اردو
Sunday 29th of November 2020
  701
  0
  0

کو نسی چیزیں دعا کے اﷲ تک پہنچنے میں مانع ہوتی ہیں ؟

اس بحث میں ہم اس سوال کا جواب پیش کریں گے انشائَ اﷲ ۔

بیشک دعا کے بارے میں جیسا کہ کہا گیاہے کہ دعا وہ قرآن صاعد ہے جو اﷲ کی طرف سے نازل ہونے والے قرآن کے بالمقابل ہے ۔نازل ہونے والے قرآن میں عبودیت ،بندہ کوصرف خود کو خدا کی بارگاہ میں پیش کرنے اور صرف اسی سے لولگا نے کی دعوت دی گئی ہے اور قرآن صاعد میں اس دعوت پر لبیک کہی گئی ہے ۔

لیکن یہاں پر کچھ ایسے موانع ہیں جو دعائوں کو اﷲ کی بارگاہ میں پہنچنے سے روک دیتے ہیں اور اﷲ کی بارگاہ میں ان دعائوں کے پہنچنے سے روکنے والے اہم موانع گنا ہ اور معصیتں ہیں دعا ء کمیل میں واردہوا ہے :(اَللَّھُمَّ اغْفِرْلِیَ الذُّنُوْبَ الَّتِیْ تَحْبِسُ الدُّعَائَ )

''خدا یا میرے ان تمام گنا ہوں کو بخش دے جو دعا ئوں کو قبول ہو نے سے روک دیتے ہیں ''

اور اسی دعا ء کمیل میں آیاہے :(فَأَسْأَلُکَ بِعِزَّتِکَ اَنْ لَا یَحْجُبَ عَنْکَ دُعَائِیْ سُوْئُ عَمَلِیْ )

''میں تجھ سے سوال کرتا ہوں تیری عزت کے واسطے سے کہ میری بد عملی میری دعا کو پہنچنے سے نہ روکے ''

ہم عنقریب ان موانع (رکاوٹوں )کی تحلیل کریںگے انشاء اﷲ :

گناہ بارگاہ خدا کی راہ میںایک رکاوٹ

حیات انسان میں گناہوں کے دواثر ہوتے ہیں :

١۔گناہ انسان اور خداوند عالم کے درمیان حائل ہوجاتے ہیں ،انسان خدا سے منقطع ہوجاتا ہے اس کیلئے اپنے کو خدا کی بارگاہ میں پیش کرنے اور اس سے لولگا نے کا امکان ہی نہیں رہتا ،اور نہ ہی اس کیلئے دعا کرنا ممکن ہوتا ہے بیشک دعاکا مطلب اپنے کو خدا وند عالم کی بارگاہ میں پیش کرنا ہے ۔

جب گناہ ،گناہ کرنے والے کو خدا تک پہنچا نے میں مانع ہوجاتے ہیں تو اس کی دعا میں بھی مانع ہوجاتے ہیں ۔

٢۔گناہ دعا کو اﷲ تک پہنچنے سے روک دیتے ہیں ،چونکہ جب دعا اﷲ تک پہنچتی ہے تو خدا اس کو مستجاب کرتا ہے ،یہ خدا کے شایان شان نہیں کہ جب کسی بند ے کی دعا اس تک پہنچے تو وہ عاجز ہو جائے یا بخل سے کام لے ،بیشک دعا کی عاجز ی یہ ہے کہ وہ خدا تک نہیں پہنچتی ہے :کبھی کبھی گنا ہ انسان کو دعا کرنے سے مقید کردیتے ہیں اور کبھی کبھی دعا کو اﷲ تک پہنچنے میں مقید کردیتے ہیں ۔

ہم ذیل میں اس مطلب کی وضاحت کررہے ہیں :

اخذ اور عطا میں دل کادوہرا کردار

بیشک قلب ایک طرف تو خدا وند عالم سے رابطہ کیلئے ضروری چیزیں اخذ کرتا ہے اور اس سے ملاقات کرتا ہے ،اور دوسری طرف ان چیزوں کو عطا کرتا ہے جیسے حملہ آور قلب جو خون کو پھینکنے واپس  لا نے اور لوگوں کے درمیان سے اکٹھا کرنے کا کام دیتا ہے۔

جب دل میں انسان کو ملا نے اور خدا وند عالم سے مر بوط کرنے کی صلا حیت ختم ہو جا ئے تو گویا اس نے اپنی ساری اہمیت کھو دی اور اس کو کو ئی فائدہ نہیں ہوا جیسے وہ دل جو پوری طرح حملہ آور ہے۔

دل اس لینے دینے میں ایک طرف توخداوند عالم کی جانب سے ہدایت ،نو رانیت اور   آگا ہی حاصل کرتاہے اور دو سری طرف انسان کو اس کی حرکات و گفتار اور مو قف عمل میں یہ ہدایت اور نو رانیت عطا کرتے ہیں

پہلی شق (اﷲ سے ملاقات اور اخذ کرنا )کے سلسلہ میں خداوندعالم فرماتاہے :

(وَقَالَ الَّذِیْنَ کَفَرُوْالَوْلَانُزِّلَ عَلَیْہِ الْقُرْآنُ جُمْلَةًوَاحِدَةً کَذٰلِکَ لِنُثَبِّتَ بِہِ فُؤَادَکَ وَرَتَّلْنَاہُ تَرْتِیْلاً )(١)

''اور کافر یہ بھی کہتے ہیں کہ آخر اِن پر یہ قرآن ایک دفعہ کل کا کل کیوں نہیں نازل ہوگیا۔ہم اسی طرح تدریجا نازل کرتے ہیں تاکہ تمہارے دل کو مطمئن کرسکیں اور ہم نے اسے ٹھہر ٹھہر کر نازل کیا ہے ''

تو قرآن رسول کے قلب مبارک پرایک دم اور آہستہ آہستہ نا زل ہو تا تھا اور دلوں کو تقویت بخشتا تھا نیزیہ دل اس سے نو رانیت اور ہدایت حا صل کرتے تھے ۔

خداوندعالم کا ارشاد ہے :

(اَﷲ ُ نَزَّلَ اَحْسَنَ الْحَدِیْثِ کِتَاباًمُتَشَابِھاً مَثَانِیَ تَقْشَعِرُّ مِنْہُ جُلُوْدُ الَّذِیْن یَخْشَوْنَ رَبَّھُمْ ثُمَّ تَلِیْنُ جُلُوْدُھُمْ وَقُلُوْبُھُمْ اِلٰی ذِکْرِاللّٰہِ )(٢)

''اللہ نے بہترین کلام اس کتاب کی شکل میں نازل کیا ہے جس کی آیتیں آپس میں ملتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(١)سورئہ فرقان آیت ٣٢۔

(٢)سورئہ زمر آیت ٢٣۔

جلتی ہیں اور بار بار دُہرائی گئی ہیں کہ ان سے خوف خدا رکھنے والوں کے رونگٹے کھڑے ہو جاتے ہیں اس کے بعد ان کے جسم اور دل یاد خدا کیلئے نرم ہو جاتے ہیں ''

قلوب، قرآن سے خشوع وخضوع اخذ کرتے ہیں ،نرم ہو جاتے ہیں خدا کی ہدایت اور اس نور کے ساتھ رابطہ پیدا کرتے ہیں جس کو خداوند عالم نے بندوں کی طرف بھیجا ہے کیونکہ قرآن خداوند عالم کی طرف سے ہدایت اور ایسا نور ہے جس کو خداوند عالم نے بندوں کی جانب بھیجا ہے نیز یہ قرآن خداوند عالم کا برہان اور مخلوق پر حجت ہے ۔

خدا وند عالم کا ارشاد ہے :

(یَأَایُّھَاالنَّاسُ قَدْجَآئَ کُمْ بُرْھَان مِنْ رَبِّکُمْ وَاَنْزَلْنَااِلَیْکُمْ نُوْراً مُبِیْناً )(١)

''اے انسانو! تمہارے پاس تمہارے پروردگار کی طرف سے برہان آچکا ہے اور ہم نے تمہاری طرف روشن نور بھی نازل کردیا ہے ''

یہ نور اور ہدایت مو منین اور متقین لوگوں کے دلو ں سے مخصوص ہے وہ اس نور کو اخذ کرتے ہیں اور اس سے متأثر ہوتے ہیں :

