اردو
Monday 14th of October 2019
  717
  0
  0

کریمۂ اہل بیت حضرت معصومۂ قم(‏ع)

قم میں حضرت معصومہ(ع)  کا روضہ  مشہد ميں حضرت امام رضا(ع) کے روضۂ اقدس کے بعد ایران کا دوسرا بارونق مزار ہے جہاں روزانہ ہزاروں زائرین آپ (ع) کی زیارت کرتے ہيں۔

 حضرت معصومہ(ع)، ساتویں امام فرزندِ رسول (ص) حضرت امام موسٰی بن جعفر (ع) کی دختر گرامی اور حضرت امام رضا(ع)  کی ہمشیرہ ہیں۔ آپ (ع)  کا اصل نام  فاطمہ ہے۔ آپ (ع) اور امام رضا(ع) ایک ہی مادر سے پیدا ہوئے ہيں، جن  کے مشہور نام خیزران، ام البنین اور نجمہ ہیں ۔ تاریخی روایات کے مطابق حضرت فاطمۂ معصومہ یکم ذی العقدہ ٣٧١ھ ق کو مدینۂ منوّرہ میں پیدا ہوئيں، لیکن آپ (ع)  کی تاریخ وفات میں اختلاف ہے ۔  ایک روایت  کے مطابق آپ (ع) نے ١٠ ربیع الثانی کو وفات پائی جب کہ ایک اور روایت میں کہا گیا ہے کہ  آپ (ع)  کی تاریخ رحلت ١٢ ربیع الثانی ٢٠١ ہجری ہے۔ بعض مآخذوں  کے مطابق آپ (ع) نے ٨ شعبان کے دن دارِ فانی سے کوچ کیا۔

 حضرت فاطمۂ معصومہ(ع) اہل بیت رسول (ص)  کی اُن ہستیوں میں سے ہیں جو مقام عصمت کے حامل نہ ہوتے ہوئے بھی عظیم شخصیت کی مالک تھیں جیسے حضرت زینب کبری (ع) اور حضرت ابوالفضل العبّاس (ع)۔ آپ (ع)  کی فضیلت کا اندازہ اس سے لگا سکتے ہيں کہ حضرت امام جعفر الصادق (ع) نےآپ (ع)  کے والد گرامی حضرت امام موسٰی کاظم(ع)  کی ولادت سے قبل ہی آپ (ع) کے مدفن  کی پیش گوئی کرتے ہوئے آپ (ع)  کی زیارت کی فضیلت بیان فرمائی تھی۔ حضرت امام جعفر الصادق (ع) نے اپنے ایک صحابی سے حضرت امام موسٰی بن جعفر کی طرف بچپن میں اشارہ کرتے ہوئے فرمایا : یہ میرا بیٹا موسٰی ہے، خداوندِ عالم اس سے مجھے ایک بیٹی عطا کرے گا جس کا نام فاطمہ ہوگا ۔ وہ قم کی سرزمین میں دفن  ہوجائے گی اور جس نے قم میں اس کی زیارت  کی، اس پر بہشت واجب ہوگی ۔ ایک اور روایت ہے کہ  آپ (ع) نے فرمایا : بہت جلد قم میں میری اولاد ميں سےایک  خاتون دفن ہوگی جس کا نام فاطمہ ہے اور جو اس کی قبر کی زیارت کرے گا اس پر جنت واجب ہوگی۔ اس طرح کی احادیث و روایات حضرت معصومہ(ع)  کے عظیم مقام و  مرتبے کا  منہ بولتا  ثبوت ہيں۔ حضرت امام جعفر الصادق (ع)  کی زباں سے زائر حضرت معصومہ(ع)  کے لئے جنت کی بشارت اور وہ بھی وجوب کی حد تک بڑي اہمیت کی حامل ہے، حضرت امام رضا(ع) کو چھوڑ کر، حضرت امام موسٰی کاظم (ع)  کی اولاد ميں حضرت معصومہ(ع) ہی وہ ہستی ہیں جن کی فضیلت کے بارے میں آئمہ معصومین (ع)  کی روایات ملتی ہيں ۔ یہاں  یہ  بات قابل  توجہ  ہے  کہ آئمہ  میں  سب  سے زيادہ  اولاد حضرت امام موسٰی کاظم (ع) ہی کی تھیں۔ آپ (ع)  کے برادر گرامی حضرت امام رضا(ع) سے روایت کی گئی ہے :

من زارھا عارفاً ِبحقّھا فلہُ الجنّۃُ  " جس نے اُن (حضرت معصومہ(ع) ) کے حق  کو جانتے  ہوئے، اُن  کی زیارت  کی اس کے لئے جنت ہے"

