اردو
Friday 17th of September 2021
273
0
نفر 0
0% این مطلب را پسندیده اند

نبي اکرم ص اور حضرت علي کي خلقت

نبي اکرم ص اور حضرت علي کي خلقت

حضرت رسول خدا (ص)نے فرمايا :

<انا وَ عَلِيٌّ مِنْ نُوْرٍ وَاحِدٍ >[1]

ميں اور علي عليہ السلام ايک نور سے ھيں-

اسي طرح حضرت رسول خدا (ص)نے مزيد فرمايا:

< خُلِقتُ انا وَ عَلِيٌّ مِنْ نُوْرٍ وَاحِد> [2]

مجھے اور علي عليہ السلام کو ايک نور سے خلق کيا گيا-

شبلنجي کھتے ھيں کہ حضرت علي ابن ابي طالب عليہ السلام تشريف لائے تو حضرت رسول خدا(ص)نے فرمايا:

<مَرْحَباً بِاَخِيْ وَابْنِ عَمِيّ واَلَّذِيْ خُلِقْتُ انَا وَ ھُو مِنْ نُوْرٍ وَاحِدٍ-> [3]

مرحبا - ميرے بھائي اور چچا زاد کيلئے کہ وہ اور ميں ايک نور سے خلق کئے گئے-

عَنْ جٰابِرِبْنِ عَبْدُاللّٰہِ قَالَ سَمِعْتُ النَّبِي(رسول اللّٰہ) يَقُوْلُ لِعَليٍّ:النّاسُ مِنْ شَجَرٍ شَتّيٰ وَاَنَاوَاَنْتَ مِنْ شَجَرَةٍ وٰاحِدَةٍ ثُمَّ قَرَأَالنَّبِي"‌وَجَنٰاتٌ مِنْ اَعْنَابٍ وَزَرْعٌ وَنَخِيْلٌ صِنْوٰانٌ وَغَيْرُ صِنْوٰانٍ يُسْقٰي بِمٰاءٍ وٰاحِدٍ"-

"‌جابرابن عبداللہ کہتے ہيں کہ ميں نے رسولِ خدا سے سنا کہ وہ حضرت علي عليہ السلام سے مخاطب تھے اور فرما رہے تھے "‌سب لوگ سلسلہ ہائے مختلف(مختلف اشجار)سے پيدا کئے گئے ہيں ليکن ميں اور تو(علي ) ايک ہي سلسلہ(شجرئہ طيبہ) سے خلق کئے گئے ہيں اور پھر آپ نے يہ آيت پڑھي:

ثُمَّ قَرَأَالنَّبِي"‌وَجَنٰاتٌ مِنْ اَعْنَابٍ وَزَرْعٌ وَنَخِيْلٌ صِنْوٰانٌ وَغَيْرُ صِنْوٰانٍ يُسْقٰي بِمٰاءٍ وٰاحِدٍ"-(سورئہ رعد:آيت:13)

"‌اور انگوروں کے باغ اور کھيتياں اور کھجور کے درخت ايک ہي جڑ ميں سے کئي اُگے ہوئے اور عليحدہ عليحدہ اُگے ہوئے کہ يہ سب ايک ہي پاني سے سينچے جاتے ہيں"-

روايت اہلِ سنت کي کتب سے حوالہ جاتِ

1- ابن مغازلي، کتاب مناقب، حديث 400اور حديث90،297ميں-

2- حمويني، کتاب فرائد السمطين،باب4،حديث17-

3- حاکم، کتاب المستدرک،جلد2،صفحہ241-

4- ابن عساکر،تاريخ دمشق ،شرح حالِ علي ،ج1،ص126،حديث178،شرح محمودي-

5- سيوطي، تفسير الدرالمنثور ميں،جلد4،صفحہ51اور تاريخ الخلفاء،صفحہ171-

6- شيخ سليمان قندوزي حنفي، ينابيع المودة، بابِ مناقب70،حديث37،صفحہ280-

7- حافظ الحسکاني،کتاب شواہد التنزيل ميں، حديث395-

8- متقي ہندي، کنزالعمال،جلد6،صفحہ154،اشاعت اوّل ،جلد2،ص608(موسسۃالرسالہ بيروت، اشاعت پنجم)-

حوالہ جات :

[1] مناقب سيدنا علي ص 27 مطبوعہ حيدر آباد ، ھند وستان-

[2] وھي مصدر ص 34-

[3] ينابيع المودة ص 11،قندوزي حنفي، طبع استانبول

 


source : www.tebyan.net
273
0
0% (نفر 0)
 
نظر شما در مورد این مطلب ؟
 
امتیاز شما به این مطلب ؟
اشتراک گذاری در شبکه های اجتماعی:

latest article

از سہ نسبت حضرت زہرا‏ء(س) عزیز
امام حسین علیہ السلام کی تحریک کے اہداف
شیعہ، امام حسن عسکری علیہ السلام کی نظر میں
بسلسلۂ شہادت امام جواد علیہ السلام تعزیت و تسلیت عرض ہے
باغ فدک کے تعجبات
نبی(ص) کی احادیث میں تناقض
شیعیان علی جنتی مخلوق
حضرت علي ٴ کي مشکلات‘ہمارے ليے عبرتيں
خطبات يا فضائل حسين ابن علی(ع)
امام محمد تقی (ع) کا بازار اور مچھلی کا واقعہ

 
user comment