اردو
Wednesday 16th of June 2021
331
0
نفر 0
0% این مطلب را پسندیده اند

آیت الله ناصری: ماہ مبارک رمضان میں قران کریم کی تلاوت کی عظمت و فوائد

کی رپورٹ کے مطابق اخلاق کے استاد اور حوزہ علمیہ ولی عصر (عج) اصفهان کے سربراہ نے نمازیوں کے درمیان اس بیان کے ساتھ کہ ماہ مبارک رمضان قرآن کے بہار کا مہینہ ہے بیان کیا : ہر چیز کے لئے بہار ہے اور قرآن کریم کا بہار ماہ مبارک ر
آیت الله ناصری: ماہ مبارک رمضان میں قران کریم کی تلاوت کی عظمت و فوائد

کی رپورٹ کے مطابق اخلاق کے استاد اور حوزہ علمیہ ولی عصر (عج) اصفهان کے سربراہ نے نمازیوں کے درمیان اس بیان کے ساتھ کہ ماہ مبارک رمضان قرآن کے بہار کا مہینہ ہے بیان کیا : ہر چیز کے لئے بہار ہے اور قرآن کریم کا بہار ماہ مبارک رمضان ہے ۔

انہوں نے اس اشارہ کے ساتھ کہ قرآن مجید کے ۷۰ بطون ہیں وضاحت کی : قرآن کریم پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ و الہ وسلم کا واقعی معجزہ ہے اور یہ اہل بیت علیہم السلام ہیں جنہوں نے قرآن کریم کو سمجھ سکے اور اس پر عمل کرتے ہیں اور ہم لوگ قرآن کے معنی کو سمجھنے سے عاجز ہیں ، اسلام کے اول زمانہ میں عرب کسی کی ما تحتی کو قبول نہیں کرتے تھے اور فصاحت و بلاغت کے اعتبار سے دنیا میں نمونہ تھے لیکن قرآن کریم کے کلام کی فصاحت و بلاغت اس حد تک تھی کہ وہ لوگ اس کے سامنے اپنا سر تعظیم خم کرتے تھے یقینا ہم لوگ قرآن کریم کے فصاحت و بلاغت و ترکیب کو نہیں سمجھ سکتے ہیں ۔

آیت ‌الله ناصری نے بیان کیا : ہر ایک حرف جسم و روح اور نفس کا مالک ہے اور قرآن کریم میں موجود ۲۸حرف ہر ایک حرف ایک علوم کی بنیاد ہے کہ حضرت آدم علیہ السلام کے زمانہ سے ابھی تک صرف ۲ حرف دنیا میں جاری کیا گیا ہے اور اس کے علاوہ باقی حضرت بقیه ‌الله کے زمانہ میں ظاهر ہوگا اور حضرت کے ظہور کے زمانہ میں توحید کے مراتب بلند ہونگے اور سب کے سب حقیقی بندہ ہونگے اور علوم کی سطح میں ترقی ہوگی اور اس توجہ کے ساتھ کہ ہر علم اور اس کی صفت قرآن میں موجود ہے امام زمانہ اپنے ظہور کے زمانہ میں ان تمام کو بیان کرے نگے ۔

انہوں نے اس بیان کے ساتھ کہ غیبت صغری کی مدت ۷۵ سال تھی حضرت اس زمانہ میں اپنے نواب کے ذریعہ لوگوں سے رابطہ میں رہتے تھے بیان کیا : غیبت کبری کے زمانہ میں اولیاء الھی جو کہ خاص زمانہ اور خاص حالات کے تحت حضرت کی خدمت میں پہوچتے ہیں اس کے علاوہ امام تک کوئی نہیں پہوچ سکتا ۔

حوزہ علمیہ اصفہان میں اخلاق کے استاد نے ماہ مبارک رمضان میں روزہ داری اور دینی اقدار کی طرف اشارہ کرتے ہوئے اظہار کیا : خداوند عالم سے دعا کرنا چاہیئے کہ آنکھ ، زبان اور اعمال کا بھی روزہ ہو بلکہ ایک کلام گناہ کو انجام نہ دیا جائے اور سچے دل اور پاک قلب کے ساتھ خداوند عالم کے پاس حاضر ہوں اور کوئی شخص رمضان المبارک کے مہینہ میں ایک آیہ کی تلاوت کرتا ہے وہ دوسرے مہینہ میں ایک قرآن کریم ختم کرنے کے برابر ہے ۔

انہوں نے کہا : باران کے نزول کے زمانہ میں آذان کے وقت ، قرآن کی تلاوت ، ظہر کے ابتدا اور تیز ہوا چلنے کے وقت خداوند عالم کے رحمت کا دروازہ کھلتا ہے ۔

۔۔۔۔۔۔۔

/169

آیت ‌الله ناصری نے اس تاکید کے ساتھ کہ رمضان المبارک کے مہینہ میں قرآن کریم کی تلاوت کا ثواب قابل ذکر نہیں ہے بیان کیا : حضرت حق کی طرف سے پہلی آیت جو نازل ہوئی ہے بسم ‌الله تھا اور اس آیت کے آثار و عظمت بہت زیادہ ہیں اور انسان کو چاہیئے کہ اپنے تمام امور کو بسم اللہ سے شروع کریں ۔


source : abna
331
0
0% (نفر 0)
 
نظر شما در مورد این مطلب ؟
 
امتیاز شما به این مطلب ؟
اشتراک گذاری در شبکه های اجتماعی:

latest article

قرآن و سنت کی روشنی میں امت اسلامیہ کی بیداری
ساباط و کربلا ایک ہی مقصد کے دونام
شیعہ اثنا عشری عقائد کا مختصر تعارف
رمضان المبارک کے فضائل
غدیر کا ھدف امام کا معین کرنا-2
اقوال حضرت امام علی النقی علیہ السلام
امام جعفر صادق (ع ) کے احادیث
شیر خدا اور شیر رسول جناب حمزہ علیہ السلام
حضرت فاطمہ (س)کی شہادت افسانہ نہیں ہے
جھوٹ

 
user comment