آئیے آپ کو حضرت معصومہ(ع) کے علمی مقام اور فضل و دانش سے متعلق ایک واقعہ سناتے ہيں ۔ ایک دن محبّان اہل بیت (ع)  کا ایک  گروہ اپنے رہبر و آقا حضرت امام موسٰی کاظم (ع) سے کچھ علمی جوابات حاصل کرنے  کے لئے مدینۂ منورہ  وارد  ہوا،  آپ (ع) سفر پر تھے لہٰذا  اس گروہ  کے افراد نے اپنے سوالات لکھ کر آپ ( ع)  کے دولت کدے  کے افراد  کے حوالے  کئے۔ وہ لوگ جاتے وقت حضرت امام موسٰی کاظم (ع)  کے دولت کدے  پر گئے تو دیکھا حضرت معصومہ(ع)  نے اُن تمام سوالات کے جواب لکھ دیئے تھے،  جب کہ اس وقت آپ (ع)  کم سن تھیں، وہ لوگ اپنے سوالات کے جواب پا کر بہت خوش ہوئے اور اپنے وطن واپس چل پڑے ،  راستے میں وہ حضرت امام موسٰی کاظم (ع)  سے ملے تو پورا واقعہ آپ(ع)  کو سنایا، امام (ع) نے ان سے وہ جوابات مانگے، جب آپ (ع)نے دیکھا حضرت معصومہ(ع) نے تمام سوالات کےجواب صحیح لکھے ہیں، آپ (ع) نے فرمایا:

 فداھا ابوھا " اُس  کا  باپ  اُس  پر  قربان ہو"  یہ واقعہ حضرت معصومۂ قم  کی علمی منزلت کی ایک واضح دلیل ہے۔ حضرت معصومہ(ع) اسلامی علوم  پر دسترس  رکھتی  تھیں،  آپ (ع) عالمہ  فاضلہ ہونے  کے ساتھ محدثہ بھی تھيں۔  آپ ( ع)  سے متعدد احادیث نقل کی گئی ہیں، ان میں سے ایک مشہور حدیث، واقعۂ  غدیر  سے متعلق ہے۔ حضرت معصومہ(ع)  کی معروف  و غیر  مشہور زیارتوں  میں آپ (ع)  کو حجّت، امین، حمیدہ، رشیدہ، تقیہ، نقیہ، رضیہ، طاہرہ اور برّہ کے القاب سے یاد  کیا گيا ہے ۔غرض یہ کہ حضرت معصومہ(ع) معصومین (ع)  کی طرح  معصوم عن الخطا تو نہيں تھیں لیکن  آپ  گناہوں  سے  پاکیزگي  کے مقام پر فائز ہیں یعنی آپ (ع) کی عصمت اکتسابی ہے۔  آپ کو شفاعت کا مقام بھی حاصل ہے۔ حضرت امام جعفرالصادق(ع) سے روایت کی گئی ہے کہ : اُس (حضرت معصومہ(ع) )  کی شفاعت سے ہمارے تمام چاہنے والے بہشت میں داخل ہو جائیں گے۔ " آخرت میں شفاعت کے علاوہ دنیا میں بھی حضرت معصومہ(ع) کی  ذات اقدس  کرامات  کا سرچشمہ ہے  آپ (ع)  کے روضۂ اقدس  پرلاچار اور  مضطر لوگوں  کی حاجات روا ہوتی ہیں، بیماروں کو شفا ملتی ہے اور دلوں ميں نور ہدایت بھر جاتا ہے۔ قم کی عظیم  دینی درسگاہ  بھی آپ (ع)  ہی کی مرہون منت  ہے۔  ابتدا  سے  لے کر  آج تک علماء، محدثین، فقہا اور دانشور آپ  کے روضے  کے نزدیک علم و دانش  کی اشاعت میں  مصروف رہے ہيں ۔ تاریخِ قم میں کہا گیا ہے  کہ قم  کو محبّان اہل بیت (ع)  کے ایک گروہ نے آباد  کیا جو اموی دور میں حکام  کے مظالم سے بچنے کے لئے فرار ہو کر  آئے تھے، اس  سے پہلے  یہاں  خانہ  بدوش  لوگ پانی اور  چارے کے ذخائر کی وجہ سے یہاں آتے جاتے رہتے تھے، قم  آنے والے افراد میں علماء محدثین بھی شامل تھے۔عباسی دور میں سادات  کی بڑي تعداد عرب ممالک سے ہجرت کرکے قم آئے ۔ ان میں حضرت امام تقی (ع)  کے فرزندِ ارجمند حضرت موسٰی مبرقع (ع) قابل ذکر ہیں جن کا مزار بھی قم ميں ہے۔ قم  کی دینی درسگاہ مختلف تاریخی ادوار ميں  آباد رہي لیکن اس درسگاہ کواُس وقت خاص اہمیت مل گئی جب ١٣٤٠ ہجری میں آیت اللہ العظمی حائری یزدی (رح) اراک شہر سے ہجرت کر کے قم  آئے، آپ  کے ساتھ آپ (رح)  کے شاگرد ارجمند حضرت امام خمینی (رح) بھی قم  آئے۔ آیت اللہ  حائری یزدی (رح)  کی وفات  کے بعد  آیت اللہ  بروجردی (رح) نے اس  درسگاہ  کو فروغ  دیا ۔  اُن  کی رحلت  کے  بعد  امام خمینی (رح) سمیت دیگر مراجع دین نے علم و دانش  کے فروع  ميں بڑھ  چڑھ  کر حصہ لیا۔ ١٩٦٢ء  بارگاہ حضرت معصومہ(ع) سے ہی حضرت امام خمینی (رح) کی قیادت ميں  ایران  کے اسلامی انقلاب کا  آغاز ہوا۔ اسی لئے قم  کو شہرِ علم و قیام (انقلاب) اور شہر علم وشہادت بھی کہتے ہیں، اس شہر  کے باشندوں نے اسلام  کی سربلندی کے لئے بیش بہا قربانیاں دیں اور یہ سب حضرت معصومہ(ع) کے وجود اقدس کے طفیل ہے ۔

