اردو
Tuesday 21st of May 2019
  891
  0
  0

عید بعثت رسول اللہ (ص) مبارک

پیغمبر اسلام (ص) کی بعثت ، شرک ، ناانصافی ، نسلی قومی و لسانی امتیازات، جہالت اور برائیوں سے نجات و فلاح کا نقطۂ آغاز کہی جا سکتی ہے. بعثت کا اہم ترین درس کے بارے میں آیت اللہ خامنہ ای کی رائے۔۔۔                                                       ہجرت سے 13 سال قبل ،27 رجب المرجب کو  پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی بعثت ، شرک ، ناانصافی ، نسلی قومی و لسانی امتیازات ، جہالت اور برائیوں سے نجات و فلاح کا نقطۂ آغاز کہی جا سکتی ہے اور صحیح معنی میں خدا کے آخری نبی نے انبیائے ما سبق کی فراموش شدہ تعلیمات کو از سر نو زندہ و تابندہ کرکے عالم بشریت کو توحید ، معنویت ، عدل و انصاف اورعزت و کرامت کی طرف آگے بڑھایا ہے ۔ حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم نے اپنے دلنشین پیغامات کے ذریعے انسانوں کو مخاطب کیا کہ ”خبردار ! خدا کے سوا کسی کی پرستش نہ کرنا اور کسی کواس کا شریک قرار نہ دینا تاکہ تم کو نجات و فلاح حاصل ہو سکے “۔ پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم کی اس پر خلوص معنوی تبلیغ نے جہالت و خرافات کی دیواریں بڑی تیزی سے ڈھانا شروع کردیں اورلوگ جوق درجوق اسلام کے گرویدہ ہوتے چلے گئے ۔ پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم کی بعثت جو درحقیقت انسانوں کی بیداری اورعلم و خرد کی شگوفائی کا دور ہے ، آپ سب کو مبارک ہو ۔ آج رسول اسلام کی بعثت کو صدیاں گزر چکی ہیں لیکن عصر حاضر کے ترقی یافتہ طاقتور انسانوں کو، پہلے سے بھی زیادہ پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم کے پرامن پیغامات اور انسانیت آفریں تعلیمات کی ضرورت ہے ۔ اس گفتگو میں ، ہم اسی موضوع کا جائزہ لیناچاہتے ہیں کہ بنیادی طور پر پیغمبر اسلام کی بعثت آج کے انسانوں کےلئے کن پیغامات کی حامل ہے۔ اس کے جواب میں سب سے پہلے یہ دیکھنے کی ضرورت ہے ختمی مآب محمد مصطفیٰ ، صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم نے انسانوں کو کس چیز کی دعوت دی ہے ؟ در اصل انسان کے یہاں بعض خواہشیں اور فطری میلانات موجود ہیں ، یہ فطری میلان خود انسان کے وجود میں ودیعت ہوئے ہیں اور ان کو ختم نہیں کیا جا سکتا ۔ مثال کے طور پر اچھائيوں کی طرف رغبت اور پسند ، تحقیق و جستجو کا جذبہ یا اولاد سے محبت وہ انسانی خصوصیات ہیں جن کو اس کی ذات سے الگ نہیں کیا جا سکتا ۔ ظاہر ہے دنیا میں آنے والا ہر وہ انسان کہ جس نے فطرت کی آواز پر لبیک کہی ہو حقیقی اور جاوداں انسان بن جائےگا کیونکہ یہ وجود انسانی خواہشات کے ساتھ مطابقت رکھتا ہے اور اس کی فطری ضرورتوں کی تکمیل کرتا ہے ۔                                                                                                پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم کی بعثت ، انسان کی فطری ضروریات کی تکمیل کے لئے ہوئی ہے اوراس نے ایمان و معرفت ، آگہی و بیداری اور برادری و انسان دوستی کے چراغ روشن کئے ہیں ۔ لہذا رسول خدا کی بعثت کا دن انسانی زندگي میں ایک عظيم انقلاب اور تجدید حیات شمار ہوتا ہے وہ انقلاب جو انہوں نے برپا کیا ہے انسان کوخود اپنے اوراپنے انجام دئے گئے برے اعمال کے خلاف جدوجہد پرآمادہ کرتا ہے اور جو بھی رسول خدا کے روشنی بخش پیغامات کو سنتا ہے اپنی اورکائنات کی حقیقی شناخت پیدا کرلیتا ہے اور پھر خود کو ہی عدل و انصاف کی عدالت میں کھڑا پا کر اپنے وجود میں ایک نئے انسان کی تعمیر پر مجبور ہوجاتا ہے ۔ یہ خصوصیات صرف مذہب کے ساتھ وابستہ ہیں کہ وہ آدمی کو ایک خالص مادی اور دنیوی قالب سے نکال کر سچائی اورانصاف کی معنوی دنیا تک پہنچا دیتا ہے اور ایک نفس پرست کوانصاف پسند نیکوکار انسان میں تبدیل کردیتا ہے ۔ مذہب انسان کی حیات کے لامتناہی چشمے کی طرف رہنمائی کرتا ہے اوروحی دنیا کی باتیں اس کے دل و جان میں جگہ بنا لیتی ہیں ۔ وحی کی باتیں انسان کو زندگي ، کیف و نشاط اور بیداری و آگہی عطا کرتی ہیں ، وحی کی باتیں ، معرفت کا چراغ ہیں جو انسان کو حقائق محض سے آشنا بنا دیتی ہیں ۔ ہر عہد اور ہر زمانے کا انسان اس جاوداں نور سے روشنی حاصل کرکے ، اپنے اندر معنویت کی نئی جوت جگا سکتا ہے اور پھر ترقی و کمال کی اعلیٰ معراج طے کر سکتا ہے ۔ قرآن کریم میں انبیاء(ع) کی بعثت کا فلسفہ ، انسان کی تعلیم و تربیت ، عدل و انصاف کی برقراری، تاریکیوں سے رہائی اور جبر و استبداد سے انسان کو آزادی دلانا بتایا گیا ہے ۔ سورۂ انفال کی 24 ویں آيت میں بھی بعثت کو زندگی اور حیات سے تعبیر کیا گيا ہے جو معاشروں کو ترقی عطا کرکے تقاضوں کی تکمیل کی راہ دکھاتی ہے ۔ ارشاد ہوتا ہے اے ایمان لانے والو ! خدا اور اس کے پیغمبر کی دعوت پر لبیک کہو وہ جب بھی تم کو اس پیغام کی طرف بلائیں جو تمہارے لئے سرچشمۂ حیات ہے ۔ بعض لوگ خیال کرتے ہیں کہ جہالت ، تاریخ کے محض کسی خاص دور سے مخصوص ہے اور اس کو دور جہالت کا نام دیا گيا ہے اور عالم بشریت اس دورسے گزر چکا ہے لیکن حقیقت یہ ہے کہ ہر وہ زمانہ جب انسان ، انسانیت کی حدوں سے دور ہوجاتا ہے اور نفسانی خواہشات کی پیروی کرنے لگتا ہے جہالت کے دائرے میں پہنچ جاتاہے اور دنیا اسے اپنا اسیر بنا لیتی ہے چاہے وہ کوئی بھی دور اور زمانہ ہو اور کسی بھی نئی شکل میں کیوں نہ جلوہ گر ہوئی ہو۔ اس وقت بھی ، دنیا جس بحران سے دوچار ہے اور افغانستان و عراق میں امریکہ اور اس کے اتحادیوں نے جو المیہ برپا کیا ہے کیا اس کو عصر حاضر کے انسان کی جہالت ، خود غرضي اور وحشت کے علاوہ کوئی اور نام دیا جاسکتا ہے؟ اور آيا وہ مظالم جو فلسطین کے مظلوم عوام اور بچوں پر جاری ہیں انسانی علم و تمدن کا ثمرہ کہے جا سکتے ہیں؟ یا اس کے جہل اور اقتدار طلبی کا نتیجہ ہیں !! بلاشبہ دنیا کو انسانیت و معرفت کے دائرے میں ایک نئے انقلاب اور تغییر کی ضرورت ہے ، وہ انقلاب جو چودہ سو سال قبل ، خدا کے رسول محمد مصطفیٰ صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم نے شروع کیا تھا اور جس کے راہ نما پیغامات آج بھی اضطراب و بے چینی کے شکار انسان کو عدل و انصاف اوراخلاق کی راہ دکھا سکتے ہیں ۔ اس کے پیغامات میں ہمیشہ زندگي اور تازگي موجود رہی ہے ایک مسلمان عالم و دانشور کے بقول : جس طرح ایک درخت کے لئے پہلے انسان کسی مناسب زمین پر بیج ڈالتا ہے اور پھر پودا ٹہنیوں اور پتیوں میں تبدیل ہو کر جب بڑھتا ہے تو پھول اور پھل وجود میں آئے ہیں اور اس میں ویسے ہی دانے اگتے ہیں کہ جیسے بیج کی صورت میں انسان نے زمین کے حوالے کئے تھے ۔ اسی شکل میں پیغمبر اسلام حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم کے پیغام کا ایک دائرہ ہے جو گھومتا رہتا ہے اور ہمیشہ اس سے پھول اور پھل شگوفہ آور ہوتے رہتے ہیں ۔ بہر حال پیغمبر اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی تاریخ بعثت ہر سال اس اہم حقیقت کی یاد دلاتی ہے کہ ہر انسان کا فریضہ ہے کہ اسی روز سے اپنے اندر ایک دوسرے انسان کی تعمیر شروع کردے اور عشق خدا و رسول کے ساتھ سچائی اور معنویت کی راہ پر قدم بڑھانے کے لئے تیار ہو جائے ۔

