اردو
Wednesday 16th of June 2021
273
0
نفر 0
0% این مطلب را پسندیده اند

آہنی مرد، امام موسی صدر

5اگست 2008ء کو نو تشکیل لبنانی پارلیمانی کمیٹی نے اکثرآرائے سے حزب اللہ کی اسرائیلی مظالم کے خلاف مزاحمت کو قانونی حیثیت سے تسلیم کرلیا اور حزب اللہ کی جوانمر
آہنی مرد، امام موسی صدر

اگست 2008ء کو نو تشکیل لبنانی پارلیمانی کمیٹی نے اکثرآرائے سے حزب اللہ کی اسرائیلی مظالم کے خلاف مزاحمت کو قانونی حیثیت سے تسلیم کرلیا اور حزب اللہ کی جوانمردی و فداکاری کی قدردانی کرتے ہوئے اپنی حمایت کا یقین دلایا ،یہ خبربڑی اہمیت کی حامل ہے .امریکہ اور اسرائیل عرصۂ دراز سے سیاسی ،اقتصادی اورفوجی دباؤ ڈال کر حزب اللہ کو غیر مسلح کرنے کی کوششیں کرتے آئے ہیں اور اس کے لئے قطیر رقم بھی خرچ کر چکے ہیں علاوہ ازیں حکومت لبنان و شام اور ایران پر بہت زیادہ دباؤ بھی ڈال رہے ہیں ،نہ تو ایران و شام جھکنے کے لئے تیار ہیں اور نہ ہی لبنانی حکومت نے گھٹنے ٹیکے ،لبنان میں پچھلے دنوں سیاسی عدم استحکام اور 2006میں امریکہ کی شہ پر اسرائیل کا حزب اللہ پر حملہ اسی سازش کا حصہ تھا،جب کہ حزب اللہ نے 36دن تک اسرائیل کا مردانہ وار مقابلہ کرکے امریکہ کے سارے ارمانوں پر پانی پھیر دیا،اگرچہ حکومت نے ایسا قدم صرف اس لئے اٹھایا تاکہ اسرائیل کی جارحیت کا سد باب کیا جا سکے اور یہ کام حزب اللہ سے بہتر کوئی نہیں کرسکتا، حکومت لبنان کے اس فیصلے سے امریکہ کی اُس حکمت عملی کو بھی دھچکا لگا جس کی رو سے امریکہ حزب اللہ کو دہشت گردوں کی صف میں رکھنا چاہتا ہے اگر چہ یہ حکمت عملی تو اسی وقت ناکام ہوچکی تھی جب 36دن تک جاری رہنے والی جنگ میں حزب اللہ نے اسرائیل کو اپنی طاقت کا احساس کرایا تھا، جس سے دنیا بھر کی عوام میں حزب اللہ کی مقبولیت کا گراف بہت اوپر پہنچ گیا تھا. امریکہ اور اسرائیل اگر جمہوریت کی عینک سے حزب اللہ اور اس کے قیام کے عوامل و اسباب کودیکھنے کی کوشش کرتے اور حزب اللہ کے مقصد قیام پر نگاہ ڈال لیتے تو پھر نہ حزب اللہ کو دہشت گردوں کی صف میں کھڑا کرنے کی کوشش کرتے اور نہ ہی غیر مسلح کراتے اور ان کی سمجھ میں یہ بھی آجاتا کہ حزب اللہ! مغرور و متکبر طاقتوں کے وحشیانہ مظالم پر مظلوموں ،خستہ حالوں اور دبے کچلے عوام کے رد عمل کا نام ہے .بہر حال جب یہ خبر Etv Urduسے سنی تو فوراً امام موسیٰ صدر یاد آئے اور کیوں نہ آتے لبنان میں حزب اللہ یا اس کے جانبازوں کی فداکاریوں میں امام موسیٰ صدر کا اہم کردار ہے ،لبنانی عوام کو اپنے پیروں پر کھڑا کرنا امام موسیٰ صدر کا وہ عظیم کارنامہ ہے جو رہتی دنیا تک یاد رکھا جائے گا .