کرنے میں کسی سے کوئی توقع یا امید نہیں رکھتا.

• آئینہ: فقط انسان کے ظاہری عیب کو بیان کرتا ہے اندرونی عیب کی تلاش میں نہیں رہتا.

• آئینہ: عیب کو خود اسی کے سامنے بیان کرتا ہے دوسروں سے ہرگز بیان نہیں کرتا.

• آئینہ: جس وقت میرے عیب کو بیان کرتا ہے توہم ہرگز اسے توڑ نہیں دیتے بلکہ اپنے عیب کو دور کرتے ہیں.

• آئینہ: ٹوٹ جانے کے بعد بھی اپنی ذمہ داری کو سمجھتے ہوئے اپنا کام انجام دیتا ہے.

مھدی مشن ڈاٹ کام

 


source : www.tebyan.net
0
0% (نفر 0)
 
نظر شما در مورد این مطلب ؟
 
امتیاز شما به این مطلب ؟
اشتراک گذاری در شبکه های اجتماعی:

latest article

توحید
رجعت
شیعہ اہل بیت علیہم السلام کی نظر میں
خدا کی معرفت اور پہچان
توكل علم توحيد كا لازمه
خدا کي وحدانیت کا اثبات
یہود و نصاریٰ کے ساتھ سیاسی تعلقات قرآن کریم کی ...
معاد اور تخلیق کا فلسفہ
علم ایک لازوال دولت ہے
خدا کی نظرمیں قدرو منزلت کا معیار

 
user comment