اردو
Tuesday 7th of July 2020
  899
  0
  0

تیونس میں برقی مصلیٰ ایجاد ہوا

تیونس کے ایک باشندے نے پہلی بار برقی جائے نماز ایجاد کی ہے جو رکعات نماز اور سجدوں کا حساب محفوظ کرتی ہے اور ہر رکعت میں ایک بتی جلاکر پڑھی ہوئی رکعتوں کی تعداد بتا دیتی ہے اور نماز کی رکعتوں یا سجدوں کی تعداد میں شک کرنے والے نمازیوں کو صحیح تعداد یاد رکھنے میں مدد فراہم کرتی ہے۔

اہل البیت (ع) نیوز ایجنسی ـ ابنا ـ کی رپورٹ کے مطابق تیونس کے روزنامے "الصباح" نے رپورٹ دی ہے کہ تیونس کے باشندی "حمادی الابیض" نے الیکٹرانک جائے نماز ایجاد کی ہے جو نماز کی رکعتیں اور ہر رکعت کے سجدوں کی تعداد محفوظ کرتی ہے اور ہر رکعت میں اس جائے نماز کی ایک بتی جل جاتی ہے اور نمازی کو تعداد بتاتی ہے۔ 
گو کہ نماز کی حالت میں سجدوں اور رکعتوں کی تعداد میں شک کرکے کئی بار نماز پڑھنے پر مجبور ہونے والے افراد کے لئے یہ ایک اہم خوشخبری ہے مگر علماء نے اس حوالے سے ملا جلا رد عمل ظاہر کیا ہے۔  
تیونس کے مفتی اعظم شیخ مصطفی البطیخ نے رد عمل ظاہر کرتے ہوئے اس جائے نماز کے بارے میں کہا: میرے خیال میں اس الیکٹرانک جائے نماز کا استعمال جائز ہے اور اس کو بغیر کسی رکاوٹ کے استعمال کیا جاسکتا ہے تا ہم اس جائے نماز کی ایجاد تیونس اور دیگر عرب اور اسلامی ممالک کے علماء اور دینی شخصیات کے مختلف رد عمل کا باعث بن سکتا ہے۔ 
دریں اثناء حمادی الابیض نے اپنی ایجاد کے بارے میں کہا کہ اس جائے نماز کی ایجاد سے ان کا مقصد یہ تھا کہ بعض نماز گزار بعض اوقات نماز کی رکعتوں، اور سجدوں میں شک و تردد سے دوچار ہوتے ہیں اور تعداد کو بھول جاتے ہیں کہ وہ مثلاً نماز کی کونسی رکعت میں ہے یا یہ کہ وہ کتنے سجدے بجا لاچکا ہے چنانچہ میں نے یہ جائے نماز تیار کردی جو اس شک سے بچنے میں نمازگزاروں کی مدد کرتی ہے۔ 
تیونس میں اس جائے نماز کی قیمت 48 دینار (7/24 یورو) ہے. 
قابل ذکر ہے کہ سنہ 2008 میں بھی ایک ترک باشندے "اوزنک سونر Ozenc Soner" نے مشابہ جائے نماز تیار کی تھی جو برقی دھاگوں سے تیار ہوئی تھی اور قبلہ یابی میں نماز گزار کو مدد پہنچاتی تھی اور جب جائے نماز زمین پر بچھائی جاتی قبلہ رخ ہوتے ہی تو روشن ہوجاتی اور جب بالکل رو بہ قبلہ ہوتی تو بہت زیادہ نورانی ہوجاتی تھی۔
اردن کے ایک باشندے «فؤاد ابو راغب» نے سنہ 2003 میں جائے نماز میں سجدے کے مقام پر ایک شفاف اسکرین نصب کیا جو نماز کی رکعتوں اور سجدوں کی تعداد نماز گزار کو بتادیا کرتی تھی. 
ایران میں بھی برسوں قبل ایک شخص نے "مُہرِ امین" کے نام سے ایک مہر ایجاد کی تھی جو اس زمانے میں بھی استعمال ہورہی ہے۔ یہ مہر، نماز اور سجدوں کی رکعت کو میکانیکی روش سے ثبت کرکے نماز گزار کو شک و تردد سے بچادیتی ہے۔ یہ مہر مراجع تقلید کی طرف سے بھی قابل تأئید ٹہری ہے۔


source : http://abna.ir/data.asp?lang=6&Id=191557
  899
  0
  0
امتیاز شما به این مطلب ؟

latest article

    ہندوستان؛ سرینگر میں نائجیریا قتل عام کے خلاف احتجاجی ...
    داعش نے چار عراقیوں کو زندہ زندہ جلا دیا
    القاعدہ کا دوسرا نام داعش ہے/ داعش کو وجود میں لانے ...
    ایک دہشتگرد گروہ نے دوسرے دہشتگرد گروہ کو ناجائز قرار ...
    مشرقی افغانستان: داعش کے اٹھارہ عناصرہلاک
    سعودی عرب مدینے کی سات مساجد کو منہدم کرنے کا منصوبہ ...
    ہندوستان کے زیر انتظام کشمیر میں ماہ اگست میں 31 افراد ...
    قومی ایکشن پلان کے باوجود دہشتگردی کی وارداتیں باعث ...
    آل سعود کی نااہلی سے منیٰ حاجیوں کی قتلگاہ بنا
    یمن؛ سعودی عرب کی تازہ جارحیت میں 36 افراد شہید

 
user comment