پائيداری و استقامت، بعثت رسول (ص) کا سب سے اہم درس    

قائد انقلاب اسلامی آیت اللہ العظمی خامنہ ای نے پائیداری اور استقامت کو بعثت رسول اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم کا اہم ترین پیغام قرار دیاـ                                                                                                                            قائد انقلاب اسلامی آیت اللہ العظمی خامنہ ای نے آج یوم بعثت رسول اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم کے موقع پر ملک کے حکام، عوام کے مختلف طبقات اور اسلامی ملکوں کے سفیروں سے ملاقات میں تمام حالات میں پائيداری اور استقامت کو بعثت رسول اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم کا سب سے بڑا درس قرار دیا۔ آپ نے یوم بعثت رسول اسلام کی مبارکباد پیش کرتے ہوئے تاریخ انسانیت کے اس پر شکوہ واقعے سے درس حاصل کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔ آپ نے فرمایا کہ رسول اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم نے دور جاہلیت میں علم و عدل و انصاف و اخلاق سے عاری معاشرے کو توحید، علم، عدل و انصاف، عقل اور اخلاق پر استوار مثالی معاشرے میں تبدیل کر دیا۔ قائد انقلاب اسلامی آیت اللہ العظمی خامنہ ای نے اپنے خطاب میں فرمایا کہ رسول اسلام صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم کی پائيداری، بے خوفی اور دشمن کی جانب سے سہولتوں کی پیشکش پر توجہ نہ دینے کے نتیجے میں مسلمانوں کے اندر اعتماد پائيداری اور سکون پیدا ہوا اور اس چھوٹی سی جماعت نے دشوار ترین حالات میں اپنی پائیداری اور استقامت کے ذریعے دشمنوں پر غلبہ حاصل کرکے مثالی معاشرہ قائم کیا۔ قائد انقلاب اسلامی آیت اللہ العظمی خامنہ ای نے پیغمبر اسلام کی سرچشہ تعلیمات حیات طیبہ کے مطالعے کی ضرورت پر تاکید کرتے ہوئے فرمایا کہ امام خمینی (رہ) نے اسی چشمہ جاریہ سے استفادہ اور پیغمبر اسلام کے ایمان و عقیدے کی پیروی کرتے ہوئے عظیم اسلامی انقلاب کی تحریک شروع کی اور آپ کی پائيداری کے نتیجے میں ملت ایران بھی میدان میں آئی اس طرح اللہ تعالی کی نصرت و مدد سے دنیا کی سب سے بڑی پٹھو حکومت کا تختہ پلٹ دیا گيا اور مشرق وسطی کے حساس علاقے میں پرچم اسلام بلند ہوا۔ قائد انقلاب اسلامی آیت اللہ العظمی خامنہ ای نے ملت ایران کے پائيداری و استقامت کے جذبے کو کمزور کرنے کی سامراجی طاقتوں کی ناکام کوششوں کا ذکر کرتے ہوئے فرمایا کہ دنیا کی سامراجی طاقتوں کی مرضی کے برخلاف ملت ایران بدستور فلسطینی قوم کی حمایت اور صیہونیوں کے تسلسل کے ساتھ جاری بھیانک جرائم و مظالم پر آزادی و انسانی حقوق کے بلند بانگ دعوے کرنے والوں کے سکوت کی مذمت کرتی ہے۔ آپ نے اس ضمن میں جرائم پیشہ صیہونیوں کے لئے امریکی صدر کی حمایت اور ساتھ ہی انسانی حقوق اور آزادی کے ان کے دعوؤں کو قول و فعل کا شرمناک تضاد قرار دیا اور فرمایا کہ ملت ایران بیدار ہے اور ان حقائق کا بخوبی ادراک رکھتی ہے۔ قائد انقلاب اسلامی آیت اللہ العظمی خامنہ ای نے بر حق موقف کو ضروری مگر ناکافی قرار دیتے ہوئے فرمایا کہ حق اس وقت کامیاب ہوتا ہے جب اس کی پیروی کرنے والے تمام حالات میں استقامت اور پائيداری سے کام لیں۔ آپ نے فرمایا کہ سامراجی طاقتوں کے مقابلے میں ایک قدم عقب نشینی ان کے ایک قدم آگے بڑھنے پر منتج ہوگی اور یہ تصور غلط ہے کہ صحیح موقف سے عدول سامراج کی پالیسیوں میں تبدیلی کا باعث ہو سکتاہے۔ قائد انقلاب اسلامی آیت اللہ العظمی خامنہ ای نے ایرانی قوم کی استقامت و پائيداری پر زور دیتے ہوئے کہا کہ ایرانی قوم صرف اپنے خدا کی مطیع ہے، امریکہ، سامراجی طاقتوں اور زمانے کےابو جہلوں کی نہیں۔ آپ نے ایٹم بم بنانے والوں اور بنی نوع انسان کے امن و آشتی کو خطرے میں ڈالنے والوں کو زمانے کے ابو جہل سے تعبیر کیا اور فرمایا کہ اس دور کے ابو جہل اچھی طرح جانتے ہیں کہ ایرانی قوم ایٹمی توانائي سے بجلی حاصل کرنا چاہتی ہے مگر کہتے ہیں کہ چونکہ اس کے ذریعے تمہیں طاقت ملے گی اس لئے ہم یہ نہیں ہونے دیں گے۔ آپ نے فرمایا کہ ایرانی قوم ان باتوں پر کوئي توجہ دئے بغیر اپنی تیس سالہ استقامت و پائيداری کے قابل بھروسہ فوائد اور تجربات سے کام لیتے ہوئے اپنے راستے پر گامزن رہے گی۔ قائد انقلاب اسلامی آیت اللہ العظمی خامنہ ای نے ملت ایرانی کی موجودہ علاقائی پوزیشن اور طاقت و رسوخ کو ملک کی پوری تاریخ میں عدیم المثال قرار دیا اور فرمایا کہ وطن عزیز کا مستقبل تابناک ہے، ہمیں بخوبی علم ہے کہ ہم کیا کر رہے ہیں اور ہماری منزل کیا ہے۔ اس منزل تک پہنچنے کے لئے ہم پیش قدمی اور پائيداری کو لازمی سمجھتے ہیں، ٹھہر جانے اور پیچھے مڑنے کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔ آپ نے اپنی تقریر کے آخر میں تاکید کے ساتھ فرمایا کہ اب امت مسلمہ کی بعثت کا وقت آن پہنچا ہے اور مسلمانوں کو چاہئے کہ بصیرت اور آگاہانہ اقدامات کے ذریعے اپنے اتحاد و یکجہتی، علم و دانش اور قوت و توانائی میں اضافہ کریں اور بعثت کے پیغام کو مکمل طور پر عملی جامہ پہنانے کے لئے اپنی کوششوں میں تیزی لائيں۔


source : http://www.abna.ir/data.asp?lang=6&id=195024
  891
  0
  0
امتیاز شما به این مطلب ؟

latest article

      امام علی علیه السلام کی امامت اور خلافت کو کیسے ثابت ...
      مسئلہ فلسطین کے بنیادی فقہی اصول امام خامنہ ای کی نگاہ ...
      سیرت رسول اکرم (ص) میں انسانی عطوفت اور مہربانی کے ...
      ہم امریکہ کی عمر کے آخری ایام سے گذر رہے ہیں: چالمرز ...
      شفاعت کی وضاحت کیجئے؟
      دین اسلام کی خاتمیت کی حقیقت کیا ھے۔ اور جناب سروش کے ...
      کیا تقلید کے ذریعھ اسلام قبول کرنا، خداوند متعال قبول ...
      امام کے معصوم ھونے کی کیا ضرورت ھے اور امام کا معصوم ...
      کیا پیغمبر اکرم (صل الله علیه وآله وسلم) کے تمام الفاظ ...
      عورتوں کے مساجد میں نماز پڑھنے کے بارے میں اسلام کا ...

 
user comment