جب امام موسیٰ صدر جنوبی لبنان میں تشریف لائے تو وہاں کی سماجی حالت بہت ہی کرب ناک تھی ،لبنان کو فرانس کے چنگل سے آزاد ہوئے 16ہی برس گزرے تھے ،ابھی تو فرانس کے ذریعہ پھیلائی گئی تباہی کے آثار بھی محو نہ ہوئے تھے ،اسی درمیان فتنۂ اسرائیل بھی وجود میں آچکا تھا. لبنان پر فرانس نے اسی طرح قبضہ کر رکھا تھا جیسے برطانیہ نے ہندوستان پر ،جس طرح ہندوستان میں غیرملکی آریائیوں نے ہندوستان کے اصل باشندوں کو سماج کے سب سے نیچے طبقے میں ڈھکیل دیا تھااسی طرح فرانس نے لبنان کے اکثریتی فرقے شیعہ کو سماج میں سب سے نیچے پائدان پر پہنچادیا تھا ،فرانس کے ذریعہ بنائے گئے ایک ہی قانون سے قارئین کو اس کا اندازہ بخوبی ہوجائے گا . 1932ء میں فرانس نے لبنان میں یہ قانون پاس کیا جس کی رو سے لبنان میں شیعوں کو 20% ، سنیوں کو 30% اور عیسائیوں کو 50%مراعات دی جانے لگیں، اگر پارلیمنٹ میں 100ممبر ہوتے تو 20شیعہ، 30سنی ،اور50 عیسائی اس کے علاوہ صدر، وزارت دفاع و اقتصاد جیسے اہم قلمدان بھی عیسائیوں کے ہاتھ میں تھے جب کہ آبادی کا تناسب اس کے برعکس تھا یعنی شیعوں کی تعداد 55%سنیوں کی تعداد 25%اور عیسائیوں کی تعداد 20%تھی . 1947ئ میں لبنان کے آزاد خیال وزیر تعلیم و ثقافت ’’ابو حیدر‘‘ نے پہلی بار اعلان کیا کہ یونیورسٹی میں داخلے فرانس کے قائم کردہ قانون کے تناسب سے نہیں بلکہ صلاحیت کے معیار پر ہوں گے،اس اعلان کے بعد یونیورسٹی میں پہلا ٹیسٹ ٹیچروں کی ٹریننگ کورس کے لئے منعقد کیاگیا جس میں ہزاروں امیدواروں نے شرکت کی ،اتنی بڑی تعداد سے صرف 27امیدوار منتخب ہونے تھے ،جب اس ٹیسٹ کا نتیجہ سامنے آیا تو میرٹ کے اعتبار سے 1سے 21تک شیعہ ،22سے 24تک غیر شیعہ اور 25سے 27تک شیعہ امیدوار کامیاب ہوئے یعنی 27میں سے 24شیعہ اور 3غیر شیعہ،اس نتیجے کو دیکھ کر غیر شیعوں نے آسمان سر پر اٹھالیا کہ اگر ایسا ہی رہا تو لبنان یونیورسٹی شیعوں سے بھر جائے گی ،چنانچہ وزیر تعلیم پر اتنا دباؤ پڑا کہ اُسے مجبوراً اس نتیجے کو کالعدم قرار دینا پڑا اور اُسی پرانے قانون کے اعتبار سے انتخاب عمل میں آیا جس میں بجائے 24کے 5 شیعہ امیدوار منتخب کئے گئے ،لہٰذا طبیعی تھا کہ جو قوم 1932ئ سے اس قسم کی ناانصافیاں اور زیادتیاں جھیل رہی ہو وہ پسماندہ ترین قوم میں تبدیل ہوجائے اور ایسا ہی ہوا ، جنوبی لبنان میں نہ کوئی مدرسہ تھا نہ ہسپتال ،نہ پختہ سڑکیں ،نہ بجلی اور پانی کی سہولت ،جنوبی لبنان کے بعض علاقوں جیسے ’’بعلبک‘‘اور ’’عکار‘‘ کی حالت تو اتنی خراب ہوگئی تھی کہ شیعوں کی سالانہ آمدنی فی کس 75لیرہ ہی رہ گئی تھی جب کہ لبنان کے عیسائی نشین علاقوں میں یہ شرح بڑھ کر کئی ہزار لیرہ فی کس ہوگئی تھی ،ان حالات سے دوچار جنوبی لبنان کے باشندوں کے لئے ایک وقت کی روٹی سنگین مسئلہ تھی ،چہ جائیکہ اعلیٰ تعلیم