اردو
Monday 25th of March 2019
  845
  0
  0

اسرائیل: جھوٹ پر قائم ریاست

فلسطین کا مسئلہ جس قدر سلجھتا نظر آتا ہے، درحقیقت اس میں اسی قدر تناؤ اور الجھاؤ پیدا کر دیا جاتا ہے۔ اوبامہ حکومت نے اب تازہ الجھاؤ کا اہتمام کیا ہے۔ صدر اوبامہ نے گزشتہ سال مطالبہ کیا تھا کہ اسرائیل یہودی بستیوں کی مزید تعمیر روک دے۔

اوبامہ حکومت کی بات قطعی نظر انداز کر دی گئی۔ امریکی اور برطانوی میڈیا نے بالخصوص اوبامہ پر تنقید شروع کر دی۔ یو ایس نیوز کے مورتمر ایکر مین نے مشرقی بیت المقدس میں ان بستیوں کی تعمیر کو اسرائیل کا حق قرار دیا۔ اس علاقے کے بارے میں بش حکومت نے اسرائیل سے مل کر یہ طے کر لیا تھا کہ بیت المقدس کو اسرائیل کا ہمیشہ حصہ قرار دیا جائے گا۔ اوبامہ حکومت کی طرف سے یہودی بستیوں کی تعمیر روکنے کے مطالبہ کو اس ”ہم آہنگی” کے منافی قرار دے دیا گیا۔

اسرائیل نے امریکہ کا یہ مطالبہ بھی مسترد کر دیا کہ اس کے نائب صدر جوبائیڈن کی اسرائیل یاترا پر ہی یہ کام عارضی طور پر روک دیا جائے۔ نیتن یاہو نے اسے یکسر نظر انداز کر دیا۔ 1995ئ میں امریکہ نے اسرائیل کا قبضہ تسلیم کرتے ہوئے کانگریس میں ایک قانون منظور کیا تھا جسے یروشلم ایمبسی ایکٹ کا نام دیا گیا۔ اس ایکٹ کے تحت اسرائیل کا قبضہ تسلیم کر لیا گیا اور امریکی سفارت خانہ تل ابیب سے مقبوضہ بیت المقدس منتقل کرنے کی منظوری دی گئی۔ یہ اس بات کا اعلان تھا کہ امریکہ مقبوضہ بیت المقدس پر اسرائیل کا غیر مشروط قبضہ تسلیم کرتا ہے۔
صدر اوبامہ نے اپنے عہد صدارت کے آغاز سے ہی اسرائیل کو ایک اہم ایشو قرار دیا۔ اسرائیل کو یہ بھی اعتراض تھا اور ہے کہ نئی بستیوں کو بستیاں نہ کہا جائے بلکہ اس کو باقاعدہ آبادی تسلیم کیا جائے۔ محمود عباس سے ہونے والے مذاکرات میں اس وقت تعطل آ گیا جب یہودی بستیوں کی تعمیر روکنے سے یکسر انکار کر دیا گیا۔ اسرائیل کا دعویٰ ہے کہ مقبوضہ بیت المقدس پورے کا پورا اس کا حصہ ہے۔ اس پر اس کے مطابق 1967ئ کی عرب اسرائیل جنگ میں اْردن کے لوگوں نے قبضہ کر کے اس کے مشرقی حصے پر تسلط جما لیا تھا۔ گویا یہ اْردنی باشندے تھے، فلسطینی نہیں تھے۔ اس طرح اسرائیل فساد کا سلسلہ یہیں سے شروع کرتا ہے۔ اسرائیل نے چھ روزہ جنگ میں مقبوضہ بیت المقدس کے مشرقی حصے پر بھی قبضہ کر لیا تھا، اس کے علاوہ اس نے مغربی کنارے، غزہ کی پٹی اور سینائی علاقوں پر بھی اپنا تسلط جما لیا۔