(ھَذَابَیَان لِلنَّاسِ وَھُدیً وَمَوْعِظَةًلِلْمُتَّقِیْنَ )(٢)

''یہ عام انسانوں کیلئے ایک بیان حقائق ہے اور صاحبان تقویٰ کیلئے ہدایت اور نصیحت ہے'

(ھٰذَابَصَائِرُمِنْ رَبِّکُمْ وَھُدیً وَرَحْمَةلِقَوْمٍ یُؤْمِنُوْنَ )(٣)

''یہ قرآن تمہارے پروردگار کی طرف سے دلائل ہدایت اور صاحبان ایمان کیلئے رحمت کی حیثیت رکھتاہے ''

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(١)نساء آیت١٧٤)

(٢)سورئہ آ ل عمران آیت ١٣٨۔

(٣)سورئہ اعراف آیت ٢٠٣۔

دل کیلئے یہ پہلا دور ہے جو اﷲ سے ہدایت ،نور ،بصیرت اور بر ہان حاصل کرتے ہیں اور جو کچھ اﷲ نے اپنے بندوں کیلئے نور اور ہدایت نازل کیا ہے ان سے مخصوص ہوتا ہے ۔

دلوں کیلئے دوسرامرحلہ تو سعہ اور عطا

اس مرحلہ میں قلوب ایسے نور اور ہدایت کو پھیلاتے ہیں جو ان کو خداوند عالم کی جا نب سے ملا ہوتا ہے اوریہ قلوب انسان کی حر کت ،گفتار ،مو قف ،روابط اور اقدامات کو نور عطا کرتے ہیں اس وقت انسان نو رالٰہی اور ہدایت الٰہی کے ذریعہ آگے بڑھتا ہے نور خدا اور ہدایت خدا سے تکلم کرتا ہے نور خدا اور ہدایت کے ذریعہ اپنامو قف معین کرکے لوگوں کے درمیان چلتا ہے ۔

(اَوَمَنْ کَانَ مَیْتاً فَأَحْیَیْنَاہُ وَجَعَلْنَا لَہُ نُوْراً یَمْشِیْ بِہِ فِیْ النَّاسِ) (١)

''کیا جو شخص مُردہ تھا پھر ہم نے اسے زندہ کیااور اس کیلئے ایک نور قرار دیاجس کے سہارے وہ لوگوں کے درمیان چلتا ہے ''

(یَااَیُّھَاالَّذِ یْنَ آمَنُوااتَّقُوااﷲَ وَآمِنُوْابِرَسُوْلِہِ یُؤْتِکُمْ کِفْلَیْنِ مِنْ رَحْمَتِہِ وَیَجْعَلْ لَکُمْ نُوْراً تَمْشُوْنَ بِہِ وَیَغْفِرْلَکُمْ وَاﷲُ غَفُوْررَّحِیْم )(٢)

''ایمان والو اللہ سے ڈرو اور رسول پر واقعی ایمان لے آئو تا کہ خدا تمھیں اپنی رحمت کے دہرے حصے عطا کردے اور تمہارے لئے ایسا نور قرار دیدے جس کی روشنی میں چل سکو اور تمھیں بخش دے اور اللہ بہت زیادہ بخشنے والا اور مہربان ہے ''

یہ نور جس کے ذریعہ مومنین کا ایک دوسرے سے رابط برقرار رہتا ہے ،اس کے ذریعہ سے وہ لوگوں کی صفوں میں گھوما کرتے ہیں ،ان کی سیاست ،یاتجارت یاحیات انسانی کے دوسرے تمام  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(١)سورئہ انعام آیت ١٢٢۔

(٢)سورئہ حدیدآیت ٢٨۔

کا موں میں لگے رہتے ہیں یہ خداوندعالم کا وہ نور ہے جس کو اﷲ نے اپنے بندوں کیلئے بھیجا ہے :

(وَمَنْ لم یَجْعَلِ اﷲُ لَہُ نُوْراً فَمَالَہُ مِنْ نُوْرٍ )(١)

''اور جس کیلئے خدا نور قرار نہ دے اس کے لئے کو ئی نور نہیں ہے ''

یہ وہ نور ہے جو اﷲ کی طرف سے قلب میں ودیعت کیا جاتا ہے پھر اس کے ذریعہ دل، انسان کی بینائی ،سماعت اور اس کے اعضا وجوارح کی طرف متوجہ ہو تا ہے ۔

اس اخذ اور عطا میں دل کا کردار درمیانی ہوتاہے نور اﷲ کی طرف سے آتا ہے اور اس کے ذریعہ انسان اپنا راستہ ،اپنی تحریک ،کلام اور موقف اختیار کرتا ہے ۔

یہ دل کے صحیح و سالم ہو نے کی علا مت ہے اور وہ قرآن کو صحیح طریقہ سے اخذ کرتا ہے ،اور اسکو عطا کرتا ہے جس طرح سرسبز زمین نور ،ہوا اور پانی کو اخذ کر تی ہے اور طیب و طا ہر پھل دیتی ہے۔

حضرت امرالمومنین علیہ السلام قرآن کی صفت کے سلسلہ میں فرماتے ہیں :

(کتاب اﷲ تبصرون بہ وتنطقون بہ وتسمعون بہ )

''یہ اللہ کی کتاب ہے جس کے ذریعہ تمھیں سجھا ئی دیتا ہے اور تمہاری زبان میں گو یا ئی آتی ہے اور (حق کی آواز )سنتے ہو ''

جب دل صحیح وسالم نہ ہو تو اس میں اﷲ سے لولگانے کی خاصیت مفقود ہو جاتی ہے اور وہ اﷲ کی طرف سے نازل ہونے والے قرآن کا استقبال کرنے پر متمکن نہیں ہو تا۔

جب دل میں اﷲ کی طرف سے نازل ہو نے والے قرآن کا استقبال کر نے کی قدرت نہ  ہو گی تو وہ نماز اور دعا کے ذریعہ قرآن صاعد کو اﷲ تک پہنچا نے پر قادر نہیں ہو سکے گا ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(١)سورئہ نورآیت ٤٠ ۔

اس حالت کو انغلاق قلب(دل کا بند ہوجانا) کہا جاتا ہے خداوند عالم فرماتا ہے :

(صُمّ بُکْم عُمْی فَھُمْ لاَیَرْجِعُوْنَ )(١)

''یہ سب بہرے ،گونگے ،اور اندھے ہو گئے ہیں اور اب پلٹ کر آنے والے نہیں ہیں ''

بہرااور اندھا نور کا استقبال کرنے کی استطاعت نہیں رکھتا ہے اسی طرح جو بولنے کی طاقت نہ رکھتا ہو اس کو فطری طور پر گو نگا کہاجاتا ہے ۔

پروردگار عالم بنی اسرائیل سے فرماتا ہے :

(ثُمَّ قَسَتْ قُلُوْ بُکُمْ مِنْ بَعْدِذٰلِکَ فَھِیَ کَالْحِجَارَةِاَوْاَشَدُّ ُقَسْوَةً)(٢)

''پھر تمہارے دل سخت ہو گئے جیسے پتھر یا اس سے بھی کچھ زیادہ سخت ''

بیشک پتھر، نور ،ہو ااور پانی کا استقبال کرنے پر متمکن نہیں ہوتا ہے اور نور ،ہو ااور پانی میں سے جو کچھ بھی اس پر گرتا ہے اس کو واپس کردیتا ہے اور یہ فطری بات ہے کہ وہ ثمر دینے کی استطاعت  نہیں رکھتا ہے ،بلکہ ثمر تو وہ زمین دیتی ہے جس میں نور ،ہوا اور پانی جذب کرنے کی صلاحیت ہوتی ہے

اسی طرح جب دل صحیح وسالم نہیں ہوتا تو وہ نور کا استقبال نہیں کرتا اور نہ ہی نور سے استفادہ کرپاتا ہے اسی کومکمل انغلاق کی حالت کہاجاتا ہے اور وہ حالت (دل کا مرجانا )جس میں دل ہر طرح کی حیاتی چیز سے بے بہر ہ ہوجاتا ہے یعنی زندہ دل کی طرح اس میں کسی چیز کو لینے یادینے کی طاقت باقی نہیں رہ جاتی اور جس دل میں یہ خاصیت نہ پائی جاتی ہو وہ زندگی کا ہی خاتمہ کردیتا ہے۔

