اردو
Sunday 24th of March 2019
  796
  0
  0

مسلمان خواتین کے حقوق کی پامالی کی سازشیں

 

برطانیہ میں بھی:

لندن حکمران جماعت ٹوری کے ایک رکن پارلیمنٹ فلپ ہیلو بون نے برطانیہ میں مسلمان خواتین کے برقع پہننے پر پابندی کیلئے قانون سازی کرانے کی کوششوں کا آغاز کر دیا ہے۔                اس سلسلے میں انہوں نے ہائوس آف کامنز میں پرائیویٹ بل پیش کیا ہے۔فلپ ہیلو بون نے کہا ہے کہ ان کے بل میں عوامی اجتماعات کے مقامات پر مسلم خواتین کے منہ ڈھانپنے پر پابندی لگانے کو کہا جائے گا جس کا مطلب یہ ہے کہ مسلمان خواتین ان مقامات پر اپنا مکمل اسلامی لباس پہن کر نہیں جا سکیں گی۔                                                                       ان سے قبل مسٹر فلپ برقع کو اشتعال انگیز قرار دے چکے ہیں اور ان کا کہنا ہے کہ برقع برطانوی طرز معاشرت کا مخالف ہے۔ان کو اس بل پر بیس بیک بنچر اراکین پارلیمان کی حمایت حاصل ہے۔                                                                                                                                                                   انسانی آزادی اور انسانی حقوق کے دعوے دار اب اپنے نقاب الٹ کر اپنا اصلی چہرہ پیش کرنے لگے ہیں۔برقع پر پابندی لگانا نہ صرف مذہب کی آزادی کا مذاق ہے بلکہ انسانی حقوق کے بھی منافی ہے کہ ہر انسان کو اختیار ہے کہ وہ جیسا لباس پہنے۔

 


source : http://abna.ir/data.asp?lang=6&id=194282
  796
  0
  0
امتیاز شما به این مطلب ؟

latest article

      خلیج فارس کی عرب ریاستوں میں عید الاضحی منائی جارہی ہے
      پاکستان، ہندوستان، بنگلہ دیش اور بعض دیگر اسلامی ...
      پاکستان کی نئی حکومت: امیدیں اور مسائل
      ایرانی ڈاکٹروں نے کیا فلسطینی بیماروں کا مفت علاج+ ...
      حزب اللہ کا بے سر شہید پانچ سال بعد آغوش مادر میں+تصاویر
      امریکہ کے ساتھ مذاکرات کے لیے امام خمینی نے بھی منع کیا ...
      کابل میں عید الفطر کے موقع پر صدر اشرف غنی کا خطاب
      ایرانی ڈاکٹروں کی کراچی میں جگر کی کامیاب پیوندکاری
      شیطان بزرگ جتنا بھی سرمایہ خرچ کرے اس علاقے میں اپنے ...
      رہبر انقلاب اسلامی سے ایرانی حکام اور اسلامی ممالک کے ...

 
user comment