اردو
Saturday 7th of December 2019
  382
  0
  0

کیا آسمان و زمین کی خلقت میں مقدم و مؤخر کے بارے میں سوره بقره کی آیت نمبر ۲۹ اور سوره نازعات کی آیت نمبر ۳۰ کے درمیان تعارض پایا جاتا ھے؟

آسمانوں اور زمین کی خلقت میں سے کس کی خلقت پھلے انجام پائی ھے؟ اور سوره بقره کی آیت نمبر ۲۹ میں ارشاد ھوا ھے: “وه خدا وه ھے جس نے زمین کے تمام ذخیروں (نعمتوں) کو تم ھی لوگوں کے لئے پیدا کیا ھے۔ اس کے بعد اس نے آسمان کا رخ کیا تو سات محکم آسمان بنادئے اور وه ھر شے کا جاننے والا ھے۔”
سوره نازعات کی آیت نمبر ۳۰ میں ارشاد ھوا ھے: “اس کے بعد زمین کا فرش بچھایا ھے۔ ”مذکوره آیات میں مشاھده ھوتا ھے که خداوند متعال ایک بار ارشاد فرماتا ھے که پھلے زمین پیدا کی گئی اور دوسری بار آسمان کی پیدائش کو مقدم قرار دیتا ھے۔
کیا مذکوره آیتیں خدا کی طرف سے محمد (ص) پر نازل ھوئی ھیں جن میں کائنات کی خلقت کے بارے میں دو مختلف دعویٰ کئے گئے ھیں؟

  382
  0
  0
امتیاز شما به این مطلب ؟

latest article

    امام علی علیه السلام کی امامت اور خلافت کو کیسے ثابت ...
    مسئلہ فلسطین کے بنیادی فقہی اصول امام خامنہ ای کی نگاہ ...
    سیرت رسول اکرم (ص) میں انسانی عطوفت اور مہربانی کے ...
    ہم امریکہ کی عمر کے آخری ایام سے گذر رہے ہیں: چالمرز ...
    شفاعت کی وضاحت کیجئے؟
    دین اسلام کی خاتمیت کی حقیقت کیا ھے۔ اور جناب سروش کے ...
    کیا تقلید کے ذریعھ اسلام قبول کرنا، خداوند متعال قبول ...
    امام کے معصوم ھونے کی کیا ضرورت ھے اور امام کا معصوم ...
    کیا پیغمبر اکرم (صل الله علیه وآله وسلم) کے تمام الفاظ ...
    عورتوں کے مساجد میں نماز پڑھنے کے بارے میں اسلام کا ...

 
user comment