حضرت معصومۂ فاطمہ (ع) نے زندگی کا بیشتر حصہ اپنے عزیز برادر حضرت امام رضا(ع)  کے سایۂ عطوفیت ميں گزارا  کیونکہ آپ (ع) کے والد گرامی  حضرت امام موسٰی کاظم ( ع)  زیادہ تر  عباسی خلیفہ ہارون  کے  زيرعتاب اور  پابند سلاسل رہے ۔ حضرت معصومہ(ع)   کم سن تھیں جب آپ (ع) کے والد کو مقیّد کیا گیا۔ اسی لئے جب خلیفہ مامون عباسی نے حضرت امام رضا(ع)  کو ایک سازش  کے  تحت مدینۂ منورہ  سے خراسان بلایا، آپ (ع) بھائی  کی جدائی برداشت نہ کرسکیں اور ایک سال بعد خود بھی ایران کی طرف روانہ ہوئیں، لیکن ساوہ پہنچ کر آپ (ع) بیمار ہوگئيں،  بعض روایات  کے مطابق ساوہ میں آپ (ع)  کے قافلے  پر دشمنانِ اہل بیت (ع) نے حملہ  کیا اور آپ (ع)  کے ٢٣ حقیقی  اور چچازاد  بھائیوں کو شہید  کیا گیا ۔ آپ ( ع)  سے  یہ منظر  دیکھا  نہ  گيا اور  بیمار ہوگيئں  اور حضرت زینب کبری (ع)  کی طرح اعزا و اقارب  کی لاشوں  کو چھوڑ  کر قم روانہ ہوئيں۔ مؤرخین کے مطابق ساوہ میں بیماری کے بعد آپ (ع) نے قافلہ والوں سے  قم لے جانے کو  کہا۔  ایک اور روایت ہے  کہ حضرت معصومہ(ع)  کو ساوہ  کی ایک عورت نے زہر  دیا  تھا جس  کے اثر سے  آپ علیل ہوئیں۔ جب قم  کے باشندوں  کو معلوم ہوا آپ (ع) ساوہ پہنچی ہيں تو شہر کے عمائدین نے آپ (ع)  کو قم تشریف لانے  کی دعوت دی ۔ بہرحال  حضرت معصومہ  قم  پہنچنے کے ١٧ دن بعد رحلت کر گئيں۔ اس مدت میں آپ (ع)  خداوند عالم  سے راز و نیاز میں مصروف  رہيں ۔  آپ (ع)  کا  محراب عبادت آج بھی قم  کے مدرسہ  ستیّہ  میں موجود  ہے  جسے  بیت النور  بھی کہا جاتا ہے۔ قم  کے معززین  میں حضرت معصومہ(ع)  کو دفن  کرنے  کے مسئلے پر اختلاف ہوا،  بالآخر فیصلہ  کیا گیا کہ قادر نامی بزرگ آپ (ع)  کے جسد مبارک  کو قبر میں اتاریں گے لیکن  دیکھتے  ہی دیکھتے صحرا  کی طرف سے دو نقاب پوش نمودار ہوئے جنہوں نے آپ (ع)  کی نماز جنازہ پڑھ  کر آپ (ع)  کو سپرد خاک کیا۔ وفات  کے  وقت حضرت معصومہ(ع)  کی عمر صرف٢٨  سال  تھی۔


source : http://www.tebyan.net
  717
  0
  0
امتیاز شما به این مطلب ؟

latest article

      امام علی علیه السلام کی امامت اور خلافت کو کیسے ثابت ...
      مسئلہ فلسطین کے بنیادی فقہی اصول امام خامنہ ای کی نگاہ ...
      سیرت رسول اکرم (ص) میں انسانی عطوفت اور مہربانی کے ...
      ہم امریکہ کی عمر کے آخری ایام سے گذر رہے ہیں: چالمرز ...
      شفاعت کی وضاحت کیجئے؟
      دین اسلام کی خاتمیت کی حقیقت کیا ھے۔ اور جناب سروش کے ...
      کیا تقلید کے ذریعھ اسلام قبول کرنا، خداوند متعال قبول ...
      امام کے معصوم ھونے کی کیا ضرورت ھے اور امام کا معصوم ...
      کیا پیغمبر اکرم (صل الله علیه وآله وسلم) کے تمام الفاظ ...
      عورتوں کے مساجد میں نماز پڑھنے کے بارے میں اسلام کا ...

 
user comment