و تربیت یا علاج و معالجہ یا دیگر ضروریات زندگی ،جو میسر بھی نہ تھیں. لبنان میںمتحارب گروپوں کی تعداد 72سے تجاوز کرگئی تھی جوایک دوسرے سے نبر د آزما رہتے تھے ان گروپوں کو کسی نہ کسی ملک کے سفارت خانے کی حمایت حاصل ہوتی تھی اور لڑنے کے لئے افراد کی سخت ضرورت، لہٰذا یہ گروپ ان خستہ حال شیعوں کو اپنے یہاں بھرتی کرلیتے تھے ،اگر لڑتے ہوئے یہ مرجاتے تو کوئی بات نہیں بیوہ اور یتیموں پر مصیبت کا بوجھ اضافی ہوجاتاتھا اور اگر بچ گئے تو ایک دن کی مزدوری لے کر گھر واپس آجاتے تھے ،ہرگروپ مرنے والوں کے نام پر اپنے ملک سے اچھی رقم معاوضے کی حاصل کرتا تھا مگر ان بے چاروں کواس رقم میں سے کچھ بھی نہیں ملتا تھا، ابھی تو یہ لوگ ایک وقت کی روٹی کے لئے اس طرح جوجھ ہی رہے تھےاور اس کوحاصل کرنے کے لئے جان جوکھم میں ڈالے ہوئے تھے کہ1948ء میں امریکہ اور روس کی نیرنگیوں کے باعث ارض فلسطین پر اسرائیل کا قبضہ ہوگیا اسرائیلی وحشی، فلسطینیوں کے ساتھ ساتھ جنوبی لبنان کے شیعوں پر بھی مظالم کے پہاڑ توڑنے لگے ،ایک طرف تو اقتصادی مار، دوسری جانب اسرائیل کی گولیاں اور میزائیل ،اس طرح ان لوگوں کی زندگی اجیرن بن گئی اور نوبت یہاں تک پہنچی کہ اب ان کے پاس سر ڈھانپنے کا بھی ٹھکانا نہیں رہا صرف شہر صور ہی کو لے لیجئے یہ جنوبی لبنان کے بڑے شہروں میں شمار ہوتا ہے اور شیعہ نشین ہے اسرائیل نے 7روزہ جنگ میں 75% منہدم کرڈالا اس شہر کی 4لاکھ آبادی سے 3لاکھ آبادی بے گھر ہوکر در بدر کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور ہوگئی. اسرائیلیوں کی غرور و نخوت کا یہ عالم تھا کہ 1972ئ میں اسرائیلی کمانڈوز کا ایک گروہ جنوبی لبنان میں داخل ہوا ،جنوبی لبنان کے چند غریب کسانوں نے اِن کے مظالم پر احتجاج کیا تو اسرائیلی کمانڈرنے تحقیر آمیز لہجے میں کہا کہ : ہمیں لبنان پر قبضہ کرنے کے لئے فوج بھیجنے کی ضرورت نہیں ہے ،اپنی لڑکیاں بھیج دیں گے وہ جس علاقہ پر چاہیں گی قبضہ کرلیں گی،اس واقعہ سے جنوبی لبنان کے شیعوں کی بے چارگی و لاچاری کا اندازہ لگایا جاسکتا ہے ،اُس وقت اقوام عالم کے کسی بھی ملک نے ان ستم دیدہ افراد کی حمایت میں آواز نہیں اٹھائی تھی .خدا بھلا کرے عراقی خاندانِ صدر کے چشم و چراغ اور آیت اللہ سید محمد باقر الصدر (رح) کے چچا زاد بھائی امام موسیٰ صدر کا جنہوں نے جنوبی لبنان کے عوام کے اس درد اور کرب کو محسوس کیا ،امام موسیٰ صدر اُس وقت ایران کے مقدس شہر قم میں مقیم تھے اور آپ کے والد گرامی عالم تشیع کے مرجع تھے . امام موسیٰ صدر 4مارچ1929ء میں پیدا ہوئے اور حوزۂ علمیہ قم و نجف اور تہران یونیورسٹی سے تعلیم حاصل کی ،آیت اللہ ڈاکٹر بہشتی اور آیت اللہ موسوی اردبیلی آپ کے ہم کلاس تھے .