اردو
Monday 26th of September 2022
0
نفر 0

نعت رسول پاک

چلے نہ ايمان اک قدم بھي اگر تيرا ہمسفر نہ ٹھہرے ترا حوالہ ديا نہ جائے تو زندگي معتبر نہ ٹھہرے تُو سايۂ حق پہن کے آيا، ہر اک زمانے پہ تيرا سايہ نظر تري ہر کسي پہ ليکن کسي کي تجھ پر ن
نعت رسول پاک

چلے   نہ  ايمان  اک  قدم  بھي  اگر  تيرا  ہمسفر  نہ  ٹھہرے

ترا   حوالہ   ديا   نہ   جائے   تو   زندگي   معتبر  نہ  ٹھہرے

تُو  سايۂ  حق  پہن  کے  آيا،  ہر  اک  زمانے  پہ  تيرا  سايہ

نظر  تري  ہر  کسي  پہ  ليکن  کسي  کي  تجھ  پر نظر نہ ٹھہرے

لبوں  پہ  اِياکَ  نستعيں  ہے اور اس حقيقت پہ بھي يقيں ہے

اگر  ترے  واسطے  سے  مانگوں  کوئي  دعا  بے  اثر  نہ ٹھہرے

حقيقتِ    بندگي    کي    راہيں   مدينۂ   طيبہ   سے   گزريں

ملے  نہ  اُس  شخص  کو  خدا  بھي  جو تيري دہليز پر نہ ٹھہرے

کھُلي  ہوں  آنکھيں کہ نيند والي ، نہ جائے کوئي بھي سانس خالي

درود  جاري  رہے  لبوں  پر  ،  يہ  سلسلہ  لمحہ  بھر نہ ٹھہرے

ميں تجھ کو چاہوں اور اتنا چاہوں کہ سب کہيں تيرا نقشِ پا ہوں

ترے  نشانِ  قدم  کے  آگے  کوئي  حسيں  رہگزر  نہ  ٹھہرے

يہ    ميرے   آنسو   خراج   ميرا،   مرا   تڑپنا   علاج   ميرا

مرض  مرا  اُس  مقام  پر  ہے  جہاں کوئي چارہ گر نہ ٹھہرے

دکھا  دو  جلوہ  بغور  اُس  کو  ،  بُلا  لو  اک  بار  اور اُس کو

کہيں  مظفر  بھي  شاخ  پر  سوکھ  جانے  والا  ثمر  نہ  ٹھہرے


source : tebyan
0
0% (نفر 0)
 
نظر شما در مورد این مطلب ؟
 
امتیاز شما به این مطلب ؟
اشتراک گذاری در شبکه های اجتماعی:

latest article

اسلام میں وحدت و یگانگی کا تصور
مومن کی شان
دکن میں اردو مرثیہ گوئی کی روایت (حصّہ دوّم )
دکن میں اردو مرثیہ گوئی کی روایت (حصّہ سوّم )
وہابیت کی پیدائش، اس کے اہداف و مقاصد اور نظریات
آیت اللہ العظمٰی صافی گلپایگانی
يورپي معاشرے ميں عورت کے متعلق راۓ
مسلمان ایک جسم کی مانند
معروف اور منکر کے معنی
مثالی معاشرے کی ضرورت و اہمیت:

 
user comment