امریکی اور مغربی میڈیا اب بھی اس پروپیگنڈے میں مصروف ہے کہ بے چارے بے گھر یہودی گزشتہ 43 برسوں سے دَر بدر پھر رہے ہیں۔ انہیں گھر چاہیے۔ اس لیے اسرائیل کا یہ حق ہے کہ وہ اپنے ان خود ساختہ شہریوں کو جنہیں دنیا بھر سے بالخصوص جرمنی اور روس سے لا کر آباد کیا جا رہا ہے، رہائشی سہولتیں فراہم کرے۔ فلسطینی عوام کو بے دخل کر کے یہودیوں کو بسانے کی حمایت کرنے والا یہ میڈیا کہتا ہے کہ مقبوضہ بیت المقدس اور مغربی دیوار پر اسرائیل کو ناجائز طور پر قابض بنا کر فلسطینی رہنما پیش کر رہے ہیں جو کہ حقیقت نہیں۔ میڈیا یہ بھی لکھتا ہے کہ عرب ان علاقوں کا اس وقت دفاع نہ کر سکے جب وہ ان کے کنٹرول میں تھے۔ گویا یہ بھی تسلیم ہے کہ اسرائیل نے ان پر بزورِ قوت اور سازش قبضہ کیا تھا۔

اس سازش میں امریکہ اور برطانیہ اس کے بڑے حلیف تھے۔ یہ بھی کہا جاتا ہے کہ یہ صرف اسرائیلی اقتدار میں ممکن ہوا کہ 1967ئ سے اب تک مسیحی اور مسلمان بھی ان مقدس مقامات پر آزادانہ آتے اور اپنے مذہب پر عمل کرتے ہیں۔ تاریخ اس بات کی سب سے بڑا مخالف بن کے سامنے آتی ہے جب انہی علاقوں میں مسلمانوں پر زندگی اجیرن کر دی گئی، انہیں زبردستی ہجرت پر مجبور کر دیا گیا۔ اسرائیلی حمایت میں لکھنے والے یورپی صحافی لکھتے ہیں کہ 1948ئ سے لے کر 1967ئ تک اْردن کا اقتدار اِن علاقوں پر ظلم اور بربریت کی مثال بنا رہا۔ اْردن نے یہودی عبادت گاہوں کے پتھر تک چوری کر لیے اور انہیں اپنے ملک میں سڑکوں کی تعمیر میں استعمال کیا۔ اشتعال دلانے اور دروغ گوئی سے کام لینے کی تو اسے ایک مثال کہا جا سکتا ہے، تاہم تاریخی حقائق مسخ کرنے میں اسی طرح کے دلائل صہیونیت کے حق میں دیے جاتے ہیں۔ مسیحی آبادی کو ساتھ ملانے کے لیے کہا جاتا ہے کہ مسلمانوں نے چھوٹے چھوٹے بہت سے گرجا گھر گرا دیے اور وہاں مساجد تعمیر کر لی تھیں یا پھر ان کے ساتھ ساتھ ایسی مساجد تعمیر کی گئیں جن کے مینار یہودی اور مسیحی عبادت گاہوں سے بہت بلند تھے۔
اسرائیل نے 1967ئ کی جنگ کے فوری بعد ہی یہودی بستیوں کی مقبوضہ بیت المقدس میں تعمیر کا آغاز کر دیا تھا۔ یہ بھی دعویٰ مغربی میڈیا کرتا ہے کہ اتنی تعداد میں یہودی بستیاں تعمیر نہیں کی گئیں جس پیمانے پر مسلمانوں نے اپنی نئی آبادیاں یہاں تعمیر کیں۔ انہی مغربی اخبارات کے صفحات میں یہ گواہی موجود ہے کہ فلسطینی ہجرت پر مجبور کر دیے گئے۔ یہودی دنیا بھر سے لا کر آباد کیے گئے۔

اسرائیل کا کہنا ہے کہ مقبوضہ بیت المقدس ، جسے وہ مقبوضہ نہیں کہتا، زمین کا محض ایک ٹکڑا نہیں ہے۔ شاہ داؤد نے اس شہر کو ساڑھے تین ہزار سال پہلے تعمیر کیا تھا۔ تب سے یہودی یہاں رہے ہیں، کام کرتے ہیں اور عبادت کرتے ہیں۔ وہ اسے صہیونیت کا مرکز اور سیاسی دارالحکومت سے زیادہ روحانی مرکز قرار دیتے ہیں۔ سلطنت روما نے اسے تباہ و برباد کر دیا تھا۔ دو ہزار سال قبل یہودیوں کو وہاں سے ”بے دخل” کر دیا گیا۔ جب بھی کوئی یہودی دعا مانگتا ہے تو مقبوضہ بیت المقدس واپس جانے کا عہد دھراتا ہے۔ یہ ہر یہودی کی ہر دعا کا لازمی حصہ ہے، اس کے بغیر دعا نہ مکمل ہوتی ہے اور ان کے بقول نہ ہی قبول ہوتی ہے۔