ایران میں اسلامی افکار پر مبنی مجلہ سب سے پہلے آپ ہی نے ’’مکتب اسلام‘‘ کے نام سے نشر کیا جو قم سے آج تک نشر ہو رہاہے . آپ نے طالب علمی کے زمانہ میں لبنان کا سفر پہلی بار کیا تھا اُس وقت آپ کی ملاقات آیت اللہ شرف الدین موسوی سے ہوئی تھی ،آپ لبنان میں شیعوں کے رہبر تھے اور آپ کا تعلق بھی صدر خاندان سے تھا ،شرف الدین موسوی صاحب نے امام موسیٰ صدر کا والہانہ استقبال کیا اور اپنے بعد لبنانی شیعوں کا رہبر معین کردیا ،چند سال بعد آیت اللہ سید عبدالحسین شرف الدین موسوی نے داعی اجل کو لبیک کہا ،لبنانی شیعوں نے وصیت کے مطابق امام موسیٰ صدر کو اپنے رہبر کے طور پر تسلیم کرلیا اور ایران سے لبنان آنے کی دعوت دی.آپ 1959ء میں ایران سے جنوبی لبنان کے شہر صورتشریف لے آئے اور یہاں مسجد کی امامت کے ساتھ ساتھ لوگوں میں ناامیدی سے نجات دلا کر زندہ رہنے کی آرزو کا نیا جوش و ولولہ کوٹ کوٹ کر بھر دیا ،اُدھر ایرانی اسکالر ڈاکٹرشہید مصطفی چمران (رح) بھی یہاں پہنچ گئے اور آپ کے قوت بازو بن گئے دونوں نے مل کر جنوبی لبنان کے باشندوں کی حالت سدھارنے کے لئے رات دن ایک کردیئے،امام موسیٰ صدر کا حکومت لبنان سے شیعوں کے حق میں یہ مطالبہ بڑی اہمیت کا حامل ہے جو انہوں نے شیعوں کی نمائندہ جماعت کی تاسیس کے لئے کیا تھا .لبنان میں تمام فرقوں اور طائفوں کی نمائندہ جماعتیں تھیں جو اپنے اپنے حقوق و مفاد کی نگہبانی کیا کرتی تھیں لیکن شیعوں کی ایسی ایک بھی تنظیم نہ تھی، اگرچہ اس مطالبہ کی لبنان میں پُرزور مخالفت کی گئی مگر امام موسیٰ صدر نے ہمت نہ ہاری اور آخر کار 1969ء میں لبنانی پارلمنٹ میں آپ نے’’ مجلس اعلای اسلامی شیعیان‘‘ نام کی تنظیم کو قانونی حیثیت سے پاس کرالیا یہ تنظیم لبنان میں شیعوں کے حقوق کی حفاظت کرتی تھی ،اس تنظیم کے رئیس امام موسیٰ صدر ہی قرار پائے ،امام موسیٰ صدر نے ایک سال بعد حکومت لبنان سے شیعوں کی امداد اور ان کی حمایت کے لئے دباؤ ڈالنا شروع کردیاتاکہ اسرائیلی وحشیوں کے شر سے جنوبی لبنان کے باشندے کسی حد تک محفوظ رہ سکیں اور ان کے لئے رفاہی و تعلیمی فعالیت کی جاسکے اور اس طرح لبنان کی ترقی کی دوڑ میں یہ لوگ بھی شامل ہوجائیں،حکومت لبنان نے اس ذمہ داری ﴿اسرائیلیوں سے لبنانی شیعوں کی حفاظت اور ترقی کی دوڑ میں انہیں شامل کرنے﴾کو قبول کرنے سے انکار کردیا،حکومت کے اس فیصلے کے خلاف امام موسیٰ صدر نے لبنانی شیعوں کے ساتھ 1970میں بیروت میں زبردست احتجاج کیا اور تمام لبنان سے جوق در جوق شیعہ بیروت پہنچ گئے اور دیکھتے ہی دیکھتے بیروت ایئر پورٹ پر دسیوں ہزار احتجاجیوں کا قبضہ ہوگیا جس سے لبنان کا رابطہ پوری دنیا سے منقطع ہوگیا،حکومت لبنان نے مجبور ہوکر