خداوندعالم دل کے مردہ ہو جانے کے متعلق فرماتا ہے :

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(١)سورئہ بقرہ ١٨۔

(٢)سورئہ بقرہ ٧٤۔

(اِنَّ اﷲَ یُسْمِعُ مَنْ یَّشَائُ وَمَااَنْتَ بِمُسْمِعٍ مَنْ فِیْ القُبُوْر )(١)

''اللہ جس کو چا ہتا ہے اپنی بات سنا دیتا ہے اور آپ انھیں نہیںسنا سکتے جو قبروں کے اندر رہنے والے ہیں ''

اور یہ فرمان خدا :(اِنَّکَ لاَتُسْمِعُ الْمَوْتٰی وَلاتُسْمِعُ الصُّمُّ الدُّعَائَ) (٢)

''آپ مُردوں کواور بہروں کو اپنی آواز نہیں سنا سکتے ہیں اگر وہ منھ پھیر کر بھاگ کھڑے ہوں ''

خدا وند عالم یہ فر ما تا ہے  :

(وَسَوَائعَلَیْھِمْ أَنْذَرْتَھُمْ اَمْ لَمْ تُنْذِرْھُمْ لاَیُؤْمِنُوْنَ) (٣)

''اور ان کیلئے سب برابر ہے آپ انھیں ڈرائیں یا نہ ڈرائیں یہ ایمان لانے والے نہیں ہیں ''

آوازاور انداز میں کوئی عجزو کمی نہیں ہے بلکہ یہ میت کی کمی اور عاجزی ہے کہ وہ کسی چیز کو سننے کی قابلیت نہیں رکھتی ہے ۔

دل کی اسی حالت کواس (دل) کا مرجانا ،بند ہو جانا اور اﷲ سے منقطع ہو جا نا کہا جاتا ہے ۔

اس قطع تعلق اوردل کے بند ہوجانے کی کیا وجہ ہے ؟

دلوں کے منجمد ہونے کے اسباب

اسلامی روایات میں دلو ں کے منغلق ہو نے اور ان کے اﷲ سے منقطع ہو جانے کے دواہم اسباب پر زور دیا گیا ہے :

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(١)سورئہ فاطرآیت٢٢۔

(٢)سورئہ نمل آیت ٨٠ ۔

(٣)سورئہ یس آیت١٠۔

١۔اﷲ کی آیات سے اعراض روگردانی اور ان کی تکذیب ۔

٢۔گناہوں اور معصتیوں کا ارتکاب۔

خداوندعالم ارشاد فرماتا ہے :

(وَالَّذِیْنَ کَذَّبُوْابِآیَاتِنَاصُمّوَبُکْم فِی الظُّلُمٰاتِ )(١)

''اور جن لوگوں نے ہماری آیات کی تکذیب کی وہ بہرے گونگے تاریکیوں میں پڑے ہوئے ہیں ''

اس آیۂ کریمہ میں اﷲ کی آیات کی تکذیب، لوگوں کی زند گی میں تاریکیو ںکے بس جانے اور ان کے گونگے ہوجانے کا سبب ہے ۔

خدا وند عالم فرماتا ہے:

(وَاِذَاتُتْلٰی عَلَیْہِ آیَاتُنَا وَلّٰی مُسْتَکْبِراً کَأَنْ لَّمْ یَسْمَعْھَاکَأَنَّ فِیْ اُذُنَیْہِ وَقْراً)(٢)

''اور جب اس کے سامنے آیاتِ الٰہیہ کی تلاوت کی جاتی ہے تو اکڑکر منھ پھیر لیتا ہے جیسے اس نے کچھ سنا ہی نہیں ہے اور جیسے اس کے کان میں بہرا پن ہے ''

ہم اس آیۂ کریمہ میں اللہ کی آیات سے رو گردانی ان سے استکبار کے درمیان ایک متبادل تعلق کامشاہدہ کرتے ہیں۔

اسی پہلے سبب کو اعراض و روگردانی کہا جاتا ہے ۔

اور دوسرے سبب(گناہ )کے سلسلہ میں خداوند عالم فرماتا ہے :

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(١)سورئہ انعام آیت ٣٩۔

(٢)سورئہ لقمان آیت ٧۔

(کَلاَّبَلْ رَانَ عَلٰی قُلُوْبِھِمْ مَّاکَانُوْایَکْسِبُوْنَ )(١)

''نہیں نہیں بلکہ ان کے دلوں پر ان کے اعمال کا زنگ لگ گیا ہے''

آیۂ کریمہ میں صاف طور پر یہ واضح کردیا گیا ہے کہ جن گناہوں کو انسان کسب کرتا ہے وہ دل کو زنگ آلود کردیتے ہیں جن کی وجہ سے دل پر پردہ پڑجاتا ہے اور وہ اﷲ سے منقطع ہو جاتا ہے۔

گناہوں سے دلوںکااُلٹ جانا

انسان جب بار بار گناہ کرتا ہے یہاں تک کہ اس کا دل خدا سے منقطع ہو جاتا ہے اور جب دل خدا سے منقطع ہو جاتا ہے تو وہ برعکس (پلٹ جانا )ہوجاتا ہے گو یا او پر کا حصہ نیچے اور نیچے کا حصہ اوپر ہوجاتا ہے اور اس کے تمام خصو صیات ختم ہو جاتے ہیں ۔

امام جعفرصادق علیہ السلام سے مرو ی ہے :

(کان أب یقول:مامن شٔ افسد للقلب من خطیئتہ،انّ القلب لیواقع الخطیئة،فلاتزال بہ حتّیٰ تغلب علیہ،فیصیراعلاہ اسفلہ )(٢)

''میرے والد بزرگوار کا فرمایا کرتے تھے : انسان کی خطا و غلطی کے علاوہ کوئی چیز انسان کے دل کو خراب نہیں کرسکتی ،بیشک اگر دل خطا کر جائے تو وہ اس پر ہمیشہ کیلئے غالب آجاتی ہے یہاں تک کہ دل کا او پر والا حصہ نیچے اور نیچے کا حصہ او پر آجاتا ہے ''

اور یہ بھی امام جعفرصادق علیہ السلام کا فرمان ہے :

(اذااذنب الرجل خرج ف قلبہ نکتة سودائ،فان تاب انمحت،وان زاد زادت ،حتّیٰ تغلب علیٰ قلبہ،فلایفلح بعدھاأبداً )(٣)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(١)سورئہ مطففین آیت١٤۔

(٢)بحا ر الانوار جلد ٧٣ صفحہ ٤١٢ ۔

(٣)بحار الا نوارجلد ٧٣صفحہ ٣٢٧۔

'' جب انسان گناہ کرتا ہے تو اس کے دل میں ایک سیاہ نقطہ پیدا ہو جاتا ہے اگروہ تو بہ کرلیتا ہے تو وہ مٹ جاتا ہے ، اور اگر زیادہ گناہ کرتا ہے تو وہ نقطہ بھی بڑ ھتا جاتا ہے یہاں تک کہ پور ے دل پر غالب آجاتا ہے اور پھر کبھی وہ اس (دل )پر کا میابی نہیں پا سکتا ہے ''

