اردو
Friday 3rd of February 2023
0
نفر 0

زیارت معصومہ [س] قم

فضلیت زیارت معصومہ[س]قم

یہ معظمہ جو امام موسیٰ کاظم [ع] کی دختر اور امام رضا[ع] کی خواہر ہیں ایران کے شہر قم میں دفن ہیں جہاں ان کا بہت بہترین سنہری گنبد اور ضریح ہے اور وسیع و عریض صحن بھی بنایا گیا ہے وہاں بہت زیادہ خدام ہیں اور وافر مقدار میں اموال و جائداد اس روضہ مبارک کیلئے وقف کیے گئے ہیں یہ بارگاہ دنیا بھر کے وابستگان اہل بیت(ع) اور خصوصاً اہل قم کیلئے پناہ گاہ ہے چنانچہ دوران سال لوگ دور دور سے اس بی بی کی زیارت سے مستفید ہونے اور ان سے فیض و برکت حاصل کرنے آتے ہیں احادیث و اخبار سے معصومہ قم کی زیارت کی بہت زیادہ فضلیت ظاہر ہوتی ہے چنانچہ شیخ صدوق نے سند حسن کے ساتھ جو صحیح کے برابر ہے سعدبن سعد سے روایت کی ہے کہ امام علی رضا - سے جناب فاطمہ﴿س﴾ بنت امام موسیٰ کاظم(ع) کی زیارت کے بارے میں پوچھا گیا تو آپ(ع) نے فرمایا جو شخص ان معصومہ﴿س﴾ کی زیارت کرنے آئے تو جنت اس کیلئے واجب ہو گی معتبر سند کیساتھ امام محمد تقی - سے مروی ہے کہ آپ(ع) نے فرمایا جو شخص قم میںمیری پھوپھی جناب فاطمہ﴿س﴾ کی زیارت کرے وہ جنت کا حق دار ہے علامہ مجلسی نے بعض کتب زیارت میں علی بن ابراہیم سے اور انہوں نے اپنے والد گرامی سے اور انہوں نے سعد اشعری قمی سے اور انہوں نے امام رضا - سے روایت کی ہے کہ آپ نے فرمایا اے سعد تمہارے قرب میں ہماری ایک قبر ہے میں نے عرض کی آپ پر قربان ہو جائوں کیا آپ جناب فاطمہ﴿س﴾ بنت موسیٰ کاظم(ع) کی قبر کے بارے میں فرما رہے ہیں؟ آپ نے فرمایا کہ ہاں جو شخص انکے حق کو پہچانتے ہوئے انکی زیارت کرے تو جنت اس کیلئے واجب ہو گی جب تم ان کی قبر پر جائو تو سرہانے کی طرف قبلہ رخ کھڑے ہو کر 34 مرتبہ اَﷲُاَکْبَرُ ۳۳ مرتبہ سُبْحَانَ اَﷲِ اور ۳۳ مرتبہ اَلْحَمْدُ ﷲِ کہو اور پھر یہ زیارت پڑھو:

زیارت معصومہ [ع] قم

اَلسَّلَامُ عَلَی آدَمَ صَفْوَۃِ اﷲِ اَلسَّلَامُ عَلَی نُوحٍ نَبِیِّ اﷲِ اَلسَّلَامُ عَلَی إبْراھِیمَ خَلِیلِ اﷲِ 

سلام ہو آدم(ع) پر جو خدا کے برگزیدہ ہیں سلام ہو نوح(ع) پر جو خدا کے نبی ہیں سلام ہو ابراہیم(ع) پر جو خدا کے دوست خاص ہیں 

اَلسَّلَامُ عَلَی مُوسَی کَلِیمِ اﷲِ اَلسَّلَامُ عَلَی عِیسی رُوحِ اﷲِ اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا رَسُولَ اﷲِ 

سلام ہو موسیٰ(ع) پر جو خدا کے کلیم ہیں سلام ہو عیسیٰ(ع) پر جو روح خدا ہیں آپ پر سلام ہو اے خدا کے رسول(ص) 

اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا خَیْرَ خَلْقِ اﷲِ اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا صَفِیَّ اﷲِ اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا مُحَمَّدَ 

آپ پر سلام ہو کہ آپ خلق خدا میں بہترین ہیں آپ پر سلام ہو اے خدا کے پسند کردہ آپ پر سلام ہو اے محمد(ص) 

بْنَ عَبْدِاﷲِ خاتَمَ النَّبِیِّینَ اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا ٲَمِیرَ الْمُؤْمِنِینَ عَلِیَّ بْنَ ٲَبِی طالِبٍ وَصِیَّ 

بن عبداﷲ(ع) کہ آپ نبیوں کے خاتم ہیں سلام ہو آپ پر اے امیر المؤمنین(ع) علی(ع) ابن ابی طالب(ع) رسول خدا(ص) 

رَسُولِ اﷲِ اَلسَّلَامُ عَلَیْکِ یَا فاطِمَۃُ سَیِّدَۃَ نِسائِ الْعالَمِینَ اَلسَّلَامُ عَلَیْکُما یَا سِبْطَیْ نَبِیِّ 

کے وصی آپ پر سلام ہو اے فاطمہ﴿س﴾ کہ آپ زنان عالم کی سردار ہیں سلام ہو آپ دونوں پر کہ آپ نبی (ص) رحمت کے 

الرَّحْمَۃِ وَسَیِّدَیْ شَبابِ ٲَھْلِ الْجَّنَۃِ اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا عَلِیَّ بْنَ الْحُسَیْنِ سِیِّدَ الْعابِدِینَ 

دو نواسے(ع) اور جوانان اہل جنت کے دو سید و سردار ہیں آپ پر سلام ہو اے علی(ع) بن الحسین(ع) کہ آپ عبادت گزاروں کے سردار اور اہل 

وَ قُرَّۃَ عَیْنِ النَّاظِرِینَ اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا مُحَمَّدَ بْنَ عَلِیٍّ باقِرَ الْعِلْمِ بَعْدَ النَّبِیِّ اَلسَّلَامُ 

بصیرت کیلئے آنکھوں کی ٹھنڈک ہیں سلام ہو آپ پر اے محمد(ع) بن علی(ع) کہ آپ بعد از نبی (ص) علم پھیلانے والے ہیں آپ پر 

عَلَیْکَ یَا جَعْفَرَ ابْنَ مُحَمَّدٍ الصَّادِقَ الْبارَّ الْاَمِینَ اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا مُوسَی بْنَ جَعْفَرٍ 

سلام ہو اے جعفر(ع) بن محمد(ع) کہ آپ راستگو خوش کردار امانتدار ہیں آپ پر سلام ہو اے موسیٰ(ع) بن جعفر(ع) 

الطَّاھِرَ الطُّھْرِ اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا عَلِیَّ بْنَ مُوسَی الرِّضَا الْمُرْتَضی اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ 

کہ آپ پاک ہیں پاک شدہ ہیں آپ پر سلام ہو اے علی(ع) بن موسیٰ(ع) کہ آپ رضا والے پسندیدہ ہیں آپ پر سلام ہو 

یَا مُحَمَّدَ بْنَ عَلِیٍّ التَّقِیَّ اَلسَّلَامُ عَلَیْکَ یَا عَلِیَّ بْنَ مُحَمَّدٍ النَّقِیَّ النَّاصِحَ الْاََمِینَ اَلسَّلَامُ 

اے محمد(ع) بن علی(ع) کہ آپ پرہیز گار ہیں آپ پر سلام ہو اے علی(ع) بن محمد(ع) کہ آپ باصفا خیر خواہ امانتدار ہیں آپ پر

عَلَیْکَ یَا حَسَنَ بْنَ عَلِیٍّ اَلسَّلَامُ عَلَی الْوَصِیِّ مِنْ بَعْدِھِ اَللّٰھُمَّ صَلِّ عَلَی نُورِکَ وَسِراجِکَ 

سلام ہو اے حسن(ع) بن علی(ع) اور سلام ہو اس امام پر جو ان کے قائم مقام ہوئے اے معبود اپنے نور پر رحمت فرما جو تیرا چراغ تیرے ولی 