سالانہ30ملین لیرہ کا بجٹ جنوبی لبنان میں ترقیاتی کاموں کے لئے منظور کیا یہ جنوبی لبنا ن کے شیعوں کی پہلی کامیابی تھی،اس کامیابی سے متاثر ہوکر جو شیعہ ادھر اُدھر بھٹک رہے تھے وہ بھی امام موسیٰ صدر کے گرویدہ ہوگئے اور اس طرح آپ کی طاقت میں اور زیادہ اضافہ ہوگیا،چنانچہ امام موسیٰ صدر نے 20نکات پر مشتمل جائز مطالبات کی فہرست حکومت لبنان کو1972میں سونپ دی ،جس میں سے چند مطالبات یہ تھے 1جنوبی لبنان کے ہر شیعہ جوان کو مسلح کردیا جائے تاکہ اسرائیل کی زیادتیوں کا مقابلہ کرسکیں2 جنوبی لبنان میں پناہ گاہ بنائی جائے تاکہ اسرائیل کی بم باری سے محفوظ رہ سکیں3 بیروت سے جنوبی لبنان تک ہائی وے تعمیر کیا جائے جس سے اس علاقے کے لوگ آسانی سے بیروت رفت و آمد کرسکیں4 لیطانی ندی پر ڈیم بنایا جائے یہ لبنان کی سب سے بڑی ندی ہے جو جنوبی لبنان ہوتی ہوئی سمندر میں گرتی ہے،اسرائیل کو چونکہ پانی کی شدید ضرورت ہے اس لئے اسرائیل اس ندی کو منحرف کرکے پانی پر قبضہ کرنا چاہتا تھا5 جنوبی لبنان کے اُن شیعوں کے شناختی کارڈ بنائے جائیں جنہوں نے استعمارِفرانس کے دوران احتجاجاً شناختی کارڈ نہیں لئے تھے اور ابھی تک یہ لوگ بغیر شناختی کارڈ کے تھے جس سے انہیں بے حد دشواریوں کا سامنا تھا،حکومت لبنان نے ان مطالبات کو تسلیم کرنے سے انکار کردیا،1973میں شیعوں کے اس مطالبے نے زور پکڑ لیااور لبنان کی تمام میڈیا میں اس کا اثر نظر آنے لگا،امام موسیٰ صدر نے حکومت لبنان کو ایک ہفتہ کا الٹیمیٹم دے دیا اور شیعہ وزراء سے کہا کہ اگر حکومت نے ایک ہفتے کے اندر ہمارے مطالبات تسلیم نہ کئے تو استعفیٰ دے دینا ،اسی دوران یعنی 1973میں اسرائیل کی عربوں سے جنگ چھڑ گئی لہٰذا امام موسیٰ صدر نے اپنی طاقت اسرائیل کے مقابلے لگاکر مطالبات کو ملتوی کردیا،جنگ تمام ہوگئی لیکن حکومت لبنان کی طرف سے کوئی جواب نہ ملا ،مجبور ہوکر امام موسیٰ صدر نے 17مارچ 1974کو 75ہزار مسلح افراد کو ساتھ لے کر اپنے مطالبات کو تسلیم کرانے کے لئے ایک زبردست احتجاج کیا جس سے لبنان کی عیسائی نواز حکومت پر لرزہ طاری ہوگیا،چونکہ عیسائی نوازحکومت کے پاس 12ہزار فوج تھی اور یہ 75ہزار افرادایسے تھے جو قسم کھاکر گھر سے نکلے تھے کہ جب تک ہمیں معاشرے میں ہمارا حق نہیں ملے گا اپنا آخری خون کا قطرہ بھی بہادیں گے، ڈاکٹرشہیدچمرا ن کے بقول:ابھی ان 75ہزار افراد نے صرف نعرۂ حیدری ہی مل کر بلند کیا تھا کہ لبنانی افواج کے بڑے بڑے کمانڈر اور فوجی اپنے ٹینک تک چھوڑ کر بھاگ کھڑے ہوئے ،لہٰذا حکومت لبنان جو اس موضوع پر گفتگو کے لئے بھی تیار نہیں تھی اُس نے فوراً 7نفرہ کمیٹی بناڈالی تاکہ شیعوں کے مطالبات پر یہ کمیٹی غوروخوص کرکے حکومت کو رپورٹ پیش کرے،اس کمیٹی