گناہوں کے ذریعہ انسان کے دل سے حلاوت ذکر کا خاتمہ

اﷲ کے ذکر کیلئے مومنوں کے دلوں میں حلاوت پانی جاتی ہے ، اس حلاوت و شیرینی سے  بلند تر کو ئی حلاوت نہیں ہے ، لیکن جب انسان خداوند عالم سے روگردانی کر لیتا ہے تو وہ حلاوت بھی ختم   ہو جاتی ہے اور اس کا حلاوت ذکر کا ذائقہ چکھنے والوں میں شمار نہیں کیا جاتا ہے جیسے بیمار انسان جو اپنی تند رستی کھو بیٹھتا ہے تو اس کی قوت ذائقہ بھی مفقود ہوجاتی ہے نہ یہ کہ کھا نے والی چیزوں کا ذائقہ ختم ہوجاتا ہے ، بلکہ مریض کی قوت ذائقہ مفقود ہو جاتی ہے اسی طرح جب دل خدا سے پھر جاتے ہیں تو ان سے اﷲ کے ذکر کی حلاوت ختم ہو جاتی ہے اور ان کی نظر میں اﷲ کے ذکر کی کوئی حلاوت وجاذبیت نہیں رہ جاتی ہے جیسے وہ بیمار جو اپنی سلا متی و صحت و تندرستی سے محروم ہو جاتا ہے جس کے نتیجہ میںوہ لذیذ چیزوں کی لذت کھو بیٹھتا ہے اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ لذیذ چیزوں میں لذت نہیں رہی ہے بلکہ انسان کو ان کی اشتہا و خواہش نہیں رہی ہے اسی طرح جب قلوب اپنا اعتدال کھو بیٹھتے ہیں تو ان کے درمیان سے خداوند عالم کی یاد کی شیرینی کا ذائقہ ختم ہو جاتا ہے اور خداوند عالم کی یاد اور تذکرہ کیلئے ان میں کو ئی حلاوت وجذابیت باقی نہیں رہ جا تی ہے ۔

حدیث میں آیا ہے :

(اِنَّ اللّٰہَ اَوْحیٰ اِلیٰ دَاود اَن اَدنیٰ مَاأَنَا صَانع بِعبدٍ غَیْرَعَامِلٍ بِعِلْمِہِ مِنْ سَبْعِیْنَ عَقُوْبَة بَاطِنِیَّةٍ أَنْ اَنْزع مِنْ قَلْبِہِ حَلَاوَةَ ذِکْرِْ)(١)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(١)دار السلام مو ٔ لف شیخ نوری جلد ٣ صفحہ ٢٠٠۔

''خداوند عالم نے جناب دائود کو وحی کی کہ اپنے علم پر عمل نہ کرنے والے بندہ کو ستر باطنی سزائوں میں سے سب سے کم سزا یہ دیتاہوںکہ میں اس کے دل سے اپنے ذکر کی حلاوت ختم کردیتاہوں ''

ایک شخص نے حضرت امیر المو منین علیہ السلام کی خدمت میں حاضر ہو کر عرض کیا :

(یاامیرالمؤمنین،ن قدحرمت الصلاة باللیل ۔

فقال علیہ السلام :انت رجل قد قیدتک ذنوبک )(١)

''اے  امیر المو منین ایسا لگتا ہے کہ جیسے نماز شب مجھ پر حرام ہو گئی ہے ''

آپ نے فرمایا :تو ایسا شخص ہے کہ تیرے گناہوں نے تجھ کو اپنی گرفت میں لے لیا ہے ''

حضر ت امام جعفر صادق علیہ السلام سے مروی ہے :

(انّ الرجل یذنب الذنب،فیحرم صلاة اللیل،وانّ العمل السیّیٔ أسرع ف صاحبہ من السکین ف اللحم)(٢)

''جب انسان گناہو ں پر گناہ کئے چلاجاتا ہے تو اس پر نماز شب حرام ہوجاتی ہے اور براعمل انسان کے اندر گوشت میں چھری سے کہیں زیادہ تیز اثر کرتا ہے ''

دعائوں کو روک دینے والے گناہ

براہ راست گناہوں کے انجام دینے سے انسان کا دل اﷲسے منقطع ہوجاتاہے اور جب انسان کا دل اﷲ سے منقطع ہو جاتاہے تو نہ اس میں کسی چیز کو اخذ کرنے کی صلاحیت باقی رہ جاتی ہے اور نہ ہی اس کو کوئی چیز عطا کی جاتی ہے ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(١)علل اشر ائع جلد ٢ صفحہ ٥١ ۔

(٢)اصول کا فی ٢صفحہ ٢٧٢۔

جب انسان اﷲ کی طرف سے نازل ہو نے والے قرآن کا استقبال کرتاہے تو (دعا) انسان کو اﷲ تک پہنچاتی ہے ،اور جب انسان اﷲ کے نازل کئے جانے والے قرآن سے منقطع ہو جاتا ہے تو وہ ضروری طور پر قرآن صاعد سے بھی منقطع ہوجاتاہے ۔اس کی دعا محبوس (قید )ہوجاتی ہے اور وہ اس پر کامیاب نہیں ہوپاتایہاں تک کہ اگر وہ خدا کی بارگاہ میں بہت زیادہ گڑگڑائے یاپافشاری کرے ،اصرارکرے تب بھی خدا اس کی دعا کو اوپر پہنچنے سے روک دیتا ہے اور اس کی دعا مستجاب نہیں ہوتی ہے ۔

حضرت علی علیہ السلام سے مروی ہے :

(المعصیة تمنع الاجابة)

''گناہ دعا کے مستجاب ہونے میں مانع ہوتے ہیں''

ایک شخص نے حضرت علی علیہ السلام سے خداوندعالم کے اس قول (ادعونی استجب لکم )کے سلسلہ میں سوال کیا :

(مالنا ندعو فلایُستجاب لنا؟قال:فأ دعاء یُستجاب لکم،وقد سددتم ابوابہ وطرقہ،فاتقوااللّٰہ واصلحوااعمالکم،واخلصوا سرائرکم ،وأمروا بالمعروف،وانھواعن المنکر،فیستجیب اللّٰہ معکم )(١)

'' کیا وجہ ہے کہ ہم خداوندعالم سے دعا کرتے ہیں لیکن ہماری دعا مستجاب نہیں ہوتی ہے ؟ آپ نے فرمایا تمہار ی دعا کیسے مستجاب ہو جب تم نے اس کے دروازوں اور راستوں کو بند کردیا ہے پس تم اﷲ کا تقویٰ اختیار کرو ،نیک اعمال انجام دو ،اپنے اسرار کو پاکیز ہ کرو ،امربا لمعروف کرو ،نہی عن النکر انجام دو تو خدا تمہاری دعا قبول کرے گا ''

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(١)بحارالانور جلد ٩٣صفحہ ٣٧٦۔

حضرت علی بن الحسین زین العابدین علیہ السلام سے مروی ہے :

(والذنوب التی تردّ الدعائ،وتُظلم الھواء عقوق الوالدین )(١)

''جوگناہ دعائوں کو رد کر دیتے ہیںاور فضا کو تاریک کر دیتے ہیںان سے مراد والدین سے سر کشی کرنا ہے ''

دوسری روایت میں آیاہے :

(والذنوب التی تردّالدعائ:سوء النیة وخبث السریرة،والنفاق، وترک التصدیق بالاجابة،وتاخیرالصلوات المفروضات حتّیٰ تذھب اوقاتھا،وترک التقرب الیٰ اللّہ عزّ وجلّ بالبرّ والصدقة،واستعمال البذاء والفحش فی القول)(٢)

''دعائوں کو مستجاب ہونے سے روک دینے والے گناہ یہ ہیں :بُری نیت ،خُبث باطنی، نفاق واجب صدقہ نہ دینا،واجب نمازوں کے اداکرنے میں اتنی تاخیر کرنا کہ نماز کا وقت ہی ختم ہوجائے، نیکی اور صدقہ دینے کے ذریعہ اﷲ سے قربت حاصل کرنے کو چھوڑدینا اور گفتگومیں گالیا ں دینا ''

حضرت مام محمدباقر علیہ السلام سے مروی ہے :

(انّ العبد یسأ ل اللّٰہ الحاجة،فیکون من شأنہ قضاؤھا الیٰ اجل قریب،ف ذنب العبد ذنباً،فیقول اللّٰہ تبارک وتعالیٰ للملک:لاتقض حاجتہ،واحرمہ ایاھا،فنہّ تعرض لسخط واستوجب الحرمان من)(٣)

''جب بندہ خداوندعالم سے اپنی حاجت طلب کر تاہے تو خدا کی شان دعا کو پورا کر دینا ہے مگر

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(١)معانی الاخبار صفحہ ٢٧٠۔

(٢)معانی الاخبار صفحہ ٢٧١۔

(٣)اصول کا فی جلد ٣صفحہ ٣٧٣۔

بندہ گناہ کرلیتا ہے جسکی وجہ سے دعاقبول نہیں ہوتی، خداوندعالم فرشتہ سے کہتا ہے :اس کی حاجت روانہ کرنا ،اس کو اس کی حاجت سے محروم رکھنا ،وہ مجھکو نا خشنود کرتا ہے جسکی وجہ سے وہ مجھ سے محروم ہوا ہے ''