وَوَلِیِّ وَلِیِّکَ وَوَصِیِّ وَصِیِّکَ وَحُجَّتِکَ عَلَی خَلْقِکَ اَلسَّلَامُ عَلَیْکِ یَا بِنْتَ 

کے وارث تیرے وصی کے جانشین اور تیری مخلوق پر حجت ہیں آپ پر سلام ہو اے رسول خدا(ص) 

رَسُولِ اﷲِ اَلسَّلَامُ عَلَیْکِ یَا بِنْتَ فاطِمَۃَ وَخَدِیجَۃَ اَلسَّلَامُ عَلَیْکِ یَا بِنْتَ ٲَمِیرِالْمُؤْمِنِینَ 

کی دختر آپ پر سلام ہو اے فاطمہ زہرا﴿س﴾ خدیجۃ الکبریٰ﴿س﴾کی دختر آپ پر سلام ہو اے مومنوں کے امیر(ع)کی دختر(ع) 

اَلسَّلَامُ عَلَیْکِ یَا بِنْتَ الْحَسَنِ وَالْحُسَیْنِ اَلسَّلَامُ عَلَیْکِ یَا بِنْتَ وَلِیِّ اﷲِ اَلسَّلَامُ 

آپ پر سلام ہو اے حسن(ع) و حسین(ع) کی دختر(ع) آپ پر سلام ہو اے ولی خدا(ع) کی دختر(ع) آپ پر 

عَلَیْکِ یَا ٲُخْتَ وَلِیِّ اﷲِ اَلسَّلَامُ عَلَیْکِ یَا عَمَّۃَ وَلِیِّ اﷲِ اَلسَّلَامُ عَلَیْکِ یَا بِنْتَ مُوسَی 

سلام ہو اے ولی خدا(ع) کی ہمشیرہ آپ پر سلام ہو اے ولی خدا(ع) کی پھوپھی سلام ہو آپ(ع) پر اے موسیٰ(ع) بن جعفر(ع) کی 

بْنِ جَعْفَرٍ وَرَحْمَۃُ اﷲِ وَبَرَکاتُہُ اَلسَّلَامُ عَلَیْکِ عَرَّفَ اﷲُ بَیْنَنا وَبَیْنَکُمْ فِی الْجَنَّۃِ 

دختر خدا کی رحمت ہو اور اسکی برکات ہوں آپ پر سلام ہوکہ خدا جنت میںہمارے اور آپ کے درمیان شناسائی کرائے ہمیں آپ 

وَحَشَرَنا فِی زُمْرَتِکُمْ وَٲَوْرَدَنا حَوْضَ نَبِیِّکُمْ وَسَقَانا بِکَٲْسِ جَدِّکُمْ مِنْ یَدِ عَلِیِّ بْنِ ٲَبِی 

کے گروہ میں اٹھائے ہمیں آپکے نبی (ص) کے حوض کوثر پر وارد کرے اور ہمیں آپکے نانا کے جام کیساتھ علی(ع) بن ابی طالب(ع) کے ہاتھوں 

طالِبٍ صَلَواتُ اﷲِ عَلَیْکُمْ ٲَسْٲَلُ اﷲَ ٲَنْ یُرِیَنا فِیکُمُ السُّرُورَ وَالْفَرَجَ وَٲَنْ یَجْمَعَنا 

سیراب فرمائے آپ پر خدا کی رحمتیں ہوں خدا سے سوال کرتا ہوں کہ وہ ہمیںآپ(ع) لوگوں میں مسرت و خوشحالی دکھائے اور یہ کہ ہمیں اور آپ(ع) کو 

وِ إیَّاکُمْ فِی زُمْرَۃِ جَدِّکُمْ مُحَمَّدٍ وَٲَنْ لاَ یَسْلُبَنا مَعْرِفَتَکُمْ إنَّہُ وَلِیٌّ قَدِیرٌ ٲَتَقَرَّبُ إلَی اﷲِ 