نے مطالعہ کرکے حکومت کو رپورٹ پیش کردی اور کہا کہ شیعوں کے تمام مطالبات تسلیم کرلئے جائیں کیوں کہ یہ مطالبات بنیادی اور جائز ہیں،کمیٹی کی مثبت رپورٹ آنے کے بعد بھی حکومت لبنان ٹس سے مس نہ ہوئی اور یہ مطالبات مسترد کردیئے،لہٰذاامام موسیٰ صدر نے اس سلسلے کا دوسرا احتجاج جنوبی لبنان کے شہر صور میں برپا کیا جو اس سے بھی زیادہ طاقت ور تھا ،اس احتجاج میں1لاکھ 50ہزارشیعوں نے حصہ لیا ،حالانکہ اس کو کم رنگ کرنے کے لئے حکومتی میڈیا نے بہت سی سازشیں رچیں مگر کامیابی نہ ملی تو پھر شہر صور کی ناکہ بندی کرلی تاکہ شہرصورکے علاوہ دیگر شیعہ اس میں شریک نہ ہوسکیں یا یہ احتجاج جلوس کی شکل میں صور سے باہر نہ آجائے،اس احتجاج سے حکومت لبنان کو شیعوں کی طاقت کا اندازہ ہوگیا .ادھر امام موسیٰ صدر بھی چین سے نہ بیٹھے اور یہ طے کیا کہ اگر حکومت اب بھی ہمارے مطالبات تسلیم نہیں کرتی تو ہم بیروت میں احتجاج کریں گے .امام موسیٰ صدر1973ء میں لبنانی شیعوں کے غصب کئے گئے حقوق کی بازیابی کے لئے ’’حرکت محرومین ‘‘ نام کی تنظیم بنا چکے تھے جس کی رکنیت لوگوں نے بڑے پیمانے پر حاصل کرلی تھی ،اس تنظیم کی فعالیت رفاہی و تعلیمی سرگرمیوں تک محدود تھی لیکن جب اسرائیلی دہشت گردی نے اِن لوگوں کا جینا حرام کردیا تو مجبوراً 1974میں اس تنظیم ﴿حرکت محرومین ﴾ کا مسلح بازو بھی بنانا پڑا جس کا نام ’’امل‘‘ رکھا گیا جو ’’افواج مقاومۃ لبنانیۃ‘‘کا مخفف ہے،اس تنظیم میں شیعہ نوجوانوں کو بھرتی کرکے اپنا دفاع کرنے کی ٹریننگ دی جانے لگی ،امام موسیٰ صدر نے اس تنظیم میں دو ایسی خصوصیتیں پیدا کردی تھیں جو دنیا کی کسی بھی تنظیم میں اُس وقت نہ تھیں،ایک یہ کہ سُپر طاقت صرف خداوند عالم کی ذات ہے اور کوئی نہیں یعنی خدا کے علاوہ کسی سے بھی ڈرنا نہیں ہے،دوسرے یہ کہ’’ امل ‘‘کا کوئی بھی رکن کسی بھی حکومت یا ملک سے رشوت لے کر اپنے بھائیوں اور مقصد کو نقصان نہیں پہنچائے گا ،اس میں بھی آپ 100% کامیاب رہے کیونکہ صرف اسرائیل نے ہی فتح تنظیم کے رہبر ﴿ خالد الحسن﴾ کے بقول: 1950میں ایک فنڈ قائم کیا تھا تاکہ اس فنڈ سے فلسطینی رہنماؤں کو رشوتیں دی جائیں ،فلسطینیوں سے جنگ کے وقت اس فنڈ میں 100ملین ڈالر موجود تھے جو بعض فلسطینی رہبروں میں تقسیم کئے گئے جو فلسطینیوں کی شکست کا باعث ہوا،بہر حال امل تنظیم اسرائیلی دہشت گردی کا مردانہ وار مقابلہ کرتی رہی .