قبولیت اعمال کے موانع

اسلامی روایات میں (اعمال کے بلند ہو نے میں رکاوٹ ڈالنے والے موانع )اور (اﷲ کی بارگاہ میں اعمال پہنچا نے کے اسباب )کاتذکرہ موجود ہے :

ان دونوں چیزوں کا انسان کے عمل سے براہ رست تعلق ہے مگر یہ کہ (موانع )اعمال کے اﷲ کی بارگاہ تک پہنچنے میں رکاوٹ ڈالتے ہیں ،اور (اسباب )اعمال کو اﷲ کی بارگاہ میںپہنچنے میں مددگار ہوتے ہیں :

ہم ذیل میں (موانع )کے متعلق اسلامی روایات میں وارد ہو نے والے ایک نمونہ کا تذکرہ کریں گے اور اسباب کے سلسلہ میں بھی ایک ہی نمونہ کا تذکرہ کریں گے اور اس مسئلہ کی اسلامی ثقافت وتربیت میں زیادہ اہمیت ہونے کی غرض سے اسکی تفصیل وتشریح ایک مناسب موقع کیلئے چھوڑدیتے ہیں ۔

صعود اعمال کے موانع (اسباب)

شیخ ابو جعفر محمد بن احمد بن علی قمی ساکن ری نے اپنی کتاب ''المنبیُ عن زھد النبی'' عبدالواحد سے اور انھوں نے معاذ بن جبل سے نقل کیا ہے :ان کا کہنا ہے کہ میں نے عرض کیا: میرے لئے ایک ایسی حدیث بیان فر ما دیجئے جس کو آپ نے رسول اکر م  ۖ سے سنا ہو اور حفظ کیا ہو انھوں نے کہا ٹھیک ہے پھر معاذ نے گریہ کرتے ہو ئے فر مایا :میرے ماں باپ آپ پر قربان ہوںتو  اس وقت مجھ سے یہ حدیث نقل فر ما ئی جب میں ان کے پاس کھڑا ہوا تھا:

''بینا نسیراذ رفع بصرہ الی السماء فقال:الحمدﷲ الذ یقض ف خلقہ ماأحبّ،ثم قال:یامعاذ،قلت:لبیک یارسول اللّٰہ وسید المؤمینن قال: یا معاذ،قلت، لبیک یارسول اﷲ امام الخیرونب الرحمة فقال:احدثک شیئاًماحدّث بہ نب امتہ ان حفظتہ نفعک عیشک،وان سمعتہ ولم تحفظہ انقطعت حجتک عند اللّٰہ،ثم قال:انّ اللّٰہ خلق سبع أملاک قبل ان یخلق السماوات فجعل فی کل سماء ملکاًقدجللھا بعظمتہ،وجعل علیٰ کل باب من ابواب السماوات ملکاًبواباً،فتکتب الحفظة عمل العبد من حین یصبح الیٰ حین یمس،ثم ترتفع الحفظة بعملہ ولہ نورکنور الشمس حتّی اذابلغ سماء الدنیا فتزکیہ وتکثرہ فیقول الملک:قفوا واضربوابھذاالعمل وجہ صاحبہ،اناملک الغیبة،فمن اغتاب لاادع عملہ یجاوزن الیٰ غیر،امرن بذالک رب۔

قال :ثم تجیٔ الحفظة من الغد ومعھم عمل صالح،فتمّر بہ فتزکیہ و تکثرہ حتّی تبلغ السماء الثانیة،فیقول الملک الذ فالسماء الثانیة:قفوا واضربواھذ االعمل وجہ صاحبہ انّما اراد بھذاعرض الدنیا،اناصاحب الدنیا، لاادع عملہ یتجاوزن الیٰ غیر۔

قال:ثم تصعد الحفظة بعمل العبدمبتھجابصدقة وصلاة فتعجب بہ الحفظة،وتجاوز بہ الیٰ السماء الثالثة،فیقول الملک:قفوا واضربوا ھذاالعمل وجہ صاحبہ وظہرہ،أناملک صاحب الکبر،فیقول:انہ عمل وتکبرّعلی الناس ف مجالسھم؛امرن رب أن لاأدع عملہ یتجاوزن الیٰ غیر۔

قال:وتصعد الحفظة بعمل العبد یزھرکالکوکب الدر ف السمائ،لہ دو بالتسبیح والصوم والحج ،فتمّر بہ الی السماء الرابعة فیقول لہ الملک:قفوا واضربوا بھذا العمل وجہ صاحبہ وبطنہ،اناملک العُجب،انہ کان یعجب بنفسہ انہ عمل وادخل نفسہ العُجب،امرن ربّ ان لاادع عملہ یتجاوز ن الی غیر۔

قال وتصعد الحفظة بعمل العبدکالعروس المزفوفة الی اھلھا،فتمرّ بہ الی ملک السماء الخامسة بالجھاد والصلاة (والصدقة )مابین الصلاتین،ولذلک العمل رنین کرنین الابل وعلیہ ضوء کضوء الشمس،فیقول الملک:قفوا انا ملک الحسد،واضربوابھذ االعمل وجہ صاحبہ،واحملوہ علیٰ عاتقہ،انہ کان یحسد مَنْ یتعلم اویعمل ﷲ بطاعتہ،واذا رایٰ لاحد فضلاف العمل والعبادة حسدہ ووقع فیہ،فیحملہ علیٰ عاتقہ ویلعنہ عملہ ۔

قال:وتصعد الحفظة بعمل العبد من صلاة وزکاة وحج وعمرة، فیتجاوزون بہ الی السماء السادسة،فیقول الملک:قفوا اناصاحب الرحمة واضربوابھذاالعمل وجہ صاحبہ،واطمسواعینیہ لانّ صاحبہ لم یرحم شیئاًاذا اصاب عبداًمن عباداﷲ ذنب للاخرة اوضرّ ف الدنیاشمت بہ،امرن بہ رب ان لاادع عملہ یجاوزن ۔

قال وتصعد الحفظةبعمل العبد بفقہ واجتھاد وورع ولہ صوت کالرعد، وضوء کضوء البرق،ومعہ ثلاثة آلاف ملک،فتمرّبہ الی ملک السماء السابعة، فیقول الملک:قفوا واضربوا بھذاالعمل وجہ صاحبہ اناملک الحجاب احجب کل عمل لیس ﷲ،انّّہ ارادرفعة عندالقُوّاد،وذکراً ف المجالس وصیتاًف المدائن، امرن رب ان لاادع عملہ یتجاوزن الی غیر مالم یکن اﷲ خالصاً۔

قال:وتصعد الحفظة بعمل العبد مبتھجاً بہ من صلاة وزکاة وصیام وحج وعُمرة  وحسن الخلق وصمت وذکرکثیر ،تشیعہ ملائکة السماوات والملائکة السبعة بجماعتھم،فیطئاُون الحجب کلّھا حتیٰ یقوموابین یدیہ سبحانہ،فیشھدوا لہ بعمل ودعاء فیقول:انتم حفظة عمل عبد،وانا رقیب علیٰ ماف نفسہ انہ لم یردنی بھذا العمل۔وعلیہ لعنت فیقول الملائکة:علیہ لعنتک ولعنتنا قال :ثم بکیٰٰ معاذقال:قلت:یارسول اﷲ،ماا عمل واخلص فیہ ؟قال:اقتد بنبیک یامعاذف الیقین قال:قلت انت رسول اﷲ وانامعاذ قال:وان کان فی عملک تقصیر یامعاذ فاقطع لسانک عن اخوانک وعن حملة القرآن،ولتکن ذنوبک علیک لا تحملھاعلیٰ اخوانک،ولاتزک نفسک بتذ میم اخوانک،ولاترفع نفسک بوضع اخوانک،ولاتراء بعملک،ولاتدخل من الدنیاف الآخرة،ولا تفحش ف مجلسک لک یحذروک لسوء خلقک ولاتناج مع رجل وانت مع آخر،ولا تعظم علی الناس فتنقطع عنک خیرات الدنیا،ولاتمزق الناس فتمزقک کلاب اھل النار،قال اﷲ تعالیٰ:(وَالنّٰٰا شِطٰاتِ نَشْْطاًً)(١)افتدری ماالناشطات ؟انھا کلاب اھل النار تنشط اللحم واعظم قلت:ومن یطیق ھذہ الخصال ؟قال:یامعاذ، انہ یسیر علیٰ من یسّرہ اﷲ تعالیٰ علیہ قال:ومارایت معاذاً یکثرتلاوة القرآن کما یکثر تلاوة ھذاالحدیث ۔(٢)