آپکے نانا محمد(ص) کے گروہ میںاکٹھا کرے اور ہم سے آپ(ع) کی معرفت واپس نہ لے کہ وہ حاکم ہے قدرت والامیںقرب الہی چاہتا ہوں 

بِحُبِّکُمْ وَالْبَرائَۃِ مِنْ ٲَعْدائِکُمْ وَالتَّسْلِیمِ إلَی اﷲِ راضِیاً بِہِ غَیْرَ مُنْکِرٍ وَلاَ مُسْتَکْبِرٍ وَعَلَی 

آپ(ع) کی محبت اور آپ(ع) کے دشمنوں سے بیزاری کے ذریعے ہم خدا کی رضا پر راضی ہو کر بغیر دل تنگ ہونے اور تکبر کے اور اس چیز پر

یَقِینِ مَا ٲَتیٰ بِہِ مُحَمَّدٌ وَبِہِ راضٍ نَطْلُبُ بِذلِکَ وَجْھَکَ یَا سَیِّدِی اَللّٰھُمَّ وَرِضاکَ 

یقین سے جو محمد(ص) لائے اور اس پر خوش رہ کر اس طرح ہم تیری توجہ چاہتے ہیں اے ہمارے خدا اے معبود میں تیری رضا اور آخرت

وَالدَّارَ الْاَخِرَۃَ یَا فاطِمَۃُ اشْفَعِی لِی فِی الْجَنَّۃِ فَ إنَّ لَکِ عِنْدَ اﷲِ شَٲْناً مِنَ الشَّٲْنِ۔ 

کی بہتری چاہتا ہوں اے فاطمہ﴿س﴾ حصول جنت میں میری سفارش کریں کیونکہ آپ خدا کے ہاں بڑی عزت و شان رکھتی ہیں 

اَللّٰھُمَّ إنِّی ٲَسْٲَلُکَ ٲَنْ تَخْتِمَ لِی بِالسَّعادَۃِ فَلاَ تَسْلُبْ مِنِّی مَا ٲَنَا فِیہِ وَلاَ حَوْلَ وَلاَ قُوَّۃَ 

اے معبود میں سوال کرتا ہوں تجھ سے کہ میرا انجام خوش بختی پر فرما میںجس گروہ میں ہوں اسی میں رہنے دے نہیں کوئی حرکت و قوت 

إلاَّ بِاﷲِ الْعَلِیِّ الْعَظِیمِ۔ اَللّٰھُمَّ اسْتَجِبْ لَنا وَتَقَبَّلْہُ بِکَرَمِکَ وَعِزَّتِکَ وَبِرَحْمَتِکَ 

مگر وہ جو خدائے بلند و بزرگ سے ملتی ہے اے معبود ہماری دعائیں منظور و مقبول فرما اپنی بزرگی اپنی عزت اپنی رحمت اور اپنی پناہ 

وَعافِیَتِکَ وَصَلَّی اﷲُ عَلَی مُحَمَّدٍ وَآلِہِ ٲَجْمَعِینَ وَسَلَّمَ تَسْلِیماً یَا ٲَرْحَمَ الرَّاحِمِینَ۔

کے واسطے سے خدا حضرت محمد(ص) اور انکی ساری آل (ع) پر درود بھیجے اور سلام بھیجے بہت بہت سلام اے سب سے زیادہ رحم کرنے والے۔


source : http://www.ahl-ul-bayt.org
0
0% (نفر 0)
 
نظر شما در مورد این مطلب ؟
 
امتیاز شما به این مطلب ؟
اشتراک گذاری در شبکه های اجتماعی:

latest article

ماہ رجب کےواقعات
فرائض دور ِ غیبت
قرآن کو نوک نیزہ پر بلند کرنے کی سیاست
دسویں امام : حضرت علی نقی علیہ السلام
قرآن و سنت کی روشنی میں امت اسلامیہ کی بیداری
حرمت شراب' قرآن و حدیث کی روشنی میں
کثرتِ ازواج
حضرت امام جعفر صادق علیہ السلام کا یوم شہادت
غدیر ھمارا پاک و پا کیزہ عقیدہ
جھوٹ

 
user comment