اور یہ سلسلہ مزاحمت ِ حزب اللہ کی شکل میں آج تک جاری ہے ، جنوبی لبنان کے نوجوانوں میں جتنا بھی جوش و خروش اپنی ناموس، عزت نفس اور حقوق کو بچانے کے لئے ہے وہ سب امام موسیٰ صدر کی دین ہے ،آپ ہی نے اپنے خون پسینے سے لبنانیوں کی آبیاری کی ہے، وہ شیعہ قوم جو آج لبنان میں سب سے زیادہ عزت کی نگاہ سے دیکھی جاتی ہے وہ صرف امام موسیٰ صدر کی قربانی کی وجہ سے ہے ورنہ شیعوں کی لبنان میں کوئی وقعت نہ تھی. جنوبی لبنان کے باشندوں کی اِن کامیابیوں سے خائف امریکہ ،لبنان اور اسرائیل نے امام موسیٰ صدر کو راستے سے ہٹانے کی ٹھان لی ،اورلیبیا کے جنرل قذافی سے امام موسیٰ صدر کے نظریاتی اختلاف نے مہمیز کا کام کیا کیونکہ جنرل قذافی شیعوں اور سنیوں سے مذہبی اختلاف رکھتے تھے اور خود نہ سنی تھے اور نہ شیعہ،اپنے آپ کو ’’زمین پر اللہ کا خلیفہ‘‘ اور ’’امیرالمومنین‘‘ کہلواتے تھے صرف قرآن کو مانتے تھے سنت کا انکار کرتے تھے اور انہوں نے ایک کتاب ’’سبزکتاب‘‘ کے نام سے بھی لکھی تھی جو ان کے عقائد کی آئینہ دار ہے،لیبیا کے 30جید علماء اہل سنت کو اسی اختلاف کی وجہ سے جنرل قذافی نے جیل میں ڈال رکھاتھا،حتی کہ سنیوں کے نمائندہ اور لبنان کے مفتی کو 10دن جیل میں رکھا تھا،لہٰذا انہوں نے امام موسیٰ صدر کو بھی نہ چھوڑا، امام موسیٰ صدر نے الجزائر کا سفر کیا اور وہاں کی شخصیات بالخصوص ’’بومدین‘‘سے مذاکرات کئے جو بہت کامیاب رہے ،اس کے بعد لبنان کی ’’امل‘‘ تنظیم اور الجزائر کی ’’محاذبرائے آزادی الجزائر‘‘کے درمیان تال میل ہوگیا اور دونوں نے مشترکہ اعلامیہ بھی جاری کیا ،اس کامیابی سے متاثر ہوکر الجزائر میں بعض شخصیات نے امام موسیٰ صدر کو مشورہ دیا کہ جنرل قذافی سے بھی بات چیت کرلیں تاکہ دونوں کے درمیان صلح صفائی ہوجائے ،امام موسیٰ صدر نے ملت کی بھلائی کی خاطر اسے قبول کرلیا ،ادھر ان اشخاص نے لیبیا سے بھی ایسی ہی درخواست کی چنانچہ حکومت لیبیا کا امام موسیٰ صدر کو سرکاری دعوت نامہ بھی موصول ہوگیااور آپ 25اگست 1978کو لیبیا روانہ ہوگئے،31اگست تک قیام کیا لیکن جنرل قذافی سے ملاقات نہ ہوسکی ،امام موسیٰ صدر نے لبنان واپس آنے کا ارادہ کرلیا ،اسی روز یعنی 31اگست 1978 ء کو 2:30بجے دن تک تو آپ اپنی قیام گاہ ﴿ہوٹل ﴾ کے باہر دیکھے گئے لیکن اس کے بعد سے آج تک پتہ ہی نہ چلا کہ کہاں گئے ،زندہ ہیں یا مردہ؟اگلے روز یہ خبر میڈیا کی سرخیوں میں ضرور آئی کہ لیبیا میں امام موسیٰ صدر اغوا کرلئے گئے.


source : abna24
273
0
0% (نفر 0)
 
نظر شما در مورد این مطلب ؟
 
امتیاز شما به این مطلب ؟
اشتراک گذاری در شبکه های اجتماعی:

latest article

قرآن و سنت کی روشنی میں امت اسلامیہ کی بیداری
ساباط و کربلا ایک ہی مقصد کے دونام
شیعہ اثنا عشری عقائد کا مختصر تعارف
رمضان المبارک کے فضائل
غدیر کا ھدف امام کا معین کرنا-2
اقوال حضرت امام علی النقی علیہ السلام
امام جعفر صادق (ع ) کے احادیث
شیر خدا اور شیر رسول جناب حمزہ علیہ السلام
حضرت فاطمہ (س)کی شہادت افسانہ نہیں ہے
جھوٹ

 
user comment