''انھوں نے فرمایا :ہم راستہ چلے  جا رہے تھے تو انھوں نے اپنی آنکھ آسمان کی طرف   اٹھا تے ہو ئے فر مایا :تمام تعریفیں اس خدائے وحدہ لا شریک کیلئے ہیں وہ اپنی مخلوق میں جو چا ہتا ہے وہ فیصلہ کرتا ہے۔پھر انھوں نے کہا :اے معاذ ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(١)سورئہ نازعات آیت٢۔

(٢)ہم نے یہ طویل حدیث کتاب عدة الداعی کے صفحہ ٢٢٨۔٢٣٠ سے نقل کی ہے ،اور اس کتاب میں اس حدیث کے حاشیہ میں تحریر ہے کہ :سلیمان بن خالد سے مروی ہے کہ میں نے ابا عبد اللہ علیہ السلام سے خداوند عالم کے اس قول : (وَقَدِمْنَااِلیٰ مَاعَمِلُوْامِنْ عَمَلٍ فَجَعَلْنَاہُ ھَبَائً مَنْثُوراً)سورئہ فرقا ن آیت ٢٣''پھر ہم انکے اعمال کی طرف توجہ کریں گے اور سب کو اڑتے ہوئے خاک کے ذروں کے مانند بنا دیں گے ''کے سلسلہ میں سوال کیا تو آپ نے فرمایا : خداکی قسم اگر انکے اعمال قباطی سے بھی زیادہ سفید(بہت زیادہ نورانی )رہے ہوں گے لیکن جب ان کے سامنے کسی حرام چیز کو پیش کیا جاتاتھا تو اسکو ترک نہیں کرتے تھے ''مرآة العقول میں آیا ہے :مذکورہ مطلب میں اس بات کی دلالت ہے کہ کھلم کھلا گناہ کر نے سے نیکیاں ختم ہو جاتی ہیں اور احباط کا مطلب یہ ہے کہ اچھا ئیوںپر ثواب نہ ملنا اسکے بالمقابل تکفیر ہے یعنی کسی برائی پر عذاب نہ ملنا ۔

میں نے کہا :لبیک یارسول اللہ  ۖاور مو منین کے سردار ۔فرمایا : اے معاذ میں نے عرض کیا :لبیک  یا رسول اللہ خیر کے امام اور نبی رحمت ،انھوں نے کہا میں تم سے ایک حدیث نقل کر رہا ہوں جیسی کسی نبی نے اپنی امت سے نقل نے کی ہو اگر تم اس کو حفظ کروگے تو زندگی میں مستفید ہو گے اگر سن کر حفظ نہیں کروگے تو تم پرخداوند عالم کی حجت تمام ہو جا ئے گی ۔پھر انھوں نے کہا کہ خداوند عالم نے آسمانوں کی خلقت سے پہلے سات فر شتے خلق کئے تو ہر اس آسمان میں ایک فرشتہ معین کیا جس کو اپنی عظمت کے ذریعہ مکرم فر مایاآسمانوں کے ہر در وازے پر ایک نگہبان فر شتہ معین فر مایا تووہ انسان کے اعمال   نا مہ میں اس بندہ کا صبح سے شام تک کا عمل لکھتے ہیں پھر یہ لکھنے والے فرشتے اس کے اعمال نا مہ کو لیکر اوپر جا تے ہیں اس کی روشنی دھوپ کے مانند ہو تی ہے یہاں تک کہ جب وہ آسمان دنیا پر پہنچتا ہے تو فرشتے اس کے عمل کو پاک و صاف و شفاف اور زیادہ کر دیتے ہیں تو فرشتہ کہتا ہے :ٹھہرو اور اس عمل کو صاحب عمل کے منھ پر ما ردو میں غیبت کا فرشتہ ہوں جو غیبت کرتا ہے میں اس کے عمل کو اپنے علاوہ کسی دو سرے تک نہیں پہنچنے دوںگا میرے پرور دگار نے مجھے یہ حکم دیا ہے۔

رسول اکر م  ۖ نے فرمایا : اگلے دن یہ نا مہ ٔ اعمال ،عمل صالح کے ساتھ تزکیہ اور زیادہ  ہو نے کی صورت میں دو سرے آسمان تک پہنچتا ہے ،تو دو سرے آسمان والا نگہبان فرشتہ کہتا ہے :ٹھہرو

اور اس عمل کو صاحب عمل کے منھ پر ماردو چونکہ اس نے اس عمل کے ذریعہ اپنے کو دنیا کے سامنے پیش کر نے کی کو شش کی ہے اور میں صاحب دنیا ہوں لہٰذا میں اس عمل کو اپنے علاوہ کسی دو سرے تک نہیں جا نے دو نگا ۔

فرمایا :پھر وہ لکھنے والے اس نامہ ٔ اعمال کو صدقہ اور نماز سے پُر،خو شی خو شی اوپر لیجا تے ہیں اور وہ تیسرے آسمان سے عبور کر جاتا ہے تو فرشتہ کہتا ہے :ٹھہرو اور اس عمل کو صا حب عمل کے منھ اور پیٹھ پر مار دومیں صاحب کبر کا فر شتہ ہوں وہ کہے گا :اس نے اس عمل کے ذریعہ لوگوں کی مجلسوںمیں بیٹھ کر تکبر کیا میرے پروردگار نے مجھے یہ حکم دیا ہے کہ میں اس عمل کو اپنے علاوہ کسی دوسرے تک نہ پہنچنے دوں ۔

فرمایا :یہ نا مہ ٔ اعمال بندہ کے اس عمل کی وجہ سے جس میں تسبیح ،روزہ اور حج ہو گا ان کے ذریعہ آسمان میں کوکب دری کی طرح روشن ہو کر چوتھے آسمان سے گذر جا ئیگا تو فرشتہ ا س سے کہے گا : اس عمل کو صاحب عمل کے منھ اور پیٹ پر ماردو ،میں عُجب کا فرشتہ ہوں وہ اپنے نفس میں اس عمل کے ذریعہ عجب کرتا تھا اور اس کے نفس میں عُجب داخل ہو گیا ہے ؛میرے پرور دگارنے مجھے یہ حکم دیا ہے کہ یہ عمل میرے علاوہ کسی اور تک نہ پہنچنے پائے ۔

فرمایا :یہ نا مہ ٔ  اعمال بندہ کے عمل کے ذریعہ اپنے شوہر کے گھر کی طرف جانے والی دُلہن کے مانند جہاد ،نماز اوردونمازوں کے درمیان دئے جا نے والے صدقہ سے پانچویں آسمان سے گذر جائیگا یہ اونٹ کی طرح آواز بلند کررہا ہوگا اور آفتاب کی طرح روشن ہوگا ،پس فرشتہ کہے گا: ٹھہرو میں حسد کا فرشتہ ہوں اور اس عمل کو صاحب عمل کے منھ پر مار دو اور اس کے کاندھوں پر رکھ دو ؛یہ طالب علم اور اللہ کی اطاعت کرنے والے سے حسد کرتا تھا اور جب بھی یہ عمل اور عبادت میں کسی اور کو اپنے سے برتر دیکھتا تھا تو اس سے حسد کرتا تھا لہٰذا اس عمل کو اسی کے کاندھوں پر رکھ دو اور اس کا عمل اس پر لعنت کریگا ۔

فرمایا :وہ نا مہ ٔ  اعمال نماز ،زکات ،حج اور عمرہ کے ذریعہ چھٹے آسمان سے گذر جا ئیگا تو فرشتہ کہے گا :ٹھہرو میں صاحب رحمت ہوں اس عمل کو صاحب عمل کے منھ پر ماردو اور اس کی آنکھوں کو بے نور کردو چونکہ اس شخص نے ذرہ برابر رحم نہیں کیاجب اللہ کا کو ئی بندہ اُخروی گناہ یا دنیوی مصیبت میں مبتلا ہو جاتا ہے تو اس کی شماتت کی جا تی ہے ۔