صہیونی صحافیوں کا یہ بھی دعویٰ ہے کہ بیت المقدس پر مسلمانوں نے کسی بھی طرح سے مثبت اثرات نہیں چھوڑے۔ وہ مکہ مکرمہ کو قبلہ مانتے تھے، بیت المقدس کو نہیں۔ حالانکہ آج بھی قبلہ? اول کی بازیابی دنیا کے ہر مسلمان کی زندگی میں ایمان اور عقیدے کی جگہ رکھنے والا عزم ہے۔ ان کا یہ بھی عجیب و غریب دعویٰ ہے کہ مسجد اقصیٰ 688ئ عیسوی میں تعمیر کی گئی۔ گویا ان کا یہ دعویٰ بھی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کا وصال 632ئ میں ہوا، اس لیے مسجد اقصیٰ ان کے تقریباً 50 سال بعد تعمیر کی گئی۔ یہ بالکل بابری مسجد اور رام مندر کی طرح کی کہانی ہے جسے یہ مفکرین، مبصرین اور تجزیہ نگار بڑی ڈھٹائی سے پیش کرتے ہیں۔ حیرت انگیز طور پر تاریخ کو جھٹلانے والے یہ سارے صہیونی دانشور صلیبی حکمرانوں کا قبضہ تسلیم کرتے ہیں تاکہ انہیں بھی آؤٹ سائیڈ کے طور پر پیش کیا جائے، لیکن یہ دعویٰ تو بالکل حیران کن ہے کہ مسلمانوں نے صلیبی جنگوں کے بعد مسجد اقصیٰ کو قبلہ? اول قرار دیا۔

ان عجیب و غریب دلا ئل سے وہ مقبوضہ بیت المقدس کو ہمیشہ سے ہی اسرائیل کا دارالحکومت قرار دیتے ہیں۔ ایک اور دعویٰ یہ ہے کہ 1948ئ میں اسرائیل کے بناتے وقت یہاں ایک لاکھ یہودی آباد تھے جبکہ مسلمانوں کی تعداد محض 65 ہزار تھی۔ خود یہودیوں کی کتابیں اور تھیوڈ رہرذل کے ساتھیوں کے بیانات بتاتے ہیں کہ فلسطینی آبادی کو انتہائی ظلم و تشدد کے ساتھ وہاں سے نکالا گیا۔ یہ دانشور کہتے ہیں کہ اب شہر میں کوئی فلسطینی نہیں، صرف اسرائیلی اور یہودی آباد ہیں۔ یہ سب کے سب ایک نئے اور جدید اسرائیل کے وفادار ہیں۔ ان کا فلسطینی مطالبات سے دور نزدیک کا بھی واسطہ نہیں ہے۔

اسرائیل تازہ بستیاں رامات اور شلومو کے علاقوں میں بنا رہا ہے۔ اس کے مطابق یہ وہاں پر آباد کیے جانے والے یہودیوں کا پیدائشی حق ہے۔ یہ بھی حیرت انگیز امر ہے کہ نجانے کیوں ہر مرتبہ مذاکرات میں فلسطینی ان علاقوں اور بستیوں کو زیر بحث لے آتے ہیں حالانکہ ان پر تو بحث کرنے کا کوئی جواز ہی نہیں۔ ان علاقوں میں رامات کی نئی بستی کو صدر اوبامہ نے ”بستی” قرار دیا تو اس پر شدید تنقید کی گئی۔ اس کی دلیل میں کہا گیا کہ سابقہ امریکی حکومت یہ معاہدہ کر چکی تھی کہ یہ سب درست ہے اور اسرائیل یہ ”بستیاں” نہیں بسا رہا بلکہ اپنے علاقوں کو ترقی دے رہا ہے اور بہتر بنا رہا ہے۔

ان دعوؤں، تاریخی ابطال اور اسرائیل کی صاف ہٹ دھرمی کے باوجود امریکہ کسی طرح سے بھی کوئی ایسا اقدام کرنے کو تیار نہیں جس سے اسرائیل حقیقی دباؤ محسوس کر سکے۔ اسرائیل نے ایک وطیرہ یہ بنا رکھا ہے کہ وہ بڑے پیمانے پر فلسطینی عوام کو بلاتمیز مرد و عورت گرفتار کرتا رہتا ہے، انہیں اذیت خانوں میں رکھا جاتا ہے اور فلسطینی اتھارٹی پر ایک دباؤ کے طور پر انہیں استعمال کرتا ہے۔ گویا اس نے بے گناہ فلسطینی عوام کو اپنے مقاصد کے لیے انسانی ڈھال بنا رکھا ہے۔ ہر مذاکرات میں وہ چند سو قیدی رہا کرنے کا اعلان کرتا ہے، سڑکوں اور راستوں کی ناکہ بندی ختم کرنے کا معاہدہ کرتا ہے اور پھر سے انہی اقدامات میں مشغول ہو جاتا ہے، امریکہ ان اقدامات کو اسرائیل کی سلامتی سے وابستہ قرار دیتا ہے اور یوں دباؤ میں غیر معمولی اضافہ کر دیا جاتا ہے۔ اس مرتبہ مذاکرات میں بھی ایجنڈا یہی تجویز کیا گیا کہ ایک ہزار قیدی رہا کر دیے جائیں گے، بعض ناکہ بندیاں ختم کر دی جائیں گی اور غزہ کے محاصرے میں کمی لائی جائے گی۔

تاہم نیتن یاہو نے یہودی بستیوں کی تعمیر روکنے کے مطالبہ کو یکسر مسترد کر دیا۔ یہ کوشش بھی کی جاتی ہے کہ مذاکرات سے پہلے ایسے اقدامات کیے جائیں جن سے فلسطینی اتھارٹی کے سربراہ محمود عباس کے پاس آپشنز کم سے کم ہوتے جائیں۔ امریکہ ان اقدامات کو خاموشی سے دیکھتا ہے اور زیادہ سے زیادہ ایک بیان جاری کر دیا جاتا ہے جس میں اسرائیل سے مطالبہ کیا جاتا ہے کہ ان اقدامات سے وہ باز رہے۔ ان بیانات کی بازگشت بھی ختم نہیں ہوتی اور اقدامات مکمل ہو جاتے ہیں۔

یہ ہے وہ سلسلہ، ہتھکنڈے اور طریقے جن کی وجہ سے ایک مرتبہ پھر محمود عباس کو مجبور ہو کر اعلان کرنا پڑا کہ وہ اسرائیل سے مذاکرات نہیں کریں گے۔ ان کے لیے یہ بالکل ممکن نہیں تھا کہ فلسطینی عارضی سرحدوں پر اتفاق کر لیں اور یوں ایک نیا اور بڑا بحران اپنے لیے پیدا کر لیں۔ امریکہ کا کردار یہ ہے کہ اس کا سارا دباؤ محمود عباس پر ہے نہ کہ نیتن یاہو پر۔


source : http://alqamar.info/2010/2010/05/06/israel-a-false-state.html
  845
  0
  0
امتیاز شما به این مطلب ؟

latest article

      خلیج فارس کی عرب ریاستوں میں عید الاضحی منائی جارہی ہے
      پاکستان، ہندوستان، بنگلہ دیش اور بعض دیگر اسلامی ...
      پاکستان کی نئی حکومت: امیدیں اور مسائل
      ایرانی ڈاکٹروں نے کیا فلسطینی بیماروں کا مفت علاج+ ...
      حزب اللہ کا بے سر شہید پانچ سال بعد آغوش مادر میں+تصاویر
      امریکہ کے ساتھ مذاکرات کے لیے امام خمینی نے بھی منع کیا ...
      کابل میں عید الفطر کے موقع پر صدر اشرف غنی کا خطاب
      ایرانی ڈاکٹروں کی کراچی میں جگر کی کامیاب پیوندکاری
      شیطان بزرگ جتنا بھی سرمایہ خرچ کرے اس علاقے میں اپنے ...
      رہبر انقلاب اسلامی سے ایرانی حکام اور اسلامی ممالک کے ...

 
user comment