فرمایا :یہ نا مہ ٔ  اعمال بندہ کے فقہ ،اجتہاد اور ورع و پرہیزگاری کے ذریعہ جو بجلی کی طرح کڑک رہا ہوگا ،برق کی طرح اس کی روشنی ہو گی اور اس کے تین ہزار فرشتے ہوں گے یہ ساتویں آسمان سے گذر جائیگا تو فرشتہ کہے گا :ٹھہرو اس عمل کو صاحب عمل کے منھ پر ماردو میں حجاب کا فرشتہ ہوں اس نے جو عمل اللہ کیلئے نہیں تھا اس کو چھپایا؛اس نے رہنمائوں کی نظر میں بلندمرتبہ ،نشستوں میں اپنے تذکرہ اور شہروں میںاپنی شہرت کی تمنّا کی تھی ،میرے پروردگار نے مجھ کو حکم دیا ہے کہ جو عمل خالص اللہ کے لئے نہ ہو اس کو میں اپنے علاوہ کسی دوسرے تک نہ جانے دوں ۔

فرمایا :یہ نا مہ ٔ  اعمال بندہ کے عمل کے ذریعہ خو شی خوشی جس میں نماز ،زکات ،روزے ،حج، عمرہ ،حُسن خلق ،صمت و وقاراور ذکر کثیر ہوگا آگے بڑھے گا جس کے ساتھ آسمان و زمین کے ملا ئکہ   ہو ں گے جوتمام پردوں کو روندھ دیتے ہیںیہاں تک کہ پروردگار عالم کے سامنے جا کھڑے ہوں گے اور وہ سب اس بندہ کے اس عمل اور دعا کی گو اہی دیں گے پس پروردگار آواز دے گا :تم نے میرے بندہ کا یہ نا مہ ٔ اعمال لکھا ہے اور میں بذات خود اس کا دیکھنے والا ہوں ۔اس عمل کو میرے پاس نہ لائو اس پر میری لعنت ہے ۔تو ملا ئکہ کہیںگے :اس پر تیری اور ہم سب کی لعنت ہے ۔

فرما یا :پھر معاذ گریہ کرنے لگے ۔

معاذ نے کہا میں نے رسول اللہ  ۖ کی خدمت میں عرض کیا :میں کیسے خالص عمل   انجام دوں ؟

فرمایا : اے معاذ تم یقین میں اپنے نبی اکرم  ۖ کی اقتدا کرو ۔

معاذ نے عرض کیا :یا رسول اللہ  ۖ آپ رسول خدا ہیں اور میں معاذ ہوں ۔

فرمایا :اگر تمہارے عمل میں کو ئی کو تا ہی ہے تو تم اپنے برادران کی غیبت کرنے سے پرہیز کرو قرآن کے حاملین کے سلسلہ میں اپنی زبان بند رکھو تمہارے گناہوں کا بوجھ تمہارے بھا ئیوں پر نہیں پڑنا چا ہئے ،اپنے بھا ئیوں کی برائی کرکے خود کو بہتر مت سمجھو ،اپنے بھائیوں کی تو ہین کرکے خود کو بلند مرتبہ مت سمجھو، ریاکاری نہ کرو،دنیاکے ذریعہ آخرت میں داخل نہ ہواگر تم کسی سے سرگو شی کر رہے ہو تو دوسرے شخص کے ساتھ اسی حال میں سر گوشی مت کرو ،لوگوں پر بوجھ مت بنو کہ تم سے دنیا کی     بھلا ئیاں رو گردانی کر جا ئیں ،لوگوں میں تفرقہ نہ پیدا کرو ورنہ جہنم کے کتّے تم کو پاش پاش کرڈالیں گے خداوند عالم کا فرمان ہے :(وَالنّاشِطَاتِ نَشْطاً)''اور آسانی سے کھول دینے والے ہیں'' کیا تم جانتے ہو کہ ناشطات کیا ہے ؟یہ جہنم کے کتّے ہیں جو گوشت اور ہڈیوں کو کھا جاتے ہیں ۔

معاذ نے عرض کیا :ان خصلتوں کی کس میں طاقت ہے ؟

فرمایا :اے معاذیہ اس شخص کیلئے بہت آسان ہیں جن کیلئے خداوند عالم ان کو آسان کردیاہے

فرمایا :میں نے معاذ کو اتنی زیادہ قرآن کی تلا وت کرتے نہیں دیکھا جتنی وہ اس حدیث کی تلاوت کرتے تھے ''

اعمال کو اﷲ تک پہنچا نے والے اسباب

موانع کے بالمقابل کچھ ایسے اسباب ہیں کہ جب اعمال اﷲ کی بارگاہ تک پہنچنے سے عاجز  ہو جاتے ہیں تووہ اسباب جو انسان کے اعمال کو اﷲ کی بارگاہ تک پہنچا تے ہیں اور یہ اسباب ،موانع کے بالمقابل ہیں :ان اسباب کا روایت نبوی میں تذکرہ مو جود ہے جن کو ہم علامہ مجلسی کی نقل روایت کے مطابق جس کو انھوں نے امالی شیخ صدوق سے بحارالانوار میں نقل کیا ہے بیان کرتے ہیں :

شیخ صدوق نے ((امالی )میں سعید بن مسیب سے انھوں نے عبد الر حمن بن سمرہ سے نقل کیا ہے :(ہم ایک دن رسول اﷲ  ۖکی خدمت بابر کت میں حاضر تھے کہ آپ نے فرمایا :

فقال:ان رایت البارحة عجائب ،قال:فقلنا:یارسول اﷲ، ومار أَیت ؟ حدَّثنا بہ فداک انفسناواھلوناواولادنا ؟فقال:رأَیت رجلاً من اُمت وقد أَتاہ ملک الموت لیقبض روحہ،فجاء ہ برّہ بوالدیہ فمنعہ منہ ۔

ورأَیت رجلاًمن اُمت قد بسط علیہ عذاب القبر،فجائَ ہ وضو ؤہ فمنعہ منہ ۔

ورأَیت رجلاًمن اُمت قداحتوشتہ الشیاطین،فجائَ ہ ذکرُاﷲعزّوجلّ فنجّاہ من بینھم ۔

ورأ یت رجلاًمن اُمت والنبیّون حلقاًکلمااتیٰ حلقة طردوہ،فجائَ ہ اغتسالہ من الجنابة فاخذبیدہ فأجلسہ الی جنبھم ۔

ورأ یت رجلاً من اُمت بین یدیہ ظلمة ومن خلفہ ظلمة وعن یمینہ ظلمة وعن شمالہ ظلمة ومن تحتہ ظلمة مستنقعاًف الظلمة،فجائَ ہ حجہ وعمرتہ فأخرجاہ من الظلمة وادخلاہ النور ۔

ورأَ یت رجلاً من اُمت یُکلّم المُؤمنین فلایُکلمونہ،فجائَ ہ صلتہ للرحم فقال:یامعشرالمؤمنین،کلّموہ فانّہ کان واصلاً  لرحمہ،فکلمہ المؤمنون وصافحوہ وکان معھم ۔

ورأ یت رجلاً من اُمت تقی وجہہ النیران و شررھا بیدہ ووجھہ،فجاء تہ صدقتہ فکانت ظلّاً علیٰ راسہ وستراً علیٰ وجھہ۔

ورأَ یت رجلاً من اُمت قد اخذ تہ الزبانیة من کل مکان فجاء ہ امرہ بالمعروف ونھیہ عن المنکر فخلّصَاہ من بینھم وجعلاہ مع ملائکة الرحمة۔

ورأ یت رجلاً من اُمت جاثیاًعلیٰ رکبتیہ بینہ و بین رحمة اللّٰہ حجاب فجاء ہ حسن خلقہ فأخذ بیدہ فأدخلہ فی رحمة اللّٰہ ۔

ورأَ یت رجلاً من اُمتی قد ھوت صحیفتہ قبل شمالہ فجائَ ہ خوفہ من اللّٰہ عزّ وجلّ فأخذ صحیفتہ فجعلھا فی یمینہ ۔

ورأَ یت رجلاً من اُمت قد خفت مو ازینہ،فجائَ ہ افراطہ فثقلوا مو ازینہ۔

ورأَ یت رجلاً من اُمت قائماً علیٰ شفیرجھنم،فجائَ ہ رجائَ ہ فی اللّٰہ عزّو جلّ فاستنقذہ بذالک۔

ورأَ یت رجلاً من اُمت قد ھویٰ ف النارفجائَ تْہ دموعہ الت بکیٰ من خشیة اللّٰہ فاستخرجتہ من ذلک۔

ورأَ یت رجلاً من اُمت علیٰ الصراط یرتعدکما ترتعدالسعفة فی یوم ریح عاصف فجائَ ہ حسن ظنہ باللّٰہ فسکن رعدتہ ومضیٰ علی الصراط۔

ورایت رجلاً من اُمت علیٰ الصراط یزحف احیاناًویحبواحیاناًویتعلق احیاناًفجائَ تْہ صلاتہ علیہ فأقامتہ علیٰ قدمیہ ومضیٰ علیٰ الصراط۔

ورأَ یت رجلاً من اُمت انتھیٰ الیٰ ابواب الجنة کلماانتھیٰ الیٰ باب اُغلق دونہ،فجاء تہ شھادة ان لا الٰہ الّا اللّٰہ صادقاًبھا،ففتحت لہ الابواب و دخل الجنة''(١)

''میں نے متعدد عجائبات کا مشاہد ہ کیا ہے میں نے عرض کیا: یا رسول اﷲ آپ نے کن کن عجائبات کا مشاہدہ فرمایا؟ میری جان آپ پر فدا ہو ذراان عجائبات کی ہمارے اور ہماری اولاد کیلئے تفسیر تو فرما دیجیے؟ آپ نے فرمایا :میںنے اپنی امت میں سے ایک شخص کو دیکھا کہ ملک الموت اس کی روح قبض کر نے کیلئے آیا ہے تو وہ فرشتہ اس (شخص )کی اپنے والدین کے ساتھ نیکیوں کی وجہ سے اس کی روح قبض نہ کر سکا ۔

میں نے اپنی امت کے ایک شخص کو دیکھا جس کو شیا طین نے ڈرا رکھا تھا تو اﷲ عزوجل کے تذکرہ نے اس کو ان شیاطین سے نجات دلائی ۔

میں نے اپنی امت کے ایک ایسے پیاسے شخص کو دیکھا کہ جب بھی وہ پانی کے حوض پر پانی پینے کی غرض سے پہنچتا تھا تو اس کو پانی پینے نہیں دیاجاتا تھا تو ماہ رمضان کے روزوں نے آکر اس ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(١)بحار الا نوار جلد ٧ صفحہ ٢٩٠۔ ٢٩١ ۔

کو سیراب کیا گیا ۔

میں نے اپنی امت کے ایک شخص کو دیکھا کہ انبیاء علیہم السلام حلقہ ،حلقہ بنائے ہوئے بیٹھے ہیں تو جب بھی یہ شخص حلقہ کے پاس پہنچتا تھا تو اس کو نزدیک آنے سے منع کردیا جاتا تھا ،لیکن جب وہ غسل جنابت کرکے آیا تو انھوں نے اس کا ہاتھ پکڑ کراپنے پہلو میں بیٹھایا ۔

میں نے اپنی امت کے ایک ایسے شخص کو دیکھا جسکے آگے پیچھے ،دائیں، بائیں اور اس کے نیچے کی طرف تاریکی ہی تاریکی تھی اور وہ اس تاریکی کے سبب جانکنی کے عالم میں تھا تو اس کے انجام دئے ہوئے حج وعمر ہ نے آکر اس کی جان بچائی اور تاریکی سے نکال کر روشنی میں داخل کیا ۔

میں نے اپنی امت کے ایک شخص کو دیکھا کہ مومنین سے کلام کر تا ہے لیکن مو منین اس سے بات نہیں کر تے ہیں ۔تو اس شخص کے صلۂ رحم نے کہا اے مومنواس سے کلام کرو کیو نکہ اس نے صلۂ رحم انجام دیاہے تو مومنوں نے اس سے کلام کیا ،مصافحہ کیا گو یا کہ وہ ان کے ساتھ تھا ۔

میں نے اپنی امت کے ایک شخص کو دیکھا جس کے ہاتھ اور چہرہ آگ کی سوزش سے جل رہے تھے تو اس کے دئے ہو ئے صدقہ نے اس کے سر پر آکر سایہ کیا اور اس کے چہرے کو چھپالیا۔

میں نے اپنی امت کے ایک شخص کو دیکھا جس کی ہر جگہ سے آگ کے شعلے نکل رہے تھے تو اس کے کئے ہوئے امر با لمعروف اور نہی عن المنکر نے اس کو ان شعلوں سے نجات دلائی اور اس کے لئے رحمت کے فرشتہ مقررفرمائے ۔

میں نے اپنی امت کے ایک ایسے شخص کو دیکھا جو گھٹنیوں کے بھل چل رہا تھا اور اس کے اور اﷲ کی رحمت کے درمیان پر دے حائل ہو گئے تھے تو اس کے حسن خلق نے اس کا ہاتھ پکڑ کر اﷲ کی رحمت میں داخل کیا ۔

میں نے اپنی امت کے ایک ایسے شخص کو دیکھا جس کا نامۂ اعمال اس کے بائیں ہاتھ میں تھا تو اﷲ کے خوف نے اس کا وہ نا مۂ اعمال اس کے بائیں ہاتھ سے لیکر اس کے دائیں ہاتھ میں دیدیا ۔

میں نے اپنی امت کے ایک ایسے شخص کو دیکھا جس کے اعمال کا پلڑ ا بہت ہلکا تھا تو اس کے دوسروں کو سیراب کرنے نے اس کو وزنی بنایا ۔

میں نے اپنی امت کے ایک شخص کو جہنم کے پاس کھڑے دیکھا تو اﷲ تعالیٰ سے امید نے اس کو جہنم سے نجات دلائی ۔

میں نے اپنی امت کے ایک شخص کو جہنم کی آگ میں جلتے دیکھا تو اس کے وہ آنسو جو اﷲ کے خوف کی وجہ سے اس کی آنکھوں سے جاری ہوئے تھے انھوں نے اس کو جہنم کی آگ سے نکالا ۔

میں نے اپنی امت کے ایک ایسے شخص کو صراط پر دیکھا جو سخت آندھیوں میں خرمہ کے درخت کی شاخ کی طرح ہل رہا تھا تو اس کے اﷲ سے حسن ظن نے اس کو ہلنے سے روکا اور وہ صراط سے گذر گیا ۔

میں نے اپنی امت میں سے پل صراط پر ایک ایسے شخص کو دیکھا جو آگے بڑھنے کیلئے اپنے چاروں ہاتھ پیر مار رہا تھا اور کبھی اپنے کو کھینچے جارہاتھا اور کبھی اس پر لٹک رہا تھا تو اس کی نماز نے آکر اس کے قدموں پر کھڑ اکیا اور پل صراط سے گذارا ۔

میں نے اپنی امت کے ایک ایسے شخص کو دیکھا جس پر جنت کے تمام دروازے بند ہو گئے تھے تو اس کی (اشھدا ن لا الٰہ الااﷲ )کی گواہی نے اس کی تصدیق کی تو اس کیلئے جنت کے دروازے کھل گئے اور وہ جنت میں چلا گیا ۔


source : http://www.shianet.in
  701
  0
  0
امتیاز شما به این مطلب ؟

latest article

بلی اگر کپڑوں سے لگ جائے تو کیا ان کپڑوں میں نماز صحیح ...
انسان کو پیش آنے والی پریشانیوں اور مصیبتوں کا فلسفہ ...
امام سجاد کو زین العابدین کیوں کہا جاتا ہے؟
کیا صدقات کو مساجد کے امور میں خرچ کیا جا سکتا ہے؟
جب غدیر میں رسول نے علی ولی اللہ کی گواہی دے دی تو پھر ...
مومن کون‘ مہاجر کون اور مسلم کون ہے؟
گھر کو کیسے جنت بنائیں؟ دوسرا حصہ
کیا آزر حضرت ابرہیم (علیه السلام) کا باپ تھا
امام حسین علیہ السلام کون ہیں؟
مجلس